1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بھارت میں عیسائیوں اور گرجا گھروں پر حملے کیوں؟

گُزشتہ اگست سے بھارت کی کم از کم تین ریاستوں میں ہندو شدت پسند جماعتوں کی طرف سے عیسائیوں اور ان کی عبادت گاہوں پر ہونے والے حملوں کا ایک نیا سلسلہ شروع ہوگیا ہے جو بظاہر تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے۔

default

اُڑیسہ کے ضلع پھول بنی میں واقع اس گرجا گھر کو بھی ہندو شدت پسندوں نے نذر آتش کردیا تھا

بھارت کی مشرقی ریاست اُڑیسہ میں دس برس قبل آسٹریلوی راہب گریہم سٹینز اور ان کے دو بچوں کو زندہ جلادینے کے واقعے کے نتیجے میں مشرقی بھارتی ریاست بین الاقوامی مرکز نگاہ بنی تھی۔ اور اب رواں برس اگست میں عیسائیوں، ان کے گھروں اور ان کی عبادت گاہوں پر حملوں کا نیا سلسلہ شروع ہوگیا جس نے آہستہ آہستہ ریاست کرناٹک، مدھیہ پردیش اور کیریلا کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

اُڑیسہ کے ضلع کاندھامل میں ایک کیتھولک نن کی مبینہ اجتماعی آبرو ریزی کا واقعہ ہو یا پھر اُڑیسہ سمیت دیگر بھارتی ریاستوں میں کئی عیسائیوں کی ہلاکت اور ان کی عباد ت گاہوں پر حملوں کے واقعات ہوں، بھارت کے سنجیدہ حلقوں میں اقلیتوں کے حقوق کے تعلق سے زبردست تشویش ہے اور اس موضوع پر سنجیدہ بحث چھڑ چکی ہے۔

Gewalt gegen Christen in Orissa Indien

عیسائی متاثرین اور سماجی کارکن نئی دہلی میں احتجاجی مُظاہرہ کرتے ہوے

بھارت کی تین ریاستوں میں عیسائیوں پر حملوں کے تازہ واقعات کے نتیجے میں اب تک تیس سے زائد افراد ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ ہزاروں کی تعداد میں لوگ سرکاری خیموں یا جنگلات میں پناہ لینے پر مجبور ہیں۔

ویشو ہندو پریشد، بجرنگ دل، راشٹریہ سویم سیوک سنگھ سمیت دیگر شدت پسند ہندو جماعتوں کا الزام ہے کہ عیسائی مبلغیبن یا مشنریز روپے اور دیگر مراعات کا لالچ دے کر ہندوٴوں کو زبردستی اپنا مذہب تبدیل کرنے کی ترغیب دے رہے ہیں، جس کی ہندوستان میں ہرگز اجازت نہیں دی جاسکتی ہے۔ تاہم بھارت میں بسنے والے عیسائی اس الزام کو یکسر مسترد کرتے چلے آرہے ہیں۔ عیسائیوں کا موقف ہے کہ بھارت کا آئین ہر عقیدے کے پیرکاروں کو اپنے مذہب کی ترویج کا حق دیتا ہے اور وہ پرامن طریقے سے، بغیر کسی لالچ اور مراعات کے سہارے، اپنے مذہب کی تبلیغ کرتے ہیں۔

عیسائیوں کا کہنا ہے کہ ''آدی واسی‘‘ کہلائے جانے والے پسماندہ طبقات سے تعلق رکھنے والے ہندو صدیوں سے مصائب اور مشکلات کا شکار ہیں اور وہ اپنی مرضی سے عیسائیت قبول کررہے ہیں۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی میں مقیم حقوق انسانی کے سرگرم کارکن گوتم نو لاکھا عیسائیوں پر حملوں کے بظاہر نہ تھمنے والے سلسلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہیں۔ ڈوئچے ویلے کے ساتھ خصوصی انٹرویو میں یں گوتم نولاکھا نے بتایا کہ ایسا معلوم ہورہا ہے جیسے انتظامیہ نہ صرف عیسائیوں پر ہورہے حملوں کو روکنے میں ناکام دکھائی دے رہی ہے بلکہ شاید صورتحال کو جوں کا توں رکھنا چاہتی ہے۔

Gewalt gegen Christen in Orissa Indien

ایک ہندو شدت پسند گرجا گھر کے اوپر ہندو مذہب کا پرچم لہراتے ہوئے

ابھی حال ہی میں اُڑیسہ کے تقریباً ایک سو عیسائی متاثرین پر مبنی ایک وفد نے بھارتی دارلحکومت نئی دہلی پہنچ کر وہاں اقوام متحدہ کے دفتر پر دستک دی۔

بھارتی وزیر اعظم من موہن سنگھ نے عیسائیوں پر ہونے والے حملوں کو ''قومی شرمندگی‘‘ سے تعبیر کیا تھا جبکہ اُڑیسہ کی حکومت نے حالات معمول پر لانے کی کئی مرتبہ یقین دہانی کروائی۔ تاہم وفاقی حکومت کے سخت بیانات اور یقین دہانیوں کے باوجود زمینی حقائق میں کوئی خاص تبدیلی یا بدلاٴو نظر نہیں آرہا۔

عیسائیوں کے مذہبی رہنما پوپ بینیڈکٹ شانزدہم اور رومن کیتھولک چرچ نے بھارت میں عیسائیوں پر ہونے والے حملوں کی شدید الفاظ میں مزمت کی ہے۔

Audios and videos on the topic