1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت اور ایران کا تیل تنازعہ حل

بھارت اور ایران کے درمیان خام تیل کی ادائیگیوں سے متعلق تنازعہ حل ہوگیا ہے۔ بتایا جارہا ہے کہ جرمنی میں قائم ایک بینک کے ذریعے ایرانی تیل کی ادائیگی کی جائے گی۔

default

بھارت کے حکومتی ذرائع کے حوالے سے اطلاعات ہیں کہ دونوں ممالک کے درمیان لگ بھگ چھ ہفتے تک جاری رہنے والا یہ تنازعہ اب طے کرلیا گیا ہے۔

ایران، بھارت کو خام تیل فراہم کرنے والا دوسرا بڑا ملک ہے۔ بھارت اپنی 12 فیصد ضروریات کے لیے ایرانی تیل پر انحصار کرتا ہے، یعنی چار لاکھ بیرل تیل روزانہ۔ جبکہ تہران حکومت کو اس کے بدلے سالانہ لگ بھگ 12 ارب ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوتا ہے۔ اس تنازعے کی وجہ سے دونوں ممالک میں تشویش پیدا ہو گئی تھی۔

Iran Finanzkrise Geldwechsler in Teheran

ذرائع کے مطابق بھارتی حکام اس بات کو یقینی بنانے کی کوشش کریں گے کہ تیل کی تجارت سے حاصل شدہ رقم ایران کے متنازعہ جوہری پروگرام میں استعمال نہ ہوسکے

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ نئی دہلی حکومت اس بات کو یقینی بنانے کی کوشش کرے گی کہ تیل کی تجارت سے حاصل شدہ رقم ایران کے متنازعہ جوہری پروگرام میں استعمال نہ کی جائے۔ فی الحال حکومتی سطح پر اس بات کی تصدیق نہیں کی گئی۔ بھارت کی پیٹرولیم و قدرتی وسائل کی وزارت کا دعویٰ ہے کہ ایرانی تیل کی درآمد معمول پر ہے۔

یہ تنازعہ اس وقت پیدا ہوا تھا جب بھارت کے مرکزی بینک نے اعلان کیا تھا کہ مستقبل میں ایران کے ساتھ تجارت ایشین کلیئرنگ یونین ’اےسی یو‘ کے طے شدہ نظام کے تحت نہیں ہوگی۔ اس نظام کے تحت بھارت اور ایران سمیت پاکستان، سری لنکا، بنگلہ دیش، مالدیپ، میانمار، بھوٹان اور نیپال کے مرکزی بینک باہمی تجارتی معاہدوں کے تکنیکی معاملات نمٹاتے ہیں۔

بھارتی ذرائع کے مطابق ہندوستان پیٹرولیم لمیٹیڈ، منگلور ریفائنری اینڈ پیٹرو کیمیکلز لمیٹڈ جرمن شہر ہیمبرگ میں قائم یورپین ایرانین ہینڈلز بینک EIH کو ادائیگیاں کریں گی، جس کے ذریعے پھر ایران کو ادائیگیاں کی جائیں گی۔

Logo State Bank of India

بھارتی کمپنیاں EIH میں کھاتے نہیں کھولیں گی بلکہ سٹیٹ بینک آف انڈیا کے ذریعے ادائیگی کی جائے گی۔ دونوں ممالک کے حکام اس تجارت میں اب یورو کرنسی کے استعمال پر مبینہ طور پر متفق ہوگئے ہیں۔

واضح رہے کہ EIH پر امریکہ محکمہ ء خزانہ کی جانب سے یہ الزام لگ چکا ہے کہ اس کے ذریعے منتقل کی گئی اربوں ڈالر کی رقوم ایران کے جوہری پروگرام پر صرف کی گئیں ہیں۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM