1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

بھارتی تھئیٹر کی نامور شخصیت حبیب تنویر کا انتقال

بھارتی اسٹیج کی دُنیا میں لیجنڈ کی حیثیت سے جانے پہچانے والے نامور ڈرامہ نگار اور ہدایتکار حبیب تنویر مختصر علالت کے بعد پیر آٹھ جون کی صبح بھوپال کے نیشنل ہسپتال میں انتقال کر گئے۔

default

سن 2006ء میں حبیب تنویر بون میں اپنے ہوٹل میں ڈوئچے ویلے کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے

حبیب تنویر کو آج منگل کے روز سپردِ خاک کیا جا رہا ہے۔ اُن کی عمر پچاسی برس تھی۔

وہ یکم ستمبر سن 1923ء کو رائے پور میں پیدا ہوئے۔ اُن کا اصل نام حبیب احمد خان تھا لیکن جب شاعری شروع کی تو اپنے نام کے ساتھ تنویر کا اضافہ کر لیا۔ وہ ایک ہمہ جہت شخصیت کے مالک تھے اور ڈرامہ نگاری اور اسٹیج ڈائریکشن کے ساتھ ساتھ اداکاری بھی کرتے تھے۔

Naya Theatre

حبیب تنویر کے مشہور ڈرامے ’آگرہ بازار‘ کا ایک منظر

1944ء میں مورس کالج ناگ پور سے گریجوایشن کرنے کے بعد ایم اے کے لئےعلی گڑھ یونیورسٹی میں داخلہ لیا لیکن ایک ہی سال بعد بمبئی چلے گئے اور آل انڈیا ریڈیو کے ساتھ بطور پروڈیوسر وابستہ ہو گئے۔

اِس شہر میں رہتے ہوئے اُنہوں نے کچھ ہندی فلموں کے لئے گیت بھی لکھے اور کچھ میں اداکاری بھی کی۔ وہ ترقی پسند تحریک سے بھی وابستہ رہے۔

پچاس کے عشرے میں وہ ڈرامے کی تکنیک میں تربیت کے حصول کے لئے چند برس انگلینڈ میں مقیم رہے۔ اُسی دَور میں اُنہیں جرمن شہر برلن میں قیام کا موقع ملا، جہاں اُنہوں نے ممتاز جرمن ڈرامہ نگار بیرتھولٹ بریشت کے کئی ڈرامے دیکھے۔ یہ بریشت کے انتقال کے کچھ ہی عرصہ بعد کی بات ہے۔ بریشت نے اُن کے فن پر گہرے اثرات مرتب کئے۔

Habib Tanvir

حبیب تنویر بون میں ’’آگرہ بازار‘‘ کی پیشکش کے بعد حاضرین کی داد وصول کرتے ہوئے

اُنہوں نے 1954ء ہی میں ’’آگرہ بازار‘‘ کے نام سے ایک اسٹیج ڈرامہ لکھا تھا، جس میں کلاسیکی دور کے ممتاز شاعر نظیر اکبر آبادی کو خراج تحسین پیش کیا گیا تھا۔ حبیب تنویر نے اپنے اِس ڈرامے کے ساتھ سن 2006ء میں جرمن شہر بون میں منعقدہ بھارتی ثقافتی ہفتے کی تقریبات میں شرکت کی۔ اِس موقع پر اِس ڈرامے کے درجنوں فنکاروں نے اُن کے ساتھ بھارت سے بون آ کر اپنے فن کا مظاہرہ کیا تھا۔ اِس ڈرامے میں اُنہوں نے باقاعدہ اداکاروں کی بجائے سڑکوں پر اور گلیوں میں گانے بجانے اور تماشا دکھانے والوں کو دکھایا اور ایک نئی روایت کی بنیاد ڈالی۔

Theater Regisseur Habib Tanvir

حبیب تنویر نے خود کو اسٹیج کے لئے وقف کر رکھا تھا، وہیں وہ سب سے زیادہ سکون محسوس کرتے تھے۔ 2006ء میں بون میں لی گئی ایک تصویر

1959ء میں اُنہوں نے اپنی اہلیہ مونیکا مشرا کے ہمراہ بھوپال میں ’’نیا تھئیٹر‘‘ کے نام سے ایک تھئیٹر کمپنی کی بنیاد رکھی، جو اِس سال اپنی گولڈن جوبلی منا رہی ہے۔

1975ء میں اُنہوں نے ’’چرن داس چور‘‘ کے نام سے ایک اور ڈرامہ لکھا، جو بے حد مقبول ہوا۔ اِس ڈرامے کے باعث اُنہیں 1982ء میں ایڈنبرا انٹرنیشنل ڈرامہ فیسٹی ول میں فرنج فرسٹس ایوارڈ سے نوازا گیا۔

اُنہیں جو بے شمار اعزازات ملے، اُن میں 1969ء کا سنگیت ناٹک اکیڈمی ایوارڈ، 1983ء میں ملنے والا پدم شری اور سن 2002ء میں ملنے والا پدم بھوشن بھی شامل ہیں۔

حبیب تنویر نے تقریباً نو فلموں میں اداکاری کی، جن میں رچرڈ ایڈنبرگ کی بنائی ہوئی فلم ’’گاندھی‘‘ بھی شامل ہے۔

اُن کے انتقال پر بھارت کی سرکردہ سیاسی و سماجی شخصیات نے گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے اور اسٹیج کے لئے اُن کی خدمات کو شاندار الفاظ میں خراجِ عقیدت پیش کیا ہے۔