1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت، مون سون بارشوں کے نتیجے میں ستائیس افراد ہلاک

بھارت کی ریاست آسام میں حالیہ مون سون کی بارشوں اور سیلاب کی تباہ کاریوں کے نتیجے میں گزشتہ چار دنوں میں ستائیس افراد ہلاک اور تقریبا آٹھ لاکھ افراد نقل مکانی کرنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

بھارتی ریاست آسام کے قدرتی آفات کے ادارے کے ایک سرکاری اہلکار بنجیت کلیتا کا کہنا ہے کہ تقریبا پچاس ہزار افراد حکومت کی طرف سے مہیا کردہ ایک سو اسی ریلیف کیمپوں میں پناہ لیے ہوئے ہیں جبکہ باقی اپنے رشتہ داروں یا دوستوں کے پاس رہ رہے ہیں۔

بنجیت کلیتا نے مزید بتایا کہ حالیہ سیلابوں سے ایک ہزار چھ سو کے قریب دیہات پانی میں ڈوب گئے ہیں، جس میں سب سے زیادہ نقصان تحصیل دیبروگڑھ کو پہنچا ہے اور ملک کے ستائیس میں سے سترہ ریاستیں اس وقت سیلاب سے متاثرہ ہیں۔

Indien Monsun Überflutung

حالیہ سیلابوں سے ایک ہزار چھ سو کے قریب دیہات پانی میں ڈوب گئے ہیں

قبائلی کونسل کے منتظم رنوج تیگو نے خبر رساں ادارے اے پی سے ٹیلی فون پرگفتگو کرتے ہوئے کہا، ’میں اپنے آپ کو بہت بے بس محسوس کر رہا ہوں۔ براہماپترا کے گہرے اور بپھرے ہوئے سیلابی پانی سے ہر وقت ڈر لگا رہتا ہے۔ ہزاروں لوگ صرف ایک وقت کا کھانا کھا کرمصائب سے پُر زندگی گزارنے پر مجبور ہیں اور اس وقت لوگوں کی سب سے بڑی ضرورت پینے کا صاف پانی اور خوراک ہے‘۔

دنیا کے سب سے بڑے دریائی جزیرے مجولی پر زندگی بسر کرنے والے ایک لاکھ بیس ہزار افراد میں سے زیادہ تر اپنے مال مویشی سمیت اس وقت جزیرے پر ہی بانس کی بنی ہوئی عارضی پناہ گاہوں میں پناہ گزین ہیں۔

اس سیلابی صورتحال میں بہت سے جنگلی جانور جن میں ہاتھی، ہرن، بھینسیں اور خطروں سے دوچار تقریبا دو ہزار پانچ سو گینڈے شامل بھی ہیں، نے محفوظ مقامات کا رخ کرلیا ہے۔

شمال مشرقی بھارت کے یہ علاقے جو بنگلہ دیش اور میانمار کے درمیان واقع ہیں ہر سال مون سون کے موسم میں سیلاب کا شکار ہوتے ہیں۔