بھارت میں گلوبل انٹرپرینیورشپ اجلاس شروع | حالات حاضرہ | DW | 28.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت میں گلوبل انٹرپرینیورشپ اجلاس شروع

جنوبی بھارت کے شہر حیدر آباد میں آٹھویں گلوبل انٹرپرینیورشپ سمٹ شروع ہوگئی ہے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی بیٹی یوانکا ٹرمپ اور وزیر اعظم نریندر مود ی نے اس کا افتتاح کیا۔

کانفرنس کا آغاز رقص و موسیقی کے رنگا رنگ پروگرام کے ساتھ ہوا۔ یہ پہلا موقع ہے کہ یہ تین روزہ سربراہی کانفرنس کسی اسلامی ملک یا امریکا کے باہر اور جنوبی ایشیا میں منعقد ہو رہی ہے۔ اس میں دنیا بھر کے 159ملکوں کے تقریباً پندرہ سو انٹرپرینیور اور سرمایہ کار شرکت کررہے ہیں، جن میں اکثریت خواتین کی ہے۔ سعودی عرب، افغانستان اور اسرائیل سمیت دس ملکوں کے وفود صرف خواتین پر مشتمل ہیں۔
ایوانکا نے اپنی افتتاحی تقریر میں کہا، ’’جب خواتین کو بااختیار بنایا جائے گا تب ہی ہمارے خاندانوں، ہماری معیشت اور ہمارے سماج اپنے تمام مواقع اور وسائل سے پوری طرح استفادہ کرسکیں گے۔‘‘ ان کا کہنا تھا کہ وہ ایک ساتھ اتنی بڑی تعداد میں خواتین انٹرپرینیورز کو پہلی مرتبہ دیکھ رہی ہیں اور یہ ان کے لیے فخر کی بات ہے۔

ایوانکا ٹرمپ کی آمد پر بھارتی حیدرآباد سے فقیروں کا صفایا

وزیر اعظم مودی نے اپنی تقریر میں بھارتی اساطیر کے حوالے سے کہا کہ ان کے ملک میں عورت کو شکتی یعنی طاقت کا روپ سمجھا جاتا ہے اور ان کا یقین ہے کہ خواتین کو بااختیار بنانا ترقی کے لیے انتہائی اہم ہے۔ انہوں نے بھارت میں اتنی اہم کانفرنس کے انعقاد پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس سے اہم سرمایہ کاروں، انٹرپرینیورز ، دانشوروں  اور دیگر فریقین کو گلوبل انٹرپرینیورشپ کو آگے لے جانے میں مدد ملے گی۔
کانفرنس کے لیے ’موتیوں کے شہر‘ حیدرآباد کو دلہن کی طرح سجایا گیا ہے۔ شہر کی تمام اہم شاہراہوں پر ایوانکا کے بڑے بڑے اشتہارات لگائے گئے ہیں۔ صفائی کا خصوصی انتظام کیا گیا ہے اور شہر بھر سے بھکاریوں کو پکڑ کر حکومتی کیمپوں میں پہنچا دیا گیا ہے۔ سیکورٹی کے زبردست انتظامات کرتے ہوئے دس ہزار سکیورٹی اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

جی ٹوئنٹی ممالک کی بااثر ترین خواتین کا اجلاس
تین دن تک چلنے والی اس کانفرنس میں’خواتین پہلے، سب کے لیے خوشحالی‘ کے موضوع پر منعقد اس کانفرنس میں خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے ساز گار ماحول تیار کرنے پر زور دیا جائے گا۔ ہیلتھ کیئر، لائف سائنس، ڈیجیٹل معیشت، مالیاتی تکنیک، توانائی، انفراسٹرکچر اور میڈیا و تفریح کے موضوعات پر خصوصی توجہ مرکوز کی جائے گی۔کانفرنس میں متعدد اہم عالمی شخصیات اور بھارت کی اہم کاروباری شخصیات کے علاوہ بالی وڈ کے کئی اداکار اور اسپورٹس سے وابستہ خواتین بھی اظہار خیال کریں گی۔ ان میں نئی مس ورلڈ مانوشی چھلر، سونم کپور اور ثانیہ مرزا بھی شامل ہیں۔
ایوانکا کل بدھ کو فنی تعلیم وتربیت اور سرپرستی کے ذریعے خواتین افرادی قوت کو بااختیار بنانے کے موضوع پر اپنے خیالات کا اظہار کریں گی۔ قبل ازیں حیدرآباد پہنچنے پر ایوانکا نے اپنے ٹوئیٹر پیغام میں شاندار استقبال پر شکریہ ادا کیا اور کہا کہ وہ حیدرآباد میں اس سمٹ کے لئے کافی پرجوش ہیں۔ ایوانکا نے وزیرخارجہ سشما سوراج سے بھی ملاقات کی۔
خیال رہے کہ امریکا کے سابق صدر براک اوباما نے 2010 میں واشنگٹن میں پہلی مرتبہ اس سمٹ کا اہتمام کیا تھا۔ یہ سمٹ ترکی، متحدہ عرب امارات،ملائشیا، مراکش اور کینیا میں بھی منعقد ہو چکی ہے۔ اس کا مقصد زندگی کے مختلف شعبوں میں نئے افکار کو اجاگرکرنا ہے۔ اس سمٹ کا ایک اور مقصد مختلف ممالک اور امریکا کے درمیان صنعتی، اختراعی وتجارتی تعلقات کو فروغ دینا بھی ہے۔ کانفرنس کے افتتا ح سے قبل بھارت میں سب سے بڑے سرکاری پالیسی ساز ادارے نیتی آیوگ کے سی ای او امیتابھ کانت نے کہا کہ گلوبل انٹرپرینیویر سمٹ کا مقصد خواتین کو بااختیاربنانا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ خواتین سرمایہ کاروں کو بھی اس کانفرنس سے فائدہ ہوگا۔

DW.COM