1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بچوں سے زیادتی کےخلاف پوپ کامذمتی خط اور ردعمل

کیتھولک کلیسائی اداروں میں منظر عام پر آنے والے بچوں سے جنسی زیادتی کے ہزاروں واقعات پر، جن سے اس چرچ کی ساکھ بری طرح متاثر ہوئی، پاپائے روم نے حال ہی میں اپنے ایک تاریخی خط میں انتہائی دکھ اور گہری شرمندگی کا اظہارکیا۔

default

گزشتہ قریب ڈیڑھ سال کے دوران مختلف ملکوں میں کیتھولک کلیسا کے مذہبی اور تعلیمی اداروں میں بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے اتنے زیادہ واقعات سامنے آئے کہ اس وجہ سے کلیسائے روم کی ساکھ واضح طور پر متاثر ہوئی۔ یہ واقعات کسی ایک ملک یا شہر میں نہیں بلکہ کئی ملکوں میں دیکھنے میں آئے، جن کی تعداد ہزاروں میں بنتی ہے۔ ان ملکوں میں جرمنی، آسٹریا، ہالینڈ اور آئرلینڈ بھی شامل ہیں۔

آئرلینڈ میں تو ان تکلیف دہ حقائق کے 2009 میں منظرعام پر آنے کے بعد ایک طوفان کھڑا ہو گیا تھا۔ اس لئے کہ یورپی یونین کے رکن اس ملک میں 1930 سے لے کر 2009 تک کی آٹھ دہائیوں میں بہت سی کلیسائی شخصیات ہزاروں بچوں کو جنسی زیادتی کا نشانہ بناتی رہیں۔

ویٹی کن سے توقع

آئرلینڈ میں اس سکینڈل کے منظرعام پر آنے کے بعد وقفے وقفے سے متعدد اعلیٰ کلیسائی نمائندے اپنے عہدوں سے مستعفی بھی ہو گئے تھے۔ ان حالات میں ویٹی کن میں پاپائے روم سے یہ توقع بھی کی جانے لگی تھی کہ وہ ان واقعات پر سخت موقف اختیار کرتے ہوئے واضح کریں کہ کیتھولک کلیسا ایسے واقعات کی مذمت اور مستقبل میں ان کی روک تھام کے لئے کس طرح کے اقدامات کا ارادہ رکھتا ہے۔ پھر 17 مارچ کو کلیسائے روم کے سربراہ پوپ بینے ڈکٹ شانزدہم نے یہ اعلان کیا کہ وہ عنقریب ہی آئرلینڈ میں تمام سرکردہ کیتھولک مذہبی شخصیات کو ایک خط لکھیں گے، جس میں بچوں سے جنسی زیادتی کے واقعات سے پیدا ہونے والی صورتحال کا احاطہ کیا جائے گا۔

Papst im Gespräch mit Robert Zollitsch tief betroffen über Missbrauchsskandal Flash-Galerie

پاپائے روم ویٹی کن میں جرمن آرچ بشپ رابرٹ سولچ سے ملاقات کرتے ہوئے

پوپ کے اس تاریخی خط کا بڑی بے چینی سے انتظار کیا جانے لگا تھا۔ 20 مارچ کو پاپائے روم نے اپنا یہ خط نہ صرف لکھا بلکہ اس کی تفصیلات بھی شائع کر دی گئیں۔ پاپائے روم نے اپنے اس خط میں، جس کی کیتھولک کلیسا کی تاریخ میں پہلے کوئی مثال نہیں ملتی، بچوں سے جنسی زیادتی کے ان واقعات پر نہ صرف گہرے افسوس کا اظہار کیا بلکہ یہ بھی کہا کہ وہ ذاتی طور پر شرمندہ ہیں کہ ایسے واقعات کو قبل از وقت روکا نہ جا سکا۔

پاپائے روم کا اظہار شرمندگی

آئرلینڈ کے کیتھولک بشپس کے نام اس خط میں پوپ کا پیغام بہت واضح تھا۔ انہوں نے بچوں سے جنسی زیادتی کے کسی بھی شکل میں رونما ہونے والے جملہ واقعات پر معذرت کی اور کہا کہ آئرش کلیسا کو اپنی تاریخ کے ان تاریک لمحات پر شرمندگی کے علاوہ احیاء کا ایک باقاعدہ عمل بھی شروع کرنا ہو گا۔ کلیسائی اصطلاح میں کسی بھی بشپ کے زیر اثر علاقے کو diocese کہا جاتا ہے۔ پوپ نے اپنے خط میں یہ اعلان بھی کیا کہ ویٹی کن کی طرف سے آئرلینڈ میں ہر اس diocese میں مکمل چھان بین کرائی جائے گی، جہاں بچوں سے جنسی زیادتی کے واقعات رونما ہوئے۔

Hirtenbrief des Papstes an die irische Kirche

بینے ڈکٹ شانزدہم کے آئرش بشپس کے نام کئی صفحات پر مشتمل خط کا پہلا صفحہ

یہی نہیں پوپ نے بچوں کے جنسی استحصال کے ان واقعات کو بڑا جرم اور سنجیدہ نوعیت کے مجرمانہ فعل کا نام دیتے ہوئے آئرلینڈ میں اعلیٰ کلیسائی نمائندوں کو یہ ہدایات بھی جاری کیں کہ جنسی زیادتی کے واقعات کی تحقیقات کے سلسلے میں قانون نافذ کرنے والے مقامی اداروں اور آئرلینڈ کی عدلیہ کے ساتھ بھی مکمل تعاون کیا جائے۔

