1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بنگلہ دیش: جماعت اسلامی کے امير کو پھانسی دے دی گئی

بنگلہ دیش میں ملک کی سب سے بڑی اسلام پسند جماعت کے سربراہ مطیع الرحمان نظامی کو جنگی جرائم کے ارتکاب کے سبب پھانسی دے دی گئی۔

بنگلہ دیش کی خصوصی ٹرائيبیونل نے گزشتہ برس نسل کشی، قتل، تشدد اور ریپ کے 16 الزامات کے تحت جماعت اسلامی کے امیر مطیع الرحمان کو سزائے موت دینے کا حکم دیا تھا۔ ان کی پھانسی کی سزا پر عمل درآمد کی تصدیق کرتے ہوئے بنگلہ دیش کے وزیر قانون نے کہا کہ جماعت اسلامی کے امیر مطیع الرحمان نظامی کو1971ء کی جنگ آزادی کے دوران جنگی جرائم کے ارتکاب پر پھانسی دے دی گئی ہے۔

بنگلہ دیش کے وزیر داخلہ اسد الزمان خان نے اپنے سرکاری بیان میں کہا کہ مطیع الرحمان کو منگل اور بُدھ کی درميانی شب بارہ بج کر دس منٹ پر ڈھاکہ سينٹرل جیل کے اندر تختہ دار پر لٹکا دیا گیا۔ اس موقع پر جیل کے باہر سیاسی اور سماجی کارکن جمع تھے۔ جیل سپرینٹنڈنٹ جہانگیر حسین کے مطابق نظامی کی لاش بعد ازاں اُن کے گھر والوں کے حوالے کر دی گئی۔

نظامی کی پھانسی سے کچھ گھنٹے قبل اُن کے لواحقین نے جیل میں اُن سے آخری ملاقات کی تھی۔ بتایا گیا ہے جماعت اسلامی کے امیر نظامی نے اپنی موت کی سزا پر صدارتی معافی طلب کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے بنگلہ دیش کی سپریم کورٹ نے مطیع الرحمان نظامی کو سنائی گئی سزائے موت برقرار رکھنے کے فیصلے پر نظرِ ثانی کی اپیل مسترد کر دی تھی۔ اس کے بعد سے ملک میں حالات خاصے کشیدہ نظر آ رہے تھے اور جماعت اسلامی پارٹی اور اس کے سابق امیر کے حامیوں کی طرف سے مظاہروں اور شدید رد عمل کے خدشات بھی بڑھ گئے تھے۔

نظامی کی پھانسی سے کچھ گھنٹے قبل اُن کے لواحقین نے جیل میں اُن سے آخری ملاقات کی تھی

نظامی کی پھانسی سے کچھ گھنٹے قبل اُن کے لواحقین نے جیل میں اُن سے آخری ملاقات کی تھی

منگل سے ہی ڈھاکہ سمیت ملک بھر میں سکیورٹی ہائی الرٹ کر دی گئی تھی۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ حکومت جنگی جرائم کے ٹرائيبیونل کو اپنے سیاسی مخالفین کو نشانہ بنانے کے لیے استعمال کر رہی ہے۔ اس کے علاوہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ’ہیومن رائٹس واچ‘ بھی اس عدالت کے طریقۂ کار کو بین الاقوامی معیارات کے مطابق نہ ہونے سے متعلق اپنے اعتراضات کا اظہار کر چُکی ہے۔

2010 ء میں قائم ہونے والے جنگی جرائم کے ٹريبیونل کی طرف سے مطیع الرحمان نظامی کے علاوہ جماعت اسلامی کے دیگر اہم رہنماؤں کو، جن میں عبدالقادر ملّا اور قمر الزماں سمیت کئی افراد شامل ہیں، پھانسی دی جا چکی ہے۔

مقامی ذرائع کے مطابق مطیع الرحمان کے گھر والوں نے اُن کی پھانسی سے پہلے آخری ملاقات کے بعد میڈیا کے ساتھ بات چیت سے انکار کر دیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ مطیع الرحمان نظامی کو ملک کے شمالی حصے میں ان کے آبائی گاؤں میں دفنا دیا گیا ہے۔