1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بھارت: ماؤ نواز باغی حکومت سے مذاکرات کےلئےتیار

بھارت کی ماؤ نواز کمیونسٹ جماعت کے ترجمان کوٹیسوارا راؤ عرُف کشن جی نے منگل کو جاری کردہ ایک ویڈیو ٹیپ میں حکومت کو تین ماہ کی جنگ بندی کی پیشکش کی ہے۔

default

باغیوں کے شکار پولیس اہلکار

بھارت کی ماؤ نواز کمیونسٹ جماعت کے ترجمان کوٹیسوارا راؤ عرُف کشن جی نے منگل کو جاری کردہ ایک ویڈیو ٹیپ میں حکومت کو تین ماہ کی جنگ بندی کی پیشکش کی ہے۔

15 اگست، بھارت کے یومِ آزادی کے موقع پر وزیرِاعظم مَن موہن سنگھ اور صدر پرتیبھا پاٹل دونوں نے اپنی اپنی تقاریر میں ماؤ نواز باغیوں کو مذاکرات کی پیشکش کی تھی۔

Indien Premierminister Manmohan Singh

بھارتی وزیرِاعظم مَن موہن سنگھ بائیں بازو کی عسکریت پسندی اور سرکشی کو بھارت کے لئےسب سے بڑا اندرونی خطرہ قرار دے چکے ہیں

کشن جی نے ثالث کے طور پر سماجی کارکن سوامی اگنی ویش یا پھر وزیر برائے ریلوے ممتا بینرجی کا نام تجویز کیا ہے۔ کشن جی کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ مغربی بنگال کے مشرقی حصّے میں روپوش ہیں۔

کشن جی نے مزید کہا، ’ہم یہ بات صاف واضح کر دینا چاہتے ہیں کہ ہم تشدد کے خلاف ہیں اور ہمیں حکومت نے ہتھیار اُٹھانے پر مجبور کیا ہے‘۔

گزشتہ سال کئی وُزراء اور ماؤ نواز باغیوں کی طرف سے جنگ بندی کی پیشکشیں ہوئیں مگر ان کا کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔ حکومت کا کہنا ہے کہ مذاکرات کے لئے اُس کی وہی پرانی شرط ہے کہ پہلے باغی بہتر گھنٹے کی جنگ بندی پر عمل کریں، پھر حکومت جنگ بندی پر عمل کرے گی۔

NO FLASH Indien Maoisten Rebellen Anschlag

گزشتہ سال کئی وُزراء اور ماؤ نواز باغیوں کی طرف سے جنگ بندی کی پیشکشیں ہوئیں مگر ان کا کوئی نتیجہ نہیں نکلا

بھارت کے وفاقی ہوم سیکرٹری جی کے پلائی کا کہنا ہے، ’کشن جی کا جو دل چاہے کہے مگر ہم نے بھی اپنی شرط سامنے رکھ دی ہے کہ ماؤ باغیوں کو مذاکرات کے لئے تشدد ترک کرنا پڑے گا‘۔

اُدھر کشن جی کا کہنا ہے کہ جنگ بندی دو طرفہ ہونی چاہئے اور جب تک حکومت کوئی مؤثر اور مثبت اقدامات نہیں کرتی، یکطرفہ جنگ بندی کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا اور اگر وزیرِاعظم واقعی اس معاملے میں سنجیدہ ہیں، تو پہلے وہ کوئی قدم اُٹھائیں۔

Indien Maoisten Anschlag

مشرقی بھارت میں ماؤ باغیوں کا سکیورٹی اہلکاروں پر حملہ

بھارتی وزیرِاعظم مَن موہن سنگھ بائیں بازوکی عسکریت پسندی اور سرکشی کو بھارت کے لئے سب سے بڑا اندرونی خطرہ قرار دے چکے ہیں۔

ماؤ باغی تحریک زیادہ تر غریب علاقوں میں سرگرم ہے۔ اِس تحریک کے پیروکاروں کا کہنا ہے کہ وہ بے گھروں، غریبوں اور قبائلیوں کے حقوق کے لئے لڑ رہے ہیں۔

دہشت گردی سے متعلق ساؤتھ ایشیا پورٹل وَیب سائٹ کے مطابق 2005ء سے لے کر اب تک ماؤ نوازوں کی پُر تشدد کارروائیوں میں عام شہریوں، سکیورٹی اہلکاروں اور باغیوں سمیت چار ہزار پانچ سو افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

رپورٹ: سمن جعفری

ادارت: امجد علی

DW.COM

ویب لنکس