1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بھارت: گھریلو ملازمین قانونی تحفظ کے بغیر بدسلوکی کا شکار

بھارت میں وزارت محنت قانون سازی کی تیاری کر رہی ہے تاکہ گھریلو ملازمین کو سماجی تحفظ فراہم کیا جا سکے۔ تاہم انسانی حقوق کے گروپوں کا کہنا ہے کہ ان افراد کو بدسلوکی سے بچانے کے لیے قانونی تحفظ کی ضرورت ہے۔

بھارت سے بھیجی گئی مرلی کرشنن کی رپورٹ کے مطابق بھارت کے شہری علاقوں کے متمول خاندانوں میں گھریلو کام کرنے والی خواتین پر تشدد کے واقعات منظر عام پر آنے کی تعداد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

گزشتہ جولائی میں سامنے آنے والے ایک ہائی پروفائل کیس میں بنگلہ دیش سے تعلق رکھنے والی ایک 26 سالہ گھریلو ملازمہ نے بھارتی پولیس کے پاس رپورٹ درج کرائی کہ نئی دہلی کے متمول مضافاتی علاقے نوئیڈا کے ایک بنگلے میں اسے اس کے مالکان نے نہ صرف تشدد کا نشانہ بنایا بلکہ اسے گھر میں زبردستی بند رکھا۔ اس خاتوان کے دوستوں اور خاندان کے لوگوں کی طرف سے اس گھر کے سامنے دھرنے کے بعد اسے رہائی ملی۔

اسی طرح تین برس قبل نئی دہلی میں ایک خاتون گھریلو ملازمہ کو قتل کر دیا گیا۔ 35 سالہ خاتون کے اس قتل کے الزام میں ایک رکن اسمبلی اور اس کی بیوی کو حراست میں بھی لیا گیا۔ اطلاعات کے مطابق اس خاتون کی ہلاکت سے قبل اسے جسمانی تشدد کا نشانہ بنایا جاتا تھا جس میں گرم استری سے داغنا اور نوکدار اشیاء سے تکلیف پہنچانا بھی شامل تھا۔

صرف یہی نہیں ایسے گھریلو ملازمین کی تنخواہیں ادا نہ کرنے، انہیں مناسب خوراک یا آرام کا وقفہ نہ دینے، سونے نہ دینے یا مارنے پیٹنے جیسی شکایات بھی عام ہیں۔ گھریلو ملازمین کے حقوق کے لیے کام کرنے والی ایک غیر سرکاری تنظیم ’نِرملا نِک رَتن‘ سے وابستہ پراتچی تلوار نے ڈی ڈبلیو کو بتایا، ’’زیادہ تر لوگ گھریلو ملازمتیں اس باعث کرتے ہیں کہ انہیں زرعی شعبے یا صنعتی شعبے میں روزگار کے مواقع نہیں ملتے۔‘‘ ان کا مزید کہنا تھا کہ گھریلو ملازمین کی صورتحال اس وجہ سے بھی نازک ہے کہ انہیں یونین وغیرہ کی شکل میں کسی قسم کا باقاعدہ تحفظ حاصل نہیں ہوتا۔

گھریلو ملازمین سے بدسلوکی روکنے کے لیے بھارت کی وزارت محنت نے ایک پالیسی پیپر کی تیاری پر کام شروع کیا ہے اور اس سلسلے میں تمام اسٹیک ہولڈرز سے درخواست کی ہے کہ وہ گھریلو ملازمین کے حوالے سے ایک قومی پالیسی کی تشکیل میں اپنا حصہ ادا کریں۔ اس پالیسی کا مقصد ایسی ملازمتوں کو قانونی شکل اور ملازمین کو تحفظ اور سوشل سکیورٹی فراہم کرنا ہے۔

Indien Frau Frauen kochen Hausarbeit (Getty Images)

گھریلو ملازمین کی تنخواہیں ادا نہ کرنے، انہیں مناسب خوراک یا آرام کا وقفہ نہ دینے، سونے نہ دینے یا مارنے پیٹنے جیسی شکایات بھی عام ہیں

لیبر ویلفیئر کے ڈائریکٹر رجیت پنہانی کے بقول، ’’اس پالیسی کا مقصد ایک ایسا محکمہ جاتی طریقہ کار وضع کرنا ہے جو سوشل سکیورٹی، ملازمت کے مناسب اصول فراہم کرتا ہو اور مسائل اور جھگڑوں کے حل کا راستہ مہیا کرتا ہو۔‘‘ پنہانی کا مزید کہنا تھا، ’’یہ گھریلو ملازمین کو باقاعدہ طور پر ورکر کا درجہ فراہم کرتی ہے اور انہیں اس بات کا حق فراہم کرتی ہے کہ وہ خود کو لیبر ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ رجسٹر کرا سکیں۔‘‘