1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

وجود زن

بھائی نے بہن اور بھانجی کو غیرت کے نام پر قتل کر دیا

پاکستانی پولیس کا کہنا ہے کہ لاہور میں ایک شخص نے اپنی بہن اور اس کی بیٹی کو غیرت کے نام پر قتل کر دیا ہے۔

نیوز ایجنسی اے پی کی رپورٹ کے مطابق اپنی بہن اور اس کی بیٹی کو قتل کرنے والے مبینہ قاتل کا نام محمد شہزاد بتایا گیا ہے۔ اس مشتبہ ملزم کو فی الحال گرفتار نہیں کیا جا سکا ہے اور وہ مفرور ہے۔  پولیس افسر عابد میمن نے اے پی کو بتایا کہ یہ شخص اپنی بہن کی چوتھی شادی اور اس سے پہلے تین طلاقوں  پر ناراض تھا۔ پولیس نے یہ بھی بتایا کہ جب شہزاد کی بہن اپنی بیٹی کو لینے اپنے بھائی کے گھر آئی تو اس نے اپنی بہن اور اس کی بیٹی کو گولیاں مار کر ہلاک کر دیا۔

پولیس افسر عابد میمن کا یہ بھی کہنا ہے کہ محمد شہزاد کو خدشہ تھا کہ اس کی بہن کی زندگی سے اُس کی بھانجی متاثر ہو کر ویسے ہی رویے اپنا سکتی تھی۔ واضح رہے کہ ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں ہر سال ایک ہزار خواتین کو ہر سال غیرت کے نام پر قتل کر دیا جاتا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 01:41

پاکستان: نیا قانون غیرت کے نام پر قتل کے خلاف ایک امید

ایک اندازے کے مطابق ہر سال پاکستان میں کم از کم ایک ہزار خواتین کوغیرت کے نام پر قتل کر دیا جاتا ہے۔ گزشتہ برس اکتوبر میں پاکستان کی پارلیمنٹ نے غیرت کے نام پر قتل کے خلاف قانون میں ترمیم کی تھی۔ سابقہ قانون میں جو ترمیم کی گئی تھی، اُس کے مطابق غیرت کے نام پر قتل کے مجرموں کو سخت سزاؤں کا سامنا ہو گا۔

 مجرم کو دی گئی موت کی سزا کو اگر قتل کیے جانے والی عورت یا مرد کے خاندان والے معاف بھی کر دیں گے تو بھی مجرم کو پچیس برس کی عمر قید ہر صورت میں بھگتنا ہو گی۔

DW.COM

Audios and videos on the topic