کلیسائی احیاء کی کوشش

پوپ کے اس خط کے بعد آئرلینڈ میں کیتھولک چرچ کے سربراہ کارڈینل شان بریڈی نے کہا کہ کلیسائے روم کے سربراہ کا یہ مکتوب کلیسائی احیاء کی کوششوں کے سلسلے میں مرکزی پیش رفت کی حیثیت رکھتا ہے۔ شمالی آئرلینڈ میں 20 مارچ ہفتے کے روز ایک بہت بڑے مذہبی اجتماع میں پوپ کا خط پڑھ کر سناتے ہوئے کارڈینل بریڈی نے کہا: ’’پاپائے روم نے لکھا ہے کہ صرف ایسے فیصلہ کن اقدامات ہی، جو مکمل ایمانداری اور شفافیت کے ساتھ کئے جائیں، آئرلینڈ کے عوام کے کیتھولک کلیسا پر اعتماد اور اس چرچ کے وقار کو بحال کرنے میں مددگار ثابت ہو سکتے ہیں۔ پاپائے روم نے یہ بھی لکھا ہے کہ تمام بشپس کو اپنی احتساب کی سوچ کا اعادہ کرنا چاہیے۔‘‘

Kloser Ettal Kindesmissbrauch

جرمن صوبے باویریا میں Ettal کا کیتھولک راہب خانہ جہاں ماضی میں کئی بچوں سے جنسی زیادتی کی گئی

اس خط کا ایک اقتباس پڑھ کر سناتے ہوئے کارڈینل بریڈی نے کہا: ’’پاپائے روم کہتے ہیں کہ جو پادری یا دیگر مذہبی شخصیات بچوں سے بدسلوکی کی مرتکب ہوئیں، انہوں نے ان بچوں اور ان کے والدین کے اس اعتماد کو دھوکہ دیا، جو ان پر کیا گیا تھا۔ ایسے تمام افراد کو خدا کے سامنے بھی جواب دہ ہونا پڑے گا، اور انہیں آئرلینڈ میں مروجہ قوانین کے مطابق وہاں کی عدالتوں کو بھی جواب دینا ہو گا۔ پوپ کے بقول ایسے تمام مجرم کیتھولک چرچ کے لئے شرمندگی اور بے عزتی کا باعث بنے اور ان کے جرائم سے چرچ کو شدید نقصان پہنچا۔‘‘

متاثرین کو ملاقات کی دعوت

پاپائے روم نے اپنے اس خط میں جنسی زیادتی کا شکار بننے والے افراد کو ذاتی سطح پر ملاقاتوں کی پیشکش بھی کی تاکہ ان کے دکھوں کا ازالہ کیا جا سکے۔ شمالی آئرلینڈ میں کیتھولک کلیسا کے سربراہ کارڈینل بریڈی نے پوپ کے خط کا ایک اور حصہ پڑھ کر سناتے ہوئے کہا: ’’پاپائے روم نے یہ اعتراف کیا ہے کہ جنسی زیادتی کے شکار ان افراد کے لئے ماضی اور حال کتنا تکلیف دہ ہو گا۔ ان میں سے کئی متاثرین کے لئے تو آج کسی چرچ کے دروازے تک جانا بھی بہت تکلیف کا باعث ہوتا ہو گا۔ پوپ کو اس شدید دکھ کا بھی احساس ہے جس کا سامنا ایسے بچوں کے والدین کو کرنا پڑا، حالانکہ جس ماحول میں ان بچوں پر ظلم کیا گیا وہ ان کے لئے محفوظ ترین ماحول ہونا چاہیے تھا۔‘‘

Symbolbild Kindesmissbrauch in der Kirche

پوپ کے خط پر ردعمل

آئرلینڈ میں پوپ کے اس خط پر رد عمل ملا جلا تھا۔ کلیسائی اداروں میں مذہبی شخصیات کی طرف سے جنسی زیادتی کے شکار افراد کی سب سے بڑی آئرش تنظیم One in Four کے سربراہ Maeve Lewis نے کہا کہ انہیں پوپ کے پیغام سے نا امیدی ہوئی ہے۔ خاص طور پر اس وجہ سے کہ سالہاسال تک جاری رہنے والے ان جرائم اور ان کو چھپانے کی مسلسل کوششوں کی کافی مذمت نہیں کی گئی۔

جنسی زیادتی کا شکار ہونے والے ایک شخص کولم اوگور مان نے کہا کہ اس نے کیتھولک چرچ میں ایسے واقعات کی طویل عرصہ قبل ذاتی طور پر نشاندہی کر دی تھی۔ اوگورمان کہتے ہیں: ’’کیتھولک چرچ میں ان واقعات کو شعوری طور پر ایک منظم انداز میں پوشیدہ رکھا گیا تاکہ چرچ کی طاقت اور اس کی دولت کے لئے کوئی خطرہ پیدا نہ ہو۔‘‘

ایک برطانوی صحافی جو طویل عرصے تک ایسے واقعات کے بارے میں رپورٹنگ کرتے رہے، کہتے ہیں کہ پوپ کا پیغام کامیاب تو رہا لیکن اسے قطعی طور پر کامیاب نہیں کہا جا سکتا۔ رابرٹ پِگٹ نامی اس برطانوی صحافی کا کہنا ہے: ’’اس پیغام کے سلسلے میں پوپ کی سنجیدگی اور جنسی زیادتی کے واقعات پر ان کے غم وغصے اور شرمندگی کے احساس کے بارے میں کسی شک وشبہے کا اظہار نہیں کیا جا سکتا۔ لیکن اس کے باوجود کئی لوگ ناامید بھی ہوئے ہیں کیونکہ یہ خط ان مطالبوں کو بھی پورا نہیں کرتا جو چند متاثرین کی طرف سے کئے گئے تھے۔‘‘

تحریر: مقبول ملک

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM