1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بنگلہ دیش میں جنگی جرائم کے مرتکب دو افراد کو سزائے موت

ایک بنگلہ دیشی عدالت نے سن 1971 میں اُس وقت کے مغربی پاکستان کے ساتھ جنگ کے دوران جنگی جرائم کا الزام ثابت ہونے پر دو افراد کو سزائے موت سنا دی ہے۔

نیوز ایجنسی ڈی پی اے کے مطابق جنگی جرائم کے خصوصی ٹربیونل نے 66 سالہ مسلم شخص پرودھن اور 64 سالہ سید محمد حسین کو نو ماہ تک جاری رہنے والی جنگ میں قتل اور دیگر مظالم کے جرائم کی بنا پر سزا سنائی۔ وکیل استغاثہ تورین افروز  کا کہنا ہے کہ ان افراد پر عام شہریوں  کو قتل کرنے سمیت چھ الزامات عائد کیے گئے تھے، جو عدالتی کاروائی کے دوران ثابت ہوگئے۔ ان افراد کے بارے میں کہا گیا ہے کہ ان کا تعلق پاکستانی فوج کے مسلح ملیشیا گروہ سے تھا۔

تورین افروز کا کہنا ہے،’’ سزائے موت پھانسی کی صورت میں دی جا سکتی ہے یا پھر ان افراد کو گولیوں کے ذریعے بھی ہلاک کیا جا سکتا ہے۔ اس کا فیصلہ بنگلہ دیش کی حکومت کرے گی۔‘‘ نیوز ایجنسی ڈی پی اے کے مطابق مسلم پرودھن پولیس کی تحویل میں ہے جب کہ سید محمد حسین مفرور ہے۔

Mir Quasem Ali (STRINGER/AFP/Getty Images)

پھانسی دیے جانے والے افراد میں جماعت اسلامی کے میر قاسم علی بھی شامل تھے

بنگلہ دیش میں اب تک مخالف سیاسی جماعتوں کے چھ سیاست دانوں کو پھانسی دی جا چکی ہے۔ ان  میں سے زیادہ تر کا تعلق جماعت اسلامی سے تھا۔ ملک کی وزیر اعظم شیخ حسینہ نے خصوصی ٹریبیونل کو سن 2010 میں تشکیل دیا تھا۔ پھانسی دیے جانے والے افراد میں جماعت اسلامی کے سربراہ مطیع الرحمان نظامی، عبدالقادر مولا، علی محمد مجید، میر قاسم علی اور صلاح الدین قادر چوہدری شامل ہیں۔

آج کا بنگلہ دیش جنوبی ایشیا کی ایک مسلم اکثریتی آبادی والی ریاست ہے، جو 1971ء تک پاکستان کا حصہ تھا اور مشرقی پاکستان کہلاتا تھا۔ چار عشرے پہلے کے خونریز واقعات کے نتیجے میں بنگلہ دیش کا آزاد ریاستی وجود عمل میں آیا تھا۔ 70 کے عشرے کے ان خونریز واقعات کو بنگلہ دیش میں آزادی کی جنگ کا نام دیا جاتا ہے۔