1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت اسرائیل سے دو ارب ڈالر کے ہتھیار خریدے گا

بھارت اور اسرائیل کے درمیان دو ارب ڈالر مالیت کے ہتھیاروں اور دفاعی ٹیکنالوجی کی خرید کا بہت بڑا معاہدہ طے پا گیا ہے۔ یہ سمجھوتہ اسرائیل کی دفاعی برآمدات کی صنعت کے لیے آج تک کا ’سب سے بڑا دفاعی تجارتی معاہدہ‘ ہے۔

Indien Militärparade 2013 Republic Day Tag der Republik Neu Delhi (dapd)

بھارت اپنے دفاعی ساز و سامان کو جدید بنانے پر بیسیوں ارب ڈالر خرچ کر رہا ہے

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے جمعہ سات اپریل کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق اسرائیل کی ریاستی ملکیت میں کام کرنے والی اسرائیل ایرواسپیس انڈسٹریز کی طرف سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ کمپنی بھارت کو ایک انتہائی جدید میزائل ڈیفنس سسٹم مہیا کرے گی۔

بیان کے مطابق، ’’اسرائیل ایرواسپیس انڈسٹریز (IAI) بھارت کو زمین سے فضا میں درمیانے فاصلے تک مار کرنے والا ایک ایسا جدید ترین ڈیفنس سسٹم مہیا کرے گی، جس میں ایسے میزائلوں کے علاوہ ان کے لانچرز اور متعلقہ کمیونیکیشن ٹیکنالوجی بھی شامل ہوں گے۔‘‘

بھارت ایک ’خفیہ جوہری شہر‘ تعمیر کر رہا ہے، پاکستان

دی ہیگ: پاکستان کے خلاف جوہری پھیلاؤ سے متعلق مقدمہ خارج

جوہری ہتھیاروں میں ممکنہ کمی، پاک امریکی اختلاف رائے کی وجہ

آئی اے آئی کے جاری کردہ اس بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ میزائلوں کی فروخت کی یہ ’میگا ڈیل‘ اسرائیل کی دفاعی صنعت کی تاریخ کا آج تک کا ’سب سے بڑا دفاعی تجارتی معاہدہ‘ ہے۔ اس کے علاوہ یہی اسرائیلی ریاستی ادارہ بھارتی بحریہ کو بھی ایک انتہائی جدید بحری دفاعی نظام مہیا کرے گا۔

Bildergalerie IMDEX Marine Ausstellung 2015 in Singapur (Reuters/E. Su)

سرکاری ادارے آئی اے آئی نے اسرائیل کو دفاعی ساز و سامان برآمد کرنے والا دنیا کا ایک اہم ملک بنا دیا ہے

اس نیول ڈیفنس سسٹم میں طویل فاصلے تک اپنے اہداف کو نشانہ بنانے کے اہل ایسے میزائل شامل ہوں گے، جو زمین سے فضا میں مار کر سکیں گے۔ یہ نیول ڈیفنس سسٹم بھارت کے اس پہلے طیارہ بردار جنگی بحری بیڑے پر نصب کیا جائے گا، جو ابھی زیر تعمیر ہے۔

اے ایف پی کے مطابق اسرائیلی کمپنی کے اس بیان پر ابھی تک بھارتی وزارت دفاع کی طرف سے کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا تاہم یہ بات واضح ہے کہ اسرائیل ایرواسپیس انڈسٹریز ان دفاعی نظاموں کے کچھ حصے بھارت ہی میں تیار کرے گی، جو موجودہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی اس پالیسی کا حصہ ہے کہ مقامی اور غیر ملکی کمپنیوں کو بھارت کے لیے اپنی زیادہ سے زیادہ مصنوعات بھارت ہی میں بنانا چاہییں تاکہ بہت مہنگی برآمدات پر بہت زیادہ انحصار کم کیا جا سکے۔

بھارت دنیا بھر میں ہتھیار درآمد کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے، جو گزشتہ کچھ عرصے سے اپنی مسلح افواج کے سوویت دور کے عسکری ساز و سامان کو جدید بنانے کے لیے بیسیوں ارب ڈالر خرچ کر رہا ہے۔ ان دفاعی اخراجات کی وضاحت کے لیے بھارت کی طرف سے خطے کی چین اور پاکستان جیسی حریف ریاستوں کے ساتھ دیرینہ کشیدگی کا حوالہ دیا جاتا ہے۔

DW.COM