1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بون: ماحولیاتی کانفرنس کا آغاز

اقوامِ متحدہ کی کانفرنس برائے ماحولیاتی تحفظ کا جرمنی کے شہر بون میں آج آغاز ہوگیا ہے۔ ایک سو اسی ممالک کے تقریباً دو ہزار نمائندے اس کانفرنس میں شرکت کر رہے ہیں۔

default

گیارہ روز تک جاری رہنے والی اس کانفرنس کے تمام شرکاء کی دلچسپی کا محور امریکی صدر باراک اوباما کی نئی انتظامیہ اور ماحولیاتی تبدیلی کے بارے میں ان کی پالیسی ہے۔ ایک سو نوّے ممالک سن دو ہزار بارہ تک ماحولیاتی تبدیلی کے مضر اثرات سے نمٹنے کے لیے سبز مکانی گیسوں کے اخراج میں کمی کے حوالے سے متفقہ حکمتِ عملی احتیار کرنے کے لیے کوششیں کر رہے ہیں۔ سن دو ہزار بارہ میں مضر سبز مکانی گیسوں سے متعلق کیوٹو پروٹوکول اختتام پزیر ہورہا ہے اور ایک نئے معاہدے کی ضرورت محسوس کی جا رہی ہے۔ واضح رہے کہ دسمبر میں ڈینمارک کے شہر کوپن ہیگن میں ماحولیاتی تبدیلی سے متعلق سربراہی اجلاس ہوگا۔

Demonstration für Kyoto in Washington

سابق امریکی صدر جارج ڈبلیو بش پر کیوٹو پروٹوکول پر دستخط کرنے کے لیے امریکہ سمیت دنیا بھر کے ماحول پسند افراد کا دباؤ تھا


واضح رہے کہ سابق امریکی صدر جارج ڈبلیو بش کی انتظامیہ کیوٹو پروٹوکول کی حامی نہیں تھی اور ماحولیاتی تبدیلی سے متعلق اس کی پالیسی کو ناقدین رجعت پسندانہ قرار دیتے تھے۔ امریکی صدر باراک اوباما انتخابی مہم کے دوران ماحولیاتی تبدیلی کو انتہائی اہم موضوع قرار دیتے رہے اور اب ماحولیاتی تبدیلی کے ماہرین کی توجّہ کا مرکز اس ضمن میں باراک اوباما کی پالیسی ہے۔

Kanzlerin Angela Merkel in Brüssel EU-Gipfel

جرمن چانسلر انگیلا میرکل کاربن ڈائی آکسائڈ گیسوں کے اخراج میں کمی کے لیے پیش پیش رہی ہیں

بون میں شروع ہونے والی کانفرنس کے ساتھ ہی واشنگٹن میں ہفتے کے روز امریکی صدر اوباما نے ماحولیاتی تبدیلی کے موضوع پر کئی اجلاسوں کا سلسلہ شروع کردیا۔ وائٹ ہاؤس کے مطابق ماحولیاتی تبدیلی پرایک ’میجر اکانومیز فورم‘ تشکیل دیا گیا ہے جس کا مقصد اس حوالے سے سیاسی قیادت پیدا کرنا ہے۔ مذکورہ فورم میں چین، بھارت اور برازیل سمیت سترہ ممالک شامل ہیں اور یہ سابق امریکی صدر جارج بش کے مشورے پر تشکیل دیا گیا تھا۔ باراک اوباما کے صدر بننے کے بعد اب اس حوالے سے عملی اقدامات کی امید ہوچلی ہے۔

Pressekonferenz Barack Obama

ماحول پسندوں کی امیدوں کا مرکز، نئے امریکی صدر باراک اوباما


باراک اوباما کی ماحولیاتی ٹیم کے سربراہ ٹوڈ اسٹیرن بون میں جاری اس کانفرنس میں شرکت کر رہے ہیں اور اس حوالے سے ان کا ایک اہم بیان بھی متوقع ہے جس سے باراک اوباما کی ماحولیات سے متعلق ترجیخات کا تعین کیا جاسکے گا۔

انتخابی مہم کے دوران باراک اوباما نے کاربن ڈائی آکسائڈ کے اخراج میں دو ہزار پچاس تک یورپی یونین کی طرز پر اسی فیصد تک کی کمی کا وعدہ کیا تھا تاہم اب ان کا کہنا ہے کہ سن دو ہزار بیس تک اس حوالے سے امریکہ انیس سو نوّے کی سطح تک پہنچنے کی کوشش کرے گا۔ یورپی یونین دو ہزار بیس تک کاربن ڈائی آکسائڈ کے اخراج بیس تا تیس فیصد کمی کرنے کا اعلان کرچکی ہے۔

اس حوالے سے ابھرتی ہوئی معیشتوں، بھارت، چین اور برازیل کا کردار بھی انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