1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

بھارت میں اپنے ساتھ جینا بہت مشکل ہے، ارُون دَتی رائے

بھارت کی مشہور ادیبہ ارون دَتی رائے اپنی بے باک تبصروں، حساس ناولوں اور ناقدانہ مضامین کی وجہ سے بین الاقوامی شہرت رکھتی ہیں۔ وہ ایک ادیبہ ہونے کے ساتھ ساتھ حکومتی پالیسیوں کی کڑی ناقد اور سرگرم ماحول دوست بھی ہیں۔

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی کے قدیمی حصے کی بھول بھلیوں جیسی گلیوں میں واقع ایک ریسٹورانٹ میں بیٹھی ہوئی ممتاز ناول نگار اور مضمون نویس ارُون دَتی رائے نے کہا کہ اگر وہ بھارت میں رہتے ہوئے، موجودہ حالات پر اپنی رائے نہیں دیتی ہیں تو پھر اُن کے لیے جینا بہت ہی مشکل ہو سکتا ہے۔

بھارت خود کو اپنی ہی نوآبادی بناتا جا رہا ہے، ارون دتی رائے

ارون دتی رائے پر شر انگیز بیان بازی کا الزام

’اب اسلام محبت اور امن کا مذہب کیسے کہلا سکتا ہے‘ رشدی

مودی کی خاموشی، عیارانہ تشدد کی ذمہ دار ہے: سلمان رشدی

اس تناظر میں خاتون ادیبہ نے مزید کہا کہ بھارت سمیت دنیا بھر میں ایک ایسا مالی و اقتصادی نظام ترتیب دیا جا چکا ہے اور اس نظام کے تحت انسانوں کو ایک دوسرے سے دور کرنے کا سلسلہ شروع ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ لکھتی اس لیے ہیں تا کہ وہ بتا سکیں کہ اس مالی نظام نے کمزور معاشرتی نظام کے حامل ملک بھارت کے اندر کس طرح سے ٹوٹ پھوٹ کا عمل شروع کر رکھا ہے۔

Buchcover: The Ministry of Utmost Happiness von Arundhati Roy (Hamish Hamilton)

ارُون دَتی رائے گا بیس برسوں کے بعد ارُون دَتی رائے کا دوسرا ناول شائع ہوا ہے۔

اپنے فکشن لکھنے کے حوالے سے وہ کہتی ہیں کہ کئی مرتبہ انہوں نے اپنے ساتھ عہد کیا کہ وہ اب نہیں لکھیں گی لیکن ایسی معاشرتی و معاشی ناہمواریاں دکھائی دیتی ہیں کہ وہ لکھے بغیر نہیں رہ سکتی۔ انہوں نے ناول نگاری کو سہولت سے کام کرنے کا عمل قرار دیا جبکہ اُن کے لیے کسی مضمون کو لکھنا مسلسل بے آرامی و بے سکونی کا نام ہے۔

ارُون دَتی رائے ٹیلی وژن کے پروگراموں کے لیے اسکرپٹ لکھنے کے ساتھ ممبئی کی فلم انڈسٹری سے وابستہ بھی رہی ہیں۔ اُن کو بین الاقوامی شناخت اُس وقت حاصل ہوئی جب اُن کا پہلا  ناول ’دی گاڈ آف اسمال تھنگز‘ شائع ہوا۔ یہ ناول سن  1997 میں شائع ہوا تھا۔ اس کی ساٹھ لاکھ سے زائد کاپیاں فروخت ہو چکی ہیں۔ اس ناول کا ترجمہ کئی زبانوں میں بھی ہو چکا ہے۔

بیس برسوں کے بعد ارُون دَتی رائے کا دوسرا ناول شائع ہوا ہے۔ اس ناول کا نام ’ دی منسٹری آف اَٹموسٹ ہیپی نَس‘ ہے۔ اُن کے نئے ناول کا انتساب ایسے لوگوں کے نام ہے جو بغیر ڈھارس اور دلاسے کے زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں۔ بین الاقوامی ادبی حلقے ارُون دَتی رائے کو جنوبی ایشیا سے تعلق رکھنے والے بڑے ناول نگاروں سلمان رشدی اور وکرم سیٹھ کے ہم پلا قرار دیتے ہیں۔۔

وہ کیرالا سے تعلق رکھتی ہیں۔ اُن کے والد شامی نژاد مسیحی اور والدہ بنگالی ہندو ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 02:47

بین الاقوامی اردو کانفرنس اختتام پذیر

DW.COM

Audios and videos on the topic