1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بُرقینی پر پابندی ختم، فرانس کی اعلیٰ عدالت کا فیصلہ

فرانس کی اعلیٰ ترین انتظامی عدالت نے حال ہی میں چند ساحلی شہروں میں برُقینی پر عائد کی جانے والی پابندی کو غیرقانونی قرار دیتے ہوئے اسے ختم کر دیا ہے۔ اس پابندی کے خلاف عالمی سطح پراحتجاج کیا گیا تھا۔

حال ہی میں فرانس کے ساحلی علاقے ویلینیو لوبے میں پولیس اہلکاروں کی طرف سے ایک مسلمان خاتون کو بُرقینی اتارنے کا کہا گیا تھا کیوں کہ اس علاقے میں چند روز پہلے ہی مقامی حکومت کی جانب سے بُرقینی (مکمل جسم ڈھانپنے کا وہ لباس جو مسلم خواتین تیراکی کے دوران پہنتی ہیں) پہننے پر پابندی عائد کی جا چکی تھی۔ یہ تصاویر میڈیا پر آتے ہی دنیا بھر میں احتجاج کا سلسلہ شروع ہو گیا تھا۔

آج فرانس کی ’کونسل آف اسٹیٹ‘ کی طرف سے یہ فیصلہ خاص طور پر حالیہ عائد پابندی کے حوالے سے سنایا گیا ہے لیکن یہ قانونی فیصلہ فرانس کی ان تمام تیس ساحلی بلدیاتی حکومتوں کے لیے بھی ایک مثال ہو گا، جنہوں نے اسی طرح کے احکامات جاری کر رکھے ہیں۔

London Burkini Beach Party Demonstration

لندن میں فرانسیسی سفارت خانے کے باہر ہونے والے احتجاج کا ایک منظر

انسانی حقوق کے دو گروپوں کے وکلاء کی طرف سے بُرقینی پر عائد پابندی کے خلاف اس اعلیٰ عدالت سے رجوع کیا گیا تھا۔ ان وکلاء کا کہنا تھا کہ برقینی پر پابندی عائد کرنے سے بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کی گئی ہے اور اس معاملے میں مئیرز نے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ مئیرز کو یہ اختیار ہی نہیں ہے کہ وہ خواتین کو یہ بتائیں کہ انہیں ساحل پرکیسے کپڑے پہننا چاہیئیں۔

قبل ازیں برقینی پر پابندی کے حق میں مئیرز کا کہنا تھا کہ وہ حالیہ دہشت گردانہ حملوں کے تناظر میں اور عوامی نظام کے تحفظ کے لیے ایسا کر رہے ہیں جبکہ بہت سے حکام کا کہنا تھا کہ برقینی عورتوں کے خلاف ظلم کی علامت ہے۔

Frankreich Nizza Stand Burkini Verbot

فرانس میں تقریبا تیس کے قریب بلدیاتی حکومتیں ساحل سمندر پر برقینی پہننے پر پابندی عائد کر چکی ہیں

آج ہیومن رائٹس لیگ کی نمائندگی کرنے والے وکیل پیٹریس سپینوس کا صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ یہ فیصلہ دیگر میئرز کے لیے بھی مثال ہے اور انہیں بھی اپنے علاقوں میں عائد پابندی ختم کر دینی چاہیے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ جمعے کے اس فیصلے کے بعد اب خواتین کو جرمانہ ادا کرنے کی بھی ضرورت نہیں ہے۔ فرانس میں تقریبا تیس کے قریب بلدیاتی حکومتیں ساحل سمندر پر برقینی پہننے پر پابندی عائد کر چکی ہیں۔

دریں اثناء اس فیصلے کے بعد فرانس کے شمالی علاقے سِسکو کے مئیر نے کہا ہے کہ وہ اس عدالتی فیصلے کے باوجود اپنے علاقے میں برقینی پر عائد پابندی ختم نہیں کریں گے۔

فرانس میں مسلمانوں کی مرکزی تنظیم ’سی ایف سی ایم‘ نے اس فیصلے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے اسے ’عقل سلیم کی فتح‘ قرار دیا ہے۔