1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت نے پاکستانی بچوں کا وفد واپس بھیج دیا، پاکستانی سفیر کی طلبی

دو فوجیوں کی ہلاکت اور ان کی لاشوں کی بے حرمتی کے تنازعے کے بعد بھارت نے پاکستانی طالب علموں کے ایک سینتالیس رکنی وفد کو واپس لاہور بھیج دیا ہے جبکہ احتجاج کے لیے نئی دہلی میں تعینات پاکستانی سفیر کو بھی طلب کیا گیا۔

بھارت کے دورے پر گئے ہوئے تقریباً پچاس طالب علموں کے وفد کو واپس پاکستان بھیج دیا گیا ہے۔ بھارت کی وزارت برائے خارجہ امور کے ایک ترجمان گوپال باگلے کا مقامی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستانی اسکول طلبہ پر مشتمل ایک سینتالیس رکنی وفد کو ایک غیر سرکاری تنظیم کی طرف سے مدعو کیا گیا تھا اور ان بچوں کے اساتذہ بھی ان کے ہمراہ تھے۔

بتایا گیا ہے کہ ان بچوں کو اسٹوڈنٹ ایکسچینج پروگرام کے تحت بھارت مدعو کیا گیا تھا۔ بچوں کا یہ وفد یکم مئی کو یعنی اُسی روز بھارت پہنچا تھا، جب بھارتی حکومت نے یہ الزام عائد کیا تھا کہ پاکستانی سکیورٹی فورسز نے اُن کے دو فوجیوں کو ہلاک کرتے ہوئے ان کی لاشیں مسخ کر دی ہیں۔ دوسری جانب پاکستان نے ان تمام بھارتی الزامات کی تردید کرتے ہوئے نئی دہلی حکومت سے کہا ہے کہ وہ اس حوالے سے کوئی ثبوت فراہم کرے۔

پاکستانی طالب علموں نے ایک دن آگرا میں گزارنا تھا، بھارتی اسٹوڈنٹس سے ملنا تھا اور ان کے پروگرام میں پاکستانی سفارت خانے میں جانا بھی شامل تھا۔ ان پاکستانی بچوں کو روٹس ٹو روٹس نامی تنظیم کی طرف سے مدعو کیا گیا تھا۔

پاکستانی سفیر کی طلبی

دوسری جانب بھارتی وزارت خارجہ نے نئی دہلی میں تعینات پاکستانی سفیر کو طلب کر کے مطالبہ کیا ہے کہ اسلام آباد حکومت اُن فوجیوں اور افسران کے خلاف کارروائی کرے، جو دو بھارتی فوجیوں کی ہلاکت اور ان کی لاشیں مسخ کرنے کے واقعے میں ملوث ہیں۔

بھارتی فوج کی طرف سے کہا گیا ہے کہ متنازعہ علاقے کشمیر میں لائن آف کنٹرول پر دو بھارتی فوجیوں کی ہلاکت کا یہ واقعہ پیر کے روز پیش آیا۔ بھارت کا الزام ہے کہ پاکستانی فوجیوں نے کرشنا گھاٹی سیکٹر میں بھارتی چوکیوں پر شیلنگ کی اور گشت کرنے والے ایک فوجی قافلے پر حملہ کر کے دو فوجیوں کو نہ صرف ہلاک کیا بلکہ ان کی لاشیں بھی مسخ کر دیں۔

اگرچہ پاکستان ان خبروں کی صدافت سے انکار کر چکا ہے تاہم اس خبر کے بعد بھارت بھر میں شدید غم و غصے کا اظہار کیا جا رہا ہے۔