1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بنگلہ دیشی پولیس قومی ٹیم کے فاسٹ بولر شہادت کی تلاش میں

بنگلہ دیش کی قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی شہادت حسین اور ان کی اہلیہ کو اپنی گیارہ سالہ ملازمہ پر مبینہ تشدد کے الزام کا سامنا ہے۔ پولیس اب اس فاسٹ بولر اور ان کی اہلیہ کو گرفتار کرنا چاہتی ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے بتایا ہے کہ بنگلہ دیشی دارالحکومت ڈھاکا کی پولیس نے کہا ہے کہ وہ قومی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی شہادت حسین اور ان کی اہلیہ کو حراست میں لے کر پوچھ گچھ کرنا چاہتی ہے۔ ان دونوں میاں بیوی پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انہوں نے اپنے گھر پر کام کرنے والی ایک کمسن ملازمہ کو تشدد کا نشانہ بنایا۔

پولیس نے بتایا کہ ڈھاکا میں اس فاسٹ بولر کے گھر کے باہر ہی اس ملازمہ کو زخمی حالت میں دیکھنے کے بعد اتوار کی رات شہادت حسین کے گھر پر چھاپہ بھی مارا گیا۔ پولیس انسپکٹر انور حسین نے بتایا، ’’اس لڑکی کی آنکھوں اور جسم کے دیگر حصوں پر تشدد کے نشانات دیکھے گئے۔ جب ہم وہاں اس کی مدد کو پہنچے، تو وہ رو رہی تھی۔‘‘

انور حسین کے مطابق اس لڑکی نے پولیس کو بتایا کہ وہ کرکٹر شہادت حسین کے گھر میں بطور ملازمہ کام کرتی ہے۔ اس لڑکی نے الزام عائد کیا کہ شہادت اور ان کی اہلیہ نے اسے تشدد کا نشانہ بنایا۔ گیارہ سالہ محفوظہ اختر ہیپی نے ڈھاکا کے ایک پرائیویٹ نیوز چینل کو بھی بتایا کہ اسے بری طرح مارا پیٹا گیا۔

Flash-Galerie Cricket Weltmeisterschaft 2011

شہادت حسین نے بنگلہ دیشی قومی کرکٹ ٹیم کی اڑتیس ٹیسٹ میچوں اور اکاون ایک روزہ میچوں میں نمائندگی کی ہے

بتایا گیا ہے کہ پولیس نے اس لڑکی کو ڈھاکا کے ایک ہسپتال میں منتقل کر دیا ہے تاکہ اسے فوری طور پر طبی امداد مہیا کی جا سکے۔ پولیس کے مطابق اتوار کی رات کو شہادت کے گھر پر چھاپہ مارا گیا لیکن اس وقت گھر میں کوئی موجود نہیں تھا۔ پولیس کے مطابق آج بروز پیر کوشش کی جائے گی کہ شہادت اور ان کی اہلیہ کے وارنٹ گرفتاری حاصل کر لیے جائیں۔

شہادت حسین نے بنگلہ دیشی قومی کرکٹ ٹیم کی اڑتیس ٹیسٹ میچوں اور اکاون ایک روزہ میچوں میں نمائندگی کی ہے۔ انجری کے باعث انہیں بھارت اور جنوبی افریقہ کے خلاف حالیہ ہوم سیریز میں شامل نہیں کیا گیا تھا۔ شہادت پاکستان کے خلاف مئی میں کھیلے گئے ایک ٹیسٹ میچ میں گھٹنے کی تکلیف کا شکار ہو گئے تھے، جس کے بعد ڈاکٹروں نے انہیں آرام کا مشورہ دیا تھا۔