1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت میں سیلاب،15 لاکھ افراد بےگھر

ریاست کرناٹک اور آندھرا پردیش میں گزشتہ تین روز سے جاری طوفانی بارش اور سیلاب کے نتیجے میں 230کم از کم افراد ہلاک جبکہ پندرہ لاکھ سے زائد بے گھر ہو گئے ہیں ۔

default

ہلاک ہونے والوں میں سے ایک سو ستر افراد کا تعلق ریاست کرناٹک ، سینتیس آندھرا پردیش اور چھبیس افراد کا تعلق ریاست مہاراشٹر سے ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ سیلاب کی وجہ سے وسیع علاقے پانی میں ڈوبے ہوئے ہیں جبکہ امدادی کاروائیوں میں فوج اور فضائیہ کے علاوہ مقامی لوگوں اور غوطہ خوروں کی مدد لی جا رہی ہے ۔ سیلاب کی وجہ سے ریل کی پٹریوں اور سٹرکوں کے علاوہ مواصلات کا نظام بھی درہم برہم ہو کر رہ گیا ہے۔ چیف منسٹر یدی یورپا نے کہا ہے کہ بارش کی وجہ سے زیادہ تر فصلیں بھی تباہ ہوگئی ہیں۔

Indien Monsoon Überschwemmung

کرناٹک میں 10 لاکھ سے زائد افراد بے گھر ہوئے ہیں، جن میں سے ساڑھے تین لاکھ افراد کو محفوظ مقامات اور امدادی کیمپوں میں منتقل کر دیا گیا ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ گھروں کی چھتوں اور سیلاب میں پھنسے ہوئے لوگوں کو بھی تیزی کے ساتھ محفوظ مقامات پر منتقل کیا جا رہا ہے ۔ ضلع کرنول اور محبوب نگرمیں سیلاب کے پانی میں محصور افراد گزشتہ 3 دن سے غذا اور پانی سے محروم ہیں ۔ ضلعی حکام کا کہنا ہے کہ کرنول اور اس کے اطراف کے علاقوں سے لگ بھگ ایک لاکھ افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کیا جا چکا ہے۔ کمشنر ڈیزاسٹر مینجمنٹ دینش کمار نے کہا ہے کہ ضلع کرنول میں 15 افراد ہلاک ہوئےہیں، جبکہ غیرسرکاری ذرائع نے یہ تعداد 50 بتائی ہے۔ سری سیلم ڈیم میں پانی کی سطح مکمل گنجاش 885 فٹ سے 10 فٹ زیادہ ہے۔ اسی دوران کانگرس پارٹی کی سربراہ سونیا گاندھی اور ہوم منسٹر پی چدم برم نے متاثرہ علاقوں کا فضائی دورہ کیا۔

ماہرینِ موسمیات کہتے ہیں کہ دونوں ریاستوں میں بارشوں کا حالیہ سلسلہ خلیجِ بنگال میں ہوا کے کم دباؤ کی وجہ سے شروع ہوا ہے، جو مزید چوبیس گھنٹے تک جاری رہ سکتا ہے۔

رپورٹ: امتیاز احمد

ادارت: کشور مصطفٰی