1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

بٹ کی کھلاڑیوں کو صبر و تحمل کی تلقین

ٹیسٹ کرکٹ کے لئے پاکستانی دستے کے نئے کپتان سلمان بٹ نے جیت کے لئے کھلاڑیوں میں تحمل اور برداشت کو انتہائی اہم قرار دیا ہے۔

default

سلمان بٹ

شاہد خان آفریدی کی جانب سے ٹیسٹ کرکٹ کو دوبارہ خیر باد کہہ دینے کے بعد سلمان بٹ کو ٹیم کی قیادت سونپی گئی ہے۔

آفریدی نے آسٹریلیا سے لارڈز ٹیسٹ میں 150 رنز کی شکست کے فوری بعد ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا۔ اطلاعات ہیں کہ آفریدی آسٹریلیا کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ کے بعد ذمہ داریاں سلمان بٹ کو منتقل کریں گے۔

Inzamam-ul-Haq Cricketspieler

انضمام الحق کے مطابق آفریدی کو ٹیسٹ کپتان مقرر کرنے کا فیصلہ ہی غلط تھا

بیشتر سابق کرکٹرز نے موجودہ صورتحال پر اپنے تبصروں میں کرکٹ بورڈ کی پالیسیوں کو آڑے ہاتھوں لیا ہے۔ سابق کپتان اور مایہ ناز بلے باز انضمام الحق کے بقول آفریدی کو قائد بنانے کا فیصلہ سرے سی ہی غلط تھا۔ ’’آفریدی پر زبردستی یہ ذمہ داری ڈالنے کا نقصان پاکستان کرکٹ کو ہوا ہے۔ ‘‘ انضمام 2006ء کے دورہ ء انگلینڈ کے موقع پر کپتان تھے، انہوں نے فوری طور پر ٹیم میں یونس خان اور محمد یوسف کی واپسی پر زور دیا ہے۔

یاد رہے کہ یونس پر عائد پابندی اٹھالی گئی ہے اور بہت زیادہ امکان ظاہر کیا جارہا تھا کہ وہ دورہ ء انگلینڈ کے لئے منتخب کر لئے جائیں گے تاہم مبینہ طور پر بورڈ کے چیئرمین اعجاز بٹ نے انہیں ’کلیئر‘ قرار نہیں دیا۔

Cricket - Shahid Afridi

آفریدی کے بقول ان کا مزاج پانچ روزہ کرکٹ کھیلنے جیسا نہیں، وہ ایک روزہ اور ٹوئنٹی ٹوئنٹی پر توجہ دینا چاہتے ہیں

یوسف اگرچہ کرکٹ کو خیر باد کہہ چکے ہیں تاہم پاکستانی میڈیا میں قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں کہ شاید انہیں دوبارہ ٹیم میں بلا لیا جائے۔

سابق ٹیسٹ کرکٹر اور سابق چیف سلیکٹر اقبال قاسم کے بقول آفریدی کی جانب سے اچانک ریٹائرمنٹ کا فیصلہ ٹیم کے مورال پر منفی اثر مرتب کرسکتا ہے۔ قاسم کا کہنا ہے، ’’ ہم سب جانتے ہیں کہ اس نے کپتانی کی ذمہ داری نہ چاہتے ہوئے قبول کی تھی مگر جب ایک مرتبہ ذمہ داری اٹھائی تو پھر اسے پورا کرنا چاہئے تھا۔ ‘‘

ٹیسٹ ٹیم کے نئے کپتان سلمان بٹ افتتاحی بلے باز ہیں اور گزشتہ میچ میں نمایاں کارکردگی دکھا چکے ہیں۔ انہوں نے آسٹریلیا کے خلاف پاکستان کی دونوں اننگز میں سب سے زیادہ، 63 اور 92 رنز بنائے۔ بائیں ہاتھ سے کھیلنے والے پچیس سالہ بٹ اب تک 28 ٹیسٹ میچز کھیل چکے ہیں۔ وہ پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے تین سنچریاں بناچکے ہیں اور ان کی بیٹنگ اوسط 32.75 ہے۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: ندیم گِل

DW.COM