1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارت : اجمل قصاب کی سزائے موت کے خلاف اپیل

ممبئی میں نومبر 2008 میں ہونے والے دہشت گردانہ واقعہ کا واحد بچ جانے والا دہشت گرد اجمل قصاب کے وکیل نے اس کی موت کی سزا کے خلاف ممبئی کی ہائی کورٹ میں اپیل دائر کی ہے۔

default

ممبئی حملوں کا واحد بچ جانے والا دہشت گرد اجمل قصاب

اجمل قصاب کے وکیل دفاع امین سولکار کے مطابق ہائی کورٹ اس اپیل کی سماعت 18 اکتوبر سے پروع کرے گی۔

اجمل قصاب کو بھارت کی ایک خصوصی عدالت نے قتل، بھارت کے خلاف جنگ،دہشت گردی اور سازشوں کے الزامات پرایک سےزائد بار موت کی سزا سنائی ہے۔

Anschläge Indien Mumbai Taj Hotel

ممبئی میں نومبر 2008 کے دہشت گردی کے حملے کے بعد ہوٹل تاج کا منظر

منگل کو ایک اور عدالت نے اجمل قصاب کی طرف سے جیل کے اہلکاروں پر ستمبر کے اوائل میں کئے جانے والے حملے کے بارے میں دائر ایک اور کیس کی سماعت کی۔

وکیل استغاثہ اجول نیکم نے عدالت کو بتایا کہ یہ واقعہ یکم ستمبر کو پیش آیا تھا۔ اُس وقت قصاب کو غیر قانونی کاموں میں ملوث پایا گیا تھا جس پر جیل اہلکاروں نے اسے روکنے کی کوشش کی تو اس نے اُن پر حملہ کر دیا،مگر واکیلِ استغاثہ نے 'غیر قانونی کاموں' کی وضاحت نہیں کی۔

اجمل قصاب کے وکلا نے اس سے اکیلے میں ملاقات کی ایک درخواست پیش کی تھی جس پر وکیل اجل نیکم نے اس درخواست کی مخا لفت میں کہا کہ اجمل قصاب ایک تربیت یافتہ کمانڈو ہے اور اس کو اکیلے نہیں چھوڑنا چاہئے،مگر قصاب کے وکلا کے مطابق اگر ان کو یہ اجازت نہیں دی گئی تو یہ وکیل اور موکل کے قانونی رشتے کی خلاف ورزی ہوگی۔ مجرم کو یہ حق حاصل ہونا چاہئے کہ وہ اپنے وکیل سے تنہائی میں ملاقات کر سکے۔

جیل کے اہلکار نے ایک حلف نامہ میں کہا ہے کہ اجمل قصاب پر چوبیس گھنٹے سکیورٹی اہلکار تعینات ہوتے ہیں اور اس کے خطرناک اور جذباتی رویے کی وجہ سے اس کی CCTV سےبھی نگرانی کی جاتی ہے۔

Indien Einheiten der indischen Armee sichern das Gelände um das Hotel Taj Mahal in Bombay Mumbai Terrorserie

ممبئی حملے میں 166 لوگ ہلاک اور 300 سے زائد زخمی ہوئے تھے

عدالت اس بارے میں بدھ کو فیصلہ سنائے گی کہ آیا قصاب کے وکلاء کو اس سے سکیورٹی اہلکاروں کی موجودگی میں، مگر ایسے کہ ان کا قصاب اور اس کے وکلاء کے درمیان ہونے والی بات چیت کا اندزا نہ ہو، کی اجازت دی جائے یا نہیں۔

اجمل قصاب 10 رکنی انتہاپسندوں کی ٹیم کا واحد زندہ بچ جانے والا رکن ہے جو نومبر 2008 میں ممبئ میں دہشت گردانہ حملے میں ملوث تھا، اس حملے میں 166 لوگ ہلاک اور 300 سے زائد زخمی ہوئے تھے۔

رپورٹ : سمن جعفری

ادارت : کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس