1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت پاک وزرائے خارجہ کی ملاقات، تعلقات میں نئی جہت کا عزم

جنوبی ایشیا کے دو دیرینہ حریف بھارت اور پاکستان نے آج باہمی تعلقات کو نئی جہت دینے اور امن مساعی کو دوبارہ بحال کرنے کا اعلان کیا ہے۔

default

پاکستانی وزیر خارجہ حِنا ربانی کھر کے ساتھ ملاقات کے بعد بھارتی وزیرخارجہ ایس ایم کرشنا نے کہا کہ تعلقات درست سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں۔ دوسری طرف پاکستانی وزیر خارجہ نے کہا کہ تعاون کے ایک نئے دور کا آغاز ہوا ہے۔ خیال رہے کہ2008 میں ممبئی میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کے بعد بھارت نے پاکستان کے ساتھ روابط معطل کر دیے تھے۔کرشنا نے کہا کہ ابھی کچھ دوریاں ہیں جنہیں طے کرنا ہے، تاہم ہم جموں و کشمیر سمیت دیگر امور پر بات چیت جاری رکھیں گے، تاکہ اختلافات کو دور کرکے مسائل کا پرامن حل تلاش کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ وہ حناربانی کھر کے ساتھ بات چیت کے نتائج سے مطمئن ہیں۔

دوسری طرف پاکستانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ان کی خواہش ہے کہ بات چیت کا سلسلہ کسی رکاوٹ کے بغیر جاری رہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان، بھارت کے ساتھ تعلقات اور مفاہمت کا نیا باب شروع کرنا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ملکوں کا ماننا ہے کہ بات چیت کا عمل جاری رہنا چاہیے کیوں کہ اس کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ خطے میں امن قائم رکھنے کے لیے پاکستان اور بھارت پرخصوصی ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔

Pakistatnische Außenministerin Hina Rabbani Khar

34 سالہ حنا ربانی کھر کا وزارت خارجہ کا منصب سنبھالنے کے بعد یہ پہلا بین الاقوامی دورہ ہے۔

میٹنگ میں بھارت نے کہا کہ دونوں ملکوں کا ماننا ہے کہ دہشت گردی مسلسل خطرہ بنی ہوئی ہے اور اسے ختم کرنے کی کوششیں ہونی چاہییں اور جو لوگ دہشت گردی کے لئے ذمہ دار ہیں ان کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے۔ جموں و کشمیر کے معاملے پر ایس ایم کرشنا نے کہا کہ دونوں ملک اس سلسلے میں بات چیت جاری رکھیں گے، تاکہ دوریاں کم ہوں اور نزدیکیاں بڑھیں۔ انہوں نے دونوں ملکوں کے درمیان کنٹرول لائن کے اطراف رہنے والے لوگوں کے درمیان تجارت بڑھانے کے لیے کئی اقدامات کی بات بھی کی۔ مسٹر کرشنا نے بتایا کہ دونوں ملکوں کے وزرائے خارجہ کی اگلے سال کی پہلی ششماہی میں اسلام آباد میں ملاقات ہوگی جس میں اعتماد سازی کے اقدامات کا جائزہ لیا جائے گا۔

Indien Politik Krishna

بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا نے مذاکرات کے دوران دیگر معاملات کے علاوہ دہشت گردی کے خاتمے پر بھی زور دیا۔

قبل ازیں پاکستانی وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے خود سے 45 سال سینئر بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا کے ساتھ وفد کی سطح پر تفصیلی بات چیت کی۔ بات چیت کے بعد جاری کیے جانے والے مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ بھارت اور پاکستان جوہری اور روایتی اعتماد سازی کے حوالے سے ستمبر میں اسلام آباد میں ماہرین کے گروپوں کے اجلاس منعقد کریں گے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ بھارت اور پاکستان کنٹرول لائن سے سرحد پار تجارت اور جموں و کشمیر کے لیے متعدد سفری سہولیات دینے پر بھی رضامند ہوگئے ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ کنڑول لائن کے دونوں اطراف آمدورفت کا سلسلہ بڑھایا جائے گا، جس میں سیاحت اور مقدس مقامات کی زیارت کو بھی شامل کیا جائے گا۔ دونوں ملکوں نے سر ی نگر تا مظفر آباد اور پونچھ تا راولا کوٹ بس سروس کی تعداد بڑھانے اور سفری دستاویزات کے طریقہ کار کو سہل بنانے پر بھی اتفاق کیا۔

حناربانی کھر نے وزیر اعظم ڈاکٹر من موہن سنگھ، اپوزیشن بھارتیہ جنتا پارٹی کے سینئر رہنما اور سابق نائب وزیر اعظم لال کرشن ایڈوانی سے بھی ملاقات کی۔

رپورٹ: افتخار گیلانی، نئی دہلی

ادارت: افسر اعوان

DW.COM