1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت: اسمبلی انتخابات، کانگریس کی فتح

بھارت میں تقریباً چار ماہ قبل ہوئے عام انتخابات کے بعد عوامی مقبولیت کے پہلے امتحان میں کانگریس کامیاب ہوگئی ہے۔ اسے مجموعی طور پر اپوزیشن کے بکھراؤ کا فائدہ ہوا ہے۔

default

کانگریس دو ریاستوں میں یہ دوبارہ حکومت بنا رہی ہے جب کہ ہریانہ میں یہ سب سی بڑی پارٹی بن کر ابھری ہے۔ تین ریاستوں مہاراشٹر، ہریانہ اور ارُوناچل پردیش کے اسمبلی انتخابات کے نتائج جمعرات کو سامنے آ گئے، جن میں کانگریس نے اپوزیشن کے بکھراؤ کا فائدہ اٹھاتے ہوئے مہاراشٹر میں مسلسل تیسری مرتبہ حکومت بنانے میں کامیابی حاصل کی ہے۔ 288 رکنی ریاستی اسمبلی میں اس نے اپنی حلیف نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے ساتھ مل کر 144 سیٹیں جیت لی ہیں۔ دوسری طرف اروناچل پردیش کی 60 میں سے41 سیٹیں جیت کر کانگریس نے اس شمال مشرقی ریاست میں کلین سویپ کیا۔ تاہم قومی دارالحکومت دہلی سے ملحقہ ہریانہ میں اسے حسب توقع کامیابی نہیں مل سکی۔ 90 رکنی ہریانہ اسمبلی میں اسے 40 سیٹیں ملی ہیں اور پچھلی بار کے مقابلے میں اسے 19 سیٹوں کا نقصان ہوا ہے۔ یہاں اسے حکومت بنانے میں مشکلات پیش آسکتی ہیں۔

ہریانہ میں اپوزیشن انڈین نیشنل لوک دل کو32 سیٹیں ملی ہیں، جس کے سربراہ اوم پرکاش چوٹالہ نے حکومت بنانے کا دعویٰ کیا ہے لیکن حکومت سازی کا سارا دارو مدار ہریانہ جن ہت کانگریس کے فیصلے پر منحصر ہے، جس نے سات سیٹں حاصل کی ہیں اور جس کے سربراہ بھجن لال کسی زمانے میں کانگریسی وزیر اعلٰی رہ چکے ہیں۔

Wahlen in Indien

کانگریس میں پارٹی کے انتخابی نتائج پر تبصرہ کرتے ہوئے پارٹی کے سینئر رہنما راشد علوی نے کہا کہ ریاست کی بھوپندر سنگھ ہوڈا حکومت نے اپنے دور میں ہریانہ کو جس طرح ترقی سے ہمکنار کیا، وہ دوسری ریاستوں کے لئے ایک مثال ہے اور کانگریس کی اس مایوس کن کارکردگی کی بظاہر کوئی وجہ نظر نہیں آتی ہے۔

سیاسی تجزیہ کارو ں کا تاہم خیال ہے کہ حد سے زیادہ خود اعتمادی اور امیدواروں کا نامناسب انتخاب کانگریس کی اس صورت حال کی بڑی وجہ ہے۔

مغربی ریاست مہاراشٹر میں بھارتیہ جنتا پارٹی- شیو سینا اتحاد کی مسلسل تیسری شکست کے لئے شیو سینا کے سربراہ بال صاحب ٹھاکرے کے بھتیجے کی قیادت والی نئی سیاسی پارٹی مہاراشٹر نونرمان سینا کو بڑی حد تک ذمہ دار ٹھہرایا جا رہا ہے۔ا س الیکشن میں مہاراشٹر نو نرمان سینا کا کوئی امیدوار پہلی مرتبہ کامیاب ہوکر اسمبلی میں پہنچا ہے۔لیکن سینئر صحافی دھرمانند کامت کا خیال ہے کہ ان دونوں پارٹیوں کو جس انداز میں کوشش کرنی چاہئے تھی، اس میں کافی کمی نظر آئی۔ تاہم بی جے پی اس سے متفق نہیں ہے۔ پارٹی کے ترجمان پرکاش جاوڈیکر نے ڈوئچے ویلے سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس نے ریاست کے اصل مسائل کو پوری شدت کے ساتھ اٹھایا لیکن عوام جذباتی نعروں کا شکار ہوگئے۔ اس میں کوئی شبہ نہیں کہ مراٹھی مانس کے نعرے کا خاصا اثر پڑا ہے۔ یہ نعرہ ایم این ایس نے دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ان انتخابات کے نتائج کے بعد تو اب ہمیں یہ ڈر لگنے لگا ہے کہ کہیں لوگ یہ نہ سوچنے لگیں کہ حقیقی مسائل اٹھانے سے کوئی فائدہ نہیں ہوتا اور سب کچھ جذباتی نعروں پر ہی منحصر ہوتا ہے۔

Wahlen in Indien 2009

حالانکہ جولائی میں ہوئے عام انتخابات کے بعد تین اسمبلیوں کے لئے ہونے والے انتخابات میں کانگریس کو کامیابی حاصل ہوگئی ہے لیکن بی جے پی کا دعویٰ ہے کہ کانگریس کے ووٹوں کی شرح کم ہوئی ہے، جس سے اس کی مقبولیت میں کمی کا پتہ چلتا ہے۔ بی جے پی کے ترجمان پرکاش جاوڈیکر نے کہا کہ عام انتخابات کے بعد صرف چار ماہ کے اندر کانگریس کے ووٹوں کی شرح تین سے چار فیصد تک کم ہوگئی ہے۔ عوام اس کے خلاف تھی لیکن اپوزیشن کے بکھراؤ کی وجہ سے کانگریس کو کامیابی مل گئی ہے۔

شیوسینا نے اپنی شکست تسلیم کر لی ہے اور کہا کہ شکست کی وجوہات کا تجزیہ کیا جائے گا۔ دوسری طرف بی جے پی کے رہنما مختار عباس نقوی نے اس شکست کے لئے الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں (EVM)کو ذمہ دار ٹھہرایا اور کہاکہ یہ مشینیں کانگریس کے لئے الیکشن وکٹری مشین بن گئی ہیں۔

رپورٹ : افتخار گیلانی

ادارت : امجد علی