بھارتی سپریم کورٹ کے جج ہی سپریم کورٹ سے غیر مطمئن | حالات حاضرہ | DW | 12.01.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بھارتی سپریم کورٹ کے جج ہی سپریم کورٹ سے غیر مطمئن

بھارتی سپریم کورٹ کے چار حاضر سروس ججوں نے ملک کی اعلیٰ ترین عدالت کی انتظامیہ اور چیف جسٹس پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ انڈین سپریم کورٹ کے انتظامی امور ’درست نہیں ہیں‘، جو ملک میں جمہوریت کے لیے بہت بڑا خطرہ ہے۔

دارالحکومت نئی دہلی سے جمعہ بارہ جنوری کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق ان چاروں ججوں نے خبردار کیا ہے کہ بھارتی سپریم کورٹ کے انتظامی معاملات ٹھیک نہیں ہیں اور اگر اس قومی ادارے کی ساکھ اور نظم و نسق کے مستقل تحفظ کو یقینی نہ بنایا گیا، تو ملک میں ’جمہوریت بھی زندہ نہیں رہے گی‘۔

بھارتی سینما گھروں میں قومی ترانہ لازمی نہیں، سپریم کورٹ

بھارت : بابری مسجد تنازعے کی حتمی سماعت ملتوی

کمسن بیوی کے ساتھ جنسی تعلق ’ریپ‘ شمار ہو گا، بھارتی سپریم کورٹ

بھارت کی جمہوری تاریخ میں آج جمعہ 12 جنوری کے روز پہلی بار ایسا ہوا کہ سپریم کورٹ کے متعدد حاضر سروس ججوں نے مل کر نئی دہلی میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کیا، جس سے یہ بات کھل کر سامنے آ گئی کہ عدالت عظمیٰ کے کئی سینئر ججوں اور چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کے مابین نہ صرف شدید اختلافات پائے جاتے ہیں بلکہ اس شدت میں اضافہ بھی ہوتا جا رہا ہے۔

Flash-Galerie Oberstes Gericht in Indien

اس پریس کانفرنس سے قبل عدالت عظمیٰ کے جسٹس جاستی چیلامیشور نے اخبار ٹائمز آف انڈیا کو بتایا، ’’چیف جسٹس نے ہمارے لیے اس کے سوا اور کوئی راستہ چھوڑا ہی نہیں کہ ہم ان حقائق کو عوام کے پاس لے کر جائیں کہ ملکی سپریم کورٹ میں کیا کچھ ہو رہا ہے۔‘‘ ان ججوں نے یہ بھی کہا کہ وہ چیف جسٹس مشرا کی طرف سے کی جانے والی تقسیم کار سے بھی اتفاق نہیں کرتے۔

تین طلاقیں غیر آئینی ہیں، بھارتی سپریم کورٹ

ہائی کورٹ جج کی دماغی حالت کے معائنےکا حکم، سپریم کورٹ

بھارتی سپریم کورٹ کا گائے ذبح کرنے پر ملک گیر پابندی سے انکار

روئٹرز نے لکھا ہے کہ جسٹس چیلامیشور اور ان کے تین ساتھی ججوں نے کہا ہے کہ وہ اس بارے میں جلد ہی اپنی تشویش کا تحریری اظہار ایک مشترکہ خط میں بھی کریں گے، جو عوامی سطح پر ریلیز کیا جائے گا۔ بھارتی چیف جسٹس دیپک مشرا سے انتہائی حد تک نالاں ان چار ججوں میں جسٹس چیلامیشور کے علاوہ جسٹس رنجن گوگوئی، جسٹس مدن لوکُور اور جسٹس کوریان جوزف شامل ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 03:39

بھارت میں خواتین کو فوری طلاق دینے کے خلاف جدو جہد جاری

DW.COM

Audios and videos on the topic