1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

بچوں کی پرورش کا ’چینی’ طریقہ متنازعہ بن گیا

چینی نژاد امریکی مصنفہ کی ایک کتاب نے انٹرنیٹ کی دُنیا میں بچوں کی پرورش سے متعلق نئی بحث چھیڑ دی ہے، جس کے نتیجے میں بچوں کی پرورش کے لیے مغرب کے سہل طریقے کا موازنہ ‍ ’چین‘ کے سخت طریقہ کار سے کیا جا رہا ہے۔

default

یہ کتاب یالے یونیورسٹی میں قانون کی پروفیسر ایمی شاؤ نے لکھی ہے، جس کا نام ’بیٹل ہیم آف دی ٹائیگر مَدر ’ ہے۔ انہوں نے امریکہ میں آباد چند ایشیائی تارکین وطن ایسے خاندانوں کا ذکر کیا ہے، جو پیانو لیسنز اور ہوم ورک کے سخت گیر دَور کی نہ صرف حمایت کرتے ہیں بلکہ اسے کامیابی کی کنجی گردانتے ہیں۔

اس کتاب کا ایک اقتباس رواں ماہ ’وال سٹریٹ جرنل‘ میں شائع ہوا، جسے سوشل نیٹ ورکنگ ویب سائٹس فیس بُک اور ٹوئٹر پر متعدد مرتبہ شیئر کیا گیا۔ اس کے بعد شاؤ کا یہ موضوع ثقافتی اقدار پر بحث کی وجہ بنا، جو ایسے میں وقت شروع ہوئی ہے، جب مغرب میں چین سے پیچھے رہ جانے کی تشویش پائی جاتی ہے۔

Studieren mit Kindern

ایمی شاؤ کی نئی کتاب امریکہ میں موضوع بحث بنی ہوئی ہے

شاؤ کا کہنا ہے کہ اس کتاب پر انہیں ای میل کے ذریعے قتل کی دھمکیاں بھی ملی ہیں۔ تاہم انہوں نے ذرائع ابلاغ کو دیے گئے مختلف انٹرویوز میں اپنے مؤقف کا دفاع کیا ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ ان کی کتاب سے جو اقتباس انٹرنیٹ پر شیئر کیا گیا، اس میں کتاب کا وہ حصہ شامل نہیں، جس میں بچوں کی پرورش کے طریقہ کار میں توازن کی بات کی گئی ہے۔

شاؤ نے نیوز ویک میگزین کو بتایا، ’مجھے قتل کی دھمکیاں ملی ہیں، اور لوگ مجھے کوستے ہوئے چین واپس جانے کے لیے کہہ رہے ہیں۔ مجھے اس ردعمل کی توقع نہیں تھی۔‘

اس کتاب میں شاؤ نے بتایا کہ کیسے انہوں نے اپنے شوہر کے ساتھ مل کر چینی طریقے سے اپنے دو بیٹیوں کی پرورش کی۔ دوسری جانب چین میں بعض حلقوں نے اس طریقہ پرورش کو ’چینی’ قرار دینے پر بھی سخت ردِ عمل ظاہر کیا ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عاطف بلوچ

DW.COM

ویب لنکس