1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بون کانفرنس: ’پاکستان کا جرمنی سے کوئی اختلاف نہیں‘

بون میں افغانستان کانفرنس کی رپورٹنگ کے لیے آنے والے معروف پاکستانی صحافیوں حامد میر، سلطان محمود حالی اور شوکت محمود پراچہ نے کہا ہے کہ بون کانفرنس کے بائیکاٹ کی وجہ یہ نہیں کہ پاکستان کا جرمنی کے ساتھ کوئی اختلاف ہے۔

پاکستانی صحافی حامد میر ڈوئچے ویلے کے شعبہء اردو میں

حامد میر شعبہء اردو میں

بون کانفرنس سے وابستہ کی جانے والی توقعات کے موضوع پر ڈوئچے ویلے ریڈیو کے شعبہء اردو کے ایک خصوصی پروگرام میں اظہارِ خیال کرتے ہوئے ان صحافیوں کا کہنا تھا کہ پاکستان کی جانب سے کانفرنس کے بائیکاٹ کا فیصلہ صرف اور صرف نیٹو کی اُس فضائی کارروائی پر احتجاج کرتے ہوئے کیا گیا ہے، جس میں پاک افغان سرحد پر واقع دو پاکستانی چوکیوں پر موجود چوبیس پاکستانی فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔

جیو ٹی وی کے مشہور پروگرام ’کیپیٹل ٹاک‘ کے میزبان اور ممتاز کالم نگار حامد میر نے کہا کہ پاکستانی فوجی قیادت کے خیال میں یہ حملہ جان بوجھ کر کیا گیا، جس کا مقصد پاکستان سے اپنی مخصوص شرائط منوانا تھا اور بون کانفرنس میں عدم شرکت کا مقصد امریکہ کو یہ پیغام دینا ہے کہ پاکستان اِس دباؤ کو تسلیم نہیں کرے گا۔

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن افغانستان کانفرنس میں شرکت کے لیے بون میں

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن افغانستان کانفرنس میں شرکت کے لیے بون میں

ٹھیک دَس سال پہلے افغانستان میں امریکی پیشقدمی اور طالبان حکومت کے خاتمے کے فوراً بعد دسمبر 2001ء میں بھی بون کے قریب پیٹرزبرگ ہی کے مقام پر ایک بڑی بین الاقوامی افغانستان کانفرنس منعقد کی گئی تھی۔ اُس کانفرنس کے نتیجے میں افغانستان میں ہزارہا غیر ملکی فوجیوں پر مشتمل بین الاقوامی محافظ دستہ آئی سیف تعینات کیا گیا تھا۔ اب دَس برس بعد افغانستان سے ان ہزاروں فوجیوں کے انخلاء کے پروگرام بن رہے ہیں۔

تاہم پاکستان ٹیلی وژن سے وابستہ صحافی سلطان محمود حالی نے کہا کہ پاکستان خطے میں امن کوششوں کے حوالے سے ایک اہم فریق ہے اور بون کانفرنس میں اُس کی غیر موجودگی سے خطّے میں امن کوششوں کو لازمی طور پر دھچکہ پہنچے گا۔

افغان صدر حامد کرزئی علامتی طور پر بون کانفرنس کی میزبانی کر رہے ہیں

افغان صدر حامد کرزئی علامتی طور پر بون کانفرنس کی میزبانی کر رہے ہیں

ٹیلی وژن ہی کے لیے کام کرنے والے ممتاز صحافی شوکت محمود پراچہ نے کہا کہ مغربی دُنیا دَس سال کی جنگی کارروائیوں کے بعد جان گئی ہے کہ اِس تنازعے کا حل جنگ کے ذریعے نہیں بلکہ صرف مذاکرات ہی کے ذریعے ممکن ہے۔

ان صحافیوں کا یہ بھی کہنا تھا کہ جب تک افغانستان میں امریکہ کے فوجی اڈے موجود رہیں گے، وہاں امن قائم نہیں ہو سکے گا۔ مزید یہ کہ پاکستان بلاشبہ چند ایک طالبان عناصر کے ساتھ رابطے میں ہے اور اپنے اثر و رسوخ کو استعمال کرتے ہوئے افغانستان میں دیرپا امن کے سلسلے میں اپنا کردار ادا کر سکتا ہے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس

Audios and videos on the topic