1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں سات مبینہ باغی ہلاک

بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں دہشتگردوں کے خلاف ایک بڑا آپریشن شروع کیا گیا ہے، جس کے نتیجے میں تین اضلاع پلوامہ، بارہ مولا اور کپواڑہ میں غالباً لشکرِ طیبہ کے ایک اہم کمانڈر سمیت سات مبینہ باغی مارے گئے ہیں۔

default

بھارتی فوج نے مرنے والے کمانڈر کا نام ابو حمزہ بتایا ہے اور کہا ہے کہ اُس کا تعلق پاکستان سے ہے۔ مزید بتایا گیا ہے کہ زیادہ تر مرنے والے باغیوں کا تعلق لشکرِ طیبہ سے تھا۔ بھارت اِس کالعدم تنظیم کو گذشتہ سال کے ممبئی حملوں کا اصل ذمہ دار قرار دیتا ہے۔

سب سے بڑی جھڑپ کپواڑہ کے پاس ہوئی، جہاں چار عسکریت پسند مارے گئے۔ لائن آف کنٹرول کے قریب ہونے والے ایک واقعے کی تفصیلات بتاتے ہوئے ریاستی پولیس افسر فاروق احمد نے کہا:" یہ جھڑپ اس وقت ہوئی، جب عسکریت پسند گھنے جنگل میں چھپنےکی کوشش کر رہے تھے اور ان کا سامنا پولیس اور فوج کی ایک مشترکہ سرچ ٹیم سے ہوگیا۔" فاروق احمد کا مزیدکہنا تھا:"جب تک پاکستان سےعسکریت پسندوں کی دراندازی مکمل طور پر بند نہیں ہو گی، اس قسم کی کارروائیاں جاری رہیں گی۔"

Indien Kaschmir

اس تازہ واقعے کے بعد بھارتی میڈیا اور دیگر اعلٰی حکام نے ایک بار پھر پاکستان پر دہشتگردوں کی سر پرستی کا الزام لگایا ہے۔ اسی حوالے سے ایک بیان دیتےہوئے بھارتی وزیر دفاع اے کے اینتھونی نےکہا ہے کہ "پاکستان دہشتگردوں کی کشمیر میں دراندازی کے حوالے سے تسلی بخش اقدامات نہیں کر رہا"۔

بھارتی ٹی وی چینلز کی مختلف رپورٹوں میں بھی ملا جلا ردَعمل سامنے آ رہا ہے۔ یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ پاکستان نے اُن طالبان کو بھی بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں داخل کرنے کی کوشش کی، جنہوں نے سوات میں پاکستانی آرمی کے سامنے ہتھیارڈال دئے تھے۔

بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں جاری اس قسم کی کارروائیوں میں اَسی کے عشرے کے اواخر سے اب تک پینتالیس ہزار سے زائد افراد مارے جا چکےہیں۔

رپورٹ: عبدالرؤف انجم

ادارت: امجد علی