1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

’بہتر زندگی کے ليے جرمنی آنے والے افغانوں کو ملک بدر کيا جائے گا‘

جرمن دارالحکومت برلن ميں افغان صدر اشرف غنی کے ساتھ ملاقات کے بعد پريس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جرمن چانسلر انگيلا ميرکل نے کہا ہے کہ بہتر زندگی کی تلاش ميں جرمنی آنے والے افغانوں کو واپس بھيج ديا جائے گا۔

افغان صدر کے ساتھ ايک مشترکہ پريس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جرمن چانسلر نے کہا کہ ان کا ملک اپنی انسانی حقوق سے متعلق ذمہ دارياں نبھاتے ہوئے ايسے افغان شہريوں کو موقع دے گا، جن کی جانيں صرف اس وجہ سے خطرے ميں ہيں کہ انہوں نے افغانستان ميں جرمن يا ديگر ممالک کی افواج کے ساتھ کام کيا۔ ميرکل کے بقول بہتر معاشی حالات کے تعاقب ميں جرمنی آنے والے افغان تارکين وطن کو واپس ان کے ملک بھيج ديا جائے گا۔ جرمن چانسلر کا مزيد کہنا تھا کہ بہتر زندگی کی اميد ميں آنے والے مہاجرين کے ليے سياسی پناہ کا کوئی جواز نہيں بنتا۔

انگيلا ميرکل نے يہ باتيں برلن ميں اشرف غنی کے ساتھ ملاقات کے بعد منعقدہ ايک مشترکہ پريس کانفرنس سے خطاب ميں کہيں۔ افغان صدر کا يہ جرمنی کا دوسرا سرکاری دورہ ہے۔ غنی بنيادی طور پر يورپ کو درپيش مہاجرين کے بحران کے بارے ميں بات چيت کرنے آئے ہيں۔

چانسلر ميرکل نے پريس کانفرنس ميں مزيد کہا کہ جرمنی، افغانستان ميں ايسے محفوظ علاقوں کا قيام چاہتا ہے، جہاں وہ افراد بلا خوف و خطر رہ سکيں، جنہيں عموماً اپنی جان و مال کا خطرہ رہتا ہے۔

اس سال اب تک اکتيس ہزار افغان تارکين وطن جرمنی ميں سياسی پناہ کی درخواستيں جمع کرا چکے ہيں

اس سال اب تک اکتيس ہزار افغان تارکين وطن جرمنی ميں سياسی پناہ کی درخواستيں جمع کرا چکے ہيں

افغان صدر اشرف غنی نے برلن ميں اس پريس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افغان شہريوں کو وطن ميں رکھنے کے ليے تين چيزيں بہت ضروری ہيں، ملازمت کے مواقع، رہائش کے انتظامات اور فنی تربيت تاکہ وہ اس تربيت کی بنياد پر ملازمت کے اہل بن سکيں۔ غنی کے بقول جرمن امداد تيس ملين افغانوں کے ليے ہو گی نہ کہ صرف تيس ہزار کے ليے۔

يہ امر اہم ہے کے دنيا کے کئی ممالک سے پناہ کے ليے اس سال يورپ آنے والے مہاجرين کی تعداد نو لاکھ کے لگ بھگ ہے۔ ان ميں شامی شہريوں کے بعد افغان باشندے سب سے زيادہ تعداد ميں ہيں۔ سال رواں ميں اب تک ايک لاکھ چاليس ہزار افغان پناہ گزين يورپ پہنچ چکے ہيں۔ جرمنی کے وفاقی دفتر برائے ہجرت و مہاجرين کے مطابق اس سال اب تک اکتيس ہزار افغان تارکين وطن جرمنی ميں سياسی پناہ کی درخواستيں جمع کرا چکے ہيں۔