1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارتی سیاستدان کے لیے تامل ناڈو کی وزارت اعلیٰ کی بجائے جیل

بھارتی سپریم کورٹ نے جنوبی ریاست تامل ناڈو کی مستقبل کی خاتون وزیر اعلیٰ کو چار سال قید کی سزا سنا دی ہے۔ ’غیر متناسب اثاثوں‘ کی مالکہ وی کے ششی کلا کو دس سال کے لیے کسی عوامی عہدے کے لیے امیدواری سے بھی روک دیا گیا ہے۔

Indien Sasikala Natarajan (Getty Images/AFP/A. Sankar)

وی کے ششی کلا کو اب وزیر اعلیٰ ہاؤس کے بجائے چار سال جیل میں رہنا ہو گا

بھارتی دارالحکومت نئی دہلی سے نیوز ایجنسی روئٹرز کی منگل چودہ فروری کو ملنے والی رپورٹوں کے مطابق ملکی سپریم کورٹ نے ششی کلا سے متعلق مقدمے میں آج اپنا فیصلہ سناتے ہوئے جنوبی ریاست تامل ناڈو کی اس آئندہ وزیر اعلیٰ کو ریاستی سربراہ حکومت کے دفتر کی بجائے چار سال قید کے لیے جیل بھیج دیا۔

Jayalalithaa Jayaraman Indien (picture alliance/dpa/Jagadeesh)

تامل ناڈو کی آنجہانی خاتون وزیر اعلیٰ جیاللیتا جیارام

وی کے ششی کلا کو یہ سزائے قید بدعنوانی کے ایک ایسے مقدمے میں سنائی گئی، جس کا تعلق 1990ء کی دہائی سے تھا۔ اس عدالتی فیصلے کے بعد اب ششی کلا نہ صرف فوری طور پر وزیر اعلیٰ کا منصب نہیں سنبھال سکتیں بلکہ انہیں اگلے پورے ایک عشرے کے لیے اس عہدے پر منتخب بھی نہیں کیا جا سکے گا۔

اس مقدمے میں استغاثہ عدالت کے سامنے یہ ثابت کرنے میں کامیاب رہا کہ ششی کلا اور ان کی سیاسی تربیت کرنے والی تامل ناڈو ہی کی سابق خاتون وزیر اعلیٰ جیاللیتا جیارام اس حد تک ’غیر متناسب اثاثوں‘ کی مالک تھیں، جو وہ اپنے عوامی عہدوں کی وجہ سے ملنے والی تنخواہوں سے ممکنہ طور پر کبھی خرید ہی نہیں سکتی تھیں۔

عدالتی ریکارڈ کے مطابق یہ دونوں سیاستدان خواتین کئی بنگلوں، متعدد لگژری کاروں، چائے کی کئی باغات اور سونے اور چاندی کے بہت سے زیورات کے علاوہ ہزاروں بہت مہنگی ساڑھیوں کی بھی مالک تھی۔

Oberstes Gericht Delhi Indien (picture-alliance/dpa)

ششی کلا کو سزائے قید کا حکم نئی دہلی میں بھارتی سپریم کورٹ نے سنایا

جیاللیتا ماضی کی ایک بہت کامیاب فلمی اداکارہ تھیں، جنہوں نے 90ء کی دہائی کے شروع میں ایک علاقائی سیاسی جماعت AIADMK کی رکن کے طور پر سیاست میں قدم رکھا تھا اور 1991ء میں ملک کی بہت خوشحال جنوبی ریاست تامل ناڈو کی وزیر اعلیٰ منتخب کر لی گئی تھیں۔

جیاللیتا ریاستی سربراہ حکومت کے طور پر چار مرتبہ دوبارہ منتخب کی گئی تھیں اور دسمبر 2016ء میں جب ان کا اچانک انتقال ہو گیا تھا، تو اس وقت بھی وہ تامل ناڈو کی وزیر اعلیٰ ہی تھیں۔

وی کے ششی کلا کے بارے میں یہ بات بھی بہت اہم ہے کہ وہ ماضی میں ایک ایسی سیلز وومن رہ چکی ہیں، جو ویڈیو کیسٹیں فروخت کیا کرتی تھیں۔ انہوں نے جیاللیتا کو اس وقت بہت متاثر کیا تھا، جب انہوں نے جیاللیتا کی ایک سیاسی مہم کے لیے ایک ویڈیو بنائی تھی۔

جیاللیتا کی موت کے بعد پس منظر میں رہنے والی ایک مشیر کی بجائے ششی کلا نے پارٹی کے اندر اپنی حمایت میں اضافہ کیا اور عبوری قیادت کو پیچھے کرتے ہوئے اپنی سیاسی پارٹی کی سربراہ بھی چن لی گئی تھیں۔

ششی کلا اپنے خلاف سپریم کورٹ کے فیصلے کے وقت خود عدالت میں موجود نہیں تھیں اور نئی دہلی میں عدالت عظمیٰ نے انہیں حکم دیا ہے کہ وہ فوری طور پر خود کو پولیس کے حوالے کر دیں تاکہ جیل بھیجے جانے کے بعد وہ اپنی سزا کاٹنا شروع کر سکیں۔

India Jayalalithaa Trauer (picture alliance/AP Photo/R. Maqbool)

بہت مقبول خاتون سیاستدان جیاللیتا جیارام گزشتہ دسمبر میں اچانک انتقال کر گئی تھیں

اسی مقدمے میں انڈین سپریم کورٹ نے وی کے ششی کلا کی ایک بھانجی اور ایک بھتیجے کو بھی، جو اس مقدمے میں شریک ملزمان تھے، بدعنوانی کے جرم میں چار چار سال قید کی سزائیں سنائی ہیں۔

اس وقت تامل ناڈو کے عبوری وزیر اعلیٰ او پنیرسیلوَم ہیں، جنہیں ششی کلا نے پارٹی قیادت کے مقابلے میں ہرا دیا تھا لیکن اب ششی کلا کے سیاسی طور پر بہت آگے آنے کی مخالفت کرنے والے یہی سیاستدان تامل ناڈو کے وزیر اعلیٰ رہیں گے۔

تامل ناڈو میں مختلف صنعتوں کے لیے مینوفیکچرنگ پلانٹ تیار کرنے والی غیر ملکی فرموں کی بے تحاشا دلچسپی کے وجہ سے اس بھارتی ریاست کو امریکی شہر ڈیٹرائٹ کی نسبت سے ’ایشا کا ڈیٹرائٹ‘ بھی کہا جاتا ہے۔

DW.COM