1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت میں جرمن خاتون سیاح کا ریپ، ملزمان مفرور

جنوبی بھارتی ریاست تامل ناڈو میں ایک جرمن خاتون سیاح کو دو نامعلوم افراد نے ریپ کر دیا۔ پولیس کے مطابق اس جرم کا ارتکاب اتوار دو اپریل کو کیا گیا۔ اس یورپی خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی کرنے والے ملزمان تاحال مفرور ہیں۔

Indien Touristinnen in New Delhi (uni)

بھارت جانے والی بہت سی مغربی خاتون سیاحوں کو ان کی حکومتوں کی طرف سے وہاں ممکنہ جنسی جرائم کے خلاف خبردار کیا جاتا ہے

نئی دہلی سے پیر تین اپریل کو ملنے والی نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق اس جرم کا نشانہ بننے والی جرمن خاتون سیاح کی عمر 38 برس ہے اور اسے تامل ناڈو کے ریاستی دارالحکومت چنئی سے تقریباﹰ 50 کلومیٹر کے فاصلے پر مہابلی پورم کے علاقے میں ایک سیاحتی تعطیلاتی مقام پر دو نامعلوم افراد نے ریپ کیا۔

مقامی پولیس کے انسپکٹر مگھیتا نے ڈی پی اے کو بتایا، ’’یہ جرمن ٹورسٹ مہابلی پورم میں صبح سیر کے لیے ایک ساحلی علاقے کی طرف گئی تھی، جہاں وہ سمندر کے قریب ایک جگہ دھوپ میں بیٹھی تھی کہ دو افراد نے اس پر حملہ کر دیا۔‘‘

نئی دہلی میں ہر چار گھنٹے میں ایک ریپ

چودہ سالہ لڑکی کا ریپ، بھارتی رکن پارلیمان گرفتار

نئی دہلی: امریکی خاتون کا گینگ ریپ، چار مشتبہ افراد گرفتار

اس پولیس اہلکار نے ٹیلی فون پر ڈی پی اے کو بتایا، ’’یہ دونوں نامعلوم ملزمان اس یورپی سیاح کو کھینچ کر قریبی جھاڑیوں میں لے گئے، جہاں انہوں نے اسے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا۔‘‘ انسپکٹر مگھیتا نے مزید بتایا کہ اس خاتون کا بعد ازاں طبی معائنہ بھی کیا گیا، جس کے نتیجے میں یہ تصدیق ہو گئی کہ اس کا ریپ کیا گیا تھا اور اس دوران اس نے اپنے دفاع کی بھی پوری کوشش کی تھی۔

بتایا گیا ہے کہ پولیس دونوں ملزمان کی تلاش جاری رکھے ہوئے ہے تاہم آخری خبریں آنے تک ان کا کوئی اتہ پتہ نہیں تھا۔ پولیس کا اندازہ ہے کہ ملزمان کا تعلق ممکنہ طور پر مہابلی پورم کے علاقے میں ساحل کے قریب سیاحوں کے لیے قائم رہائش گاہوں کے ملازمین یا مقامی ماہی گیروں کی آبادی سے ہو سکتا ہے۔ نئی دہلی میں جرمن سفارت خانے کو اس جرمن خاتون شہری کے ساتھ کی جانے والی جنسی زیادتی سے آگاہ کر دیا گیا ہے۔

ڈی پی اے نے مزید لکھا ہے کہ بھارت میں مقامی خواتین اور غیر ملکی خواتین سیاحوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات گزشتہ کچھ عرصے میں اور بھی زیادہ ہو چکے ہیں۔ ابھی قریب دو ہفتے قبل ہی مارچ کے مہینے کے وسط میں بھارتی ریاست گوا کے ایک ساحلی تعطیلاتی مقام پر بھی آئرلینڈ سے تعلق رکھنے والی ایک خاتون سیاح کو جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کر دیا گیا تھا۔

نئی دہلی میں امریکی خاتون سیاح کا مبینہ گینگ ریپ

گزشتہ برس نئی دہلی میں یومیہ چھ خواتین ریپ کا شکار ہوئیں

بھارت میں گینگ ریپ کا ایک بڑا اور انتہائی افسوسناک واقعہ 2012ء میں اس وقت بھی پیش آیا تھا،جب ایک چلتی بس میں نئی دہلی میں ایک مقامی طالبہ کو کئی افراد نے اجتماعی جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد بس سے نیچے پھنیک دیا تھا، بعد ازاں یہ بھارتی طالبہ انتقال کر گئی تھی۔

اس واقعے پر پورے بھارت میں زبردست احتجاجی مظاہرے کیے گئے تھے اور حکومت نے جنسی جرائم سے متعلق قوانین بھی مزید سخت بنا دیے تھے۔ تاہم ایسے جرائم کی روک تھام کے لیے سرگرم کارکنوں کے مطابق دنیا میں آبادی کے لحاظ سے اس دوسرے سب سے بڑے ملک میں جنسی جرائم، خاص کر خواتین کے ریپ کے واقعات میں کوئی نمایاں کمی نہیں آئی اور وہاں ابھی تک ہر روز بہت سی عورتوں اور لڑکیوں سے جنسی زیادتیوں کے کئی واقعات رونما ہوتے ہیں۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات