1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت کی نظریں افریقہ پر، مودی کے دورے کا اختتام، DW تبصرہ

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا دورہٴ افریقہ اختتام کو پہنچ چکا ہے۔ ڈی ڈبلیو کے تبصرہ نگار لُڈگر شاڈومسکی کے مطابق جرمنی محض افریقہ میں موجود مواقع کی باتیں ہی کر رہا ہے جبکہ بھارت ان مواقع سے فائدہ بھی اٹھا رہا ہے۔

Tansania Besuch Narendra Modi Trommel

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی (بائیں) تنزانیہ کے دورے کے دوران ملکی صدر جان پومبے ماگوفولی (دائیں) کے ہمراہ

ڈی ڈبلیو کے تبصرہ نگار لُڈگر شاڈومسکی کے مطابق جغرافیائی سیاست اس قدر بھی خوبصورت ہو سکتی ہے، جتنی کہ افریقی دورے پر گئے ہوئے بھارتی وفد کے اس خیر سگالی پیغام میں نظر آتی ہے: ’’بھارت اور افریقہ کے درمیان تعلقات کسی دریا کے کناروں کی طرح ہیں، جو آپس میں ملتے نہیں لیکن پھر بھی ایک دوسرے سے جُڑے ہوتے ہیں۔‘‘

وہ مزید لکھتے ہیں: ’’بڑے پیمانے پر منعقدہ بھارت افریقہ سمٹ کے محض چھ مہینے بعد ہی بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے افریقہ کا کئی روزہ دورہ کیا ہے، جو پیر کو اپنے اختتام کو پہنچا ہے۔ مودی نے بھارتی خارجہ سیاست کو نیا رُخ دینے کا جو اعلان کیا تھا، یہ دورہ اُس کے پُر زور اظہار کے لیے تھا۔

وہ اس دورے کے دوران یونہی مشرقی اور جنوبی افریقی ملکوں میں نہیں گئے، وہاں ہندوستانی نژاد باشندوں کی ایک بڑی تعداد آباد ہے، ایک ملین سے زیادہ تو صرف جنوبی افریقہ میں ہیں۔ جنوبی افریقہ کے شہر جوہانسبرگ میں مودی کے ایک اجتماع میں ہزاروں ہندوستانی نژاد شہری شریک ہوئے۔

اس دورے میں اولین اہمیت تجارت اور سرمایہ کاری کو حاصل رہی۔ افریقہ کے معدنی گیس اور تیل کے ذخائر میں دلچسپی رکھنے والے مودی سرمایہ کاری کے لیے اپنے ہمراہ نصف ارب یورو کی پیشکشیں لے کر گئے تھے۔ سوڈان کے ساتھ بھارت کے خصوصی تعلقات ہیں اور یہی وجہ ہے کہ بھارت میں افریقہ سمٹ کے دوران بین الاقوامی فوجداری عدالت کو مطلوب صدر بشیر کی خصوصی آؤ بھگت کی گئی تھی۔

افریقہ کے خام مادوں کے لیے چین کے ساتھ مقابلہ بازی کے ساتھ ساتھ بھارت عالمی سلامتی کونسل میں اصلاحات کے معاملے میں بھی افریقہ کی تائید و حمایت کا خواہاں ہے کیونکہ کئی افریقی ممالک بھی سلامتی کونسل کے موجودہ ڈھانچے کو ازکار رفتہ خیال کرتے ہیں۔ فرانس، برطانیہ، چین، روس اور امریکا کی طرح بھارت بھی اس کونسل کا مستقل رکن بننا چاہتا ہے اور اُس کی ان کوششوں کو جنوبی افریقہ کی بھی تائید حاصل ہے کیونکہ اس افریقی ملک نے بھی بار بار اس معاملے پر آواز بلند کی ہے۔

Mosambik besuch Modi bei Nyusi

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی (بائیں) موزمبیق کے دورے کے موقع پر وہاں کے صدر فلیپے نیوسی (دائیں) کے ہمراہ

افریقہ میں بھارت اور چین کی بھرپور تجارتی اور اقتصادی سرگرمیوں میں جرمنی کے لیے بھی ایک سبق ہے۔ ایک عرصے تک جرمن سیاستدان بھی موقع بہ موقع براعظم افریقہ میں موجود سنہری امکانات کی بات کرتے رہے ہیں۔ اب دو سال بعد داخلہ اور ترقیاتی امور کے جرمن وزیر سرمایہ کاری والے افریقی ممالک کی بجائے اُن ملکوں میں جاتے نظر آتے ہیں، جنہیں وہ لاکھوں پناہ گزینوں کی وجہ سے ’محفوظ تیسرے ملک‘ قرار دلوانا چاہتے ہیں۔‘‘