1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بنکاک میں حالات قدرے پرامن مگر تناؤ برقرار

تھائی پولیس بنکاک میں مظاہرین کی تلاش میں چھاپے مار رہی ہے۔ بنکاک میں مظاہرین کی جانب سے متعدد مقامات پر املاک کو نذر آتش کرنے کے واقعات کے بعد فوج نے کرفیو کی مدت میں تین روز کی توسیع کا اعلان کیا ہے۔

default

ریڈشرٹس کے اعلیٰ رہنماؤں نے مظاہرین سے اپیل کی ہے کہ وہ پرتشدد کارروائیوں سے باز رہیں اور ان کا حصہ نہ بنیں۔ مظاہرین کی بڑی تعداد کے ہتھیار ڈالنے اور مظاہروں کے خاتمے کے اعلان کے بعد بنکاک شہر کے حالات معمول پر آنا شروع ہو گئے ہیں تاہم ابھی شہر میں کشیدگی کی فضا موجود ہے۔

Unruhe und Gewalt in Thailand Flash-Galerie

حالات کی خرابی کے باعث فوج نے کرفیو کی مدت میں توسیع کر دی

گزشتہ چھ ہفتوں سے بنکاک شہر کے اہم کاروباری مرکزی علاقے سمیت متعدد مقامات پر جمع ہونے والے مظاہرین کے خلاف سخت فوجی آپریشن کے بعد ریڈ شرٹ مظاہرین نے احتجاج ختم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ بدھ کے روز سے جاری اس سخت فوجی آپریشن میں حکومتی ذرائع کے مطابق مجموعی طور پر نو افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

ریڈ شرٹ مظاہرین کے ایک رہنما ویرا موزیکاپونگ نے جمعرات کے روز سیکیورٹی فورسز کے سامنے خود کو گرفتاری کے لئے پیش کر دیا۔ انہوں نے گرفتاری کے وقت کہا کہ جمہوریت کو طاقت کے زور پر دبایا نہیں جا سکتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ بہتری کی بنیاد عدم تشدد پر ہی قائم ہوتی ہے۔

Unruhe und Gewalt in Thailand

مظاہرین نے متعدد املاک کو نذر آتش کر دیا

اس سے قبل فوج نے بنکاک میں ایک بدھ مندر میں پناہ لئے ہوئے مظاہرین کے خلاف آپریشن کیا۔ اس کارروائی کے دوران مندر میں جمع پندرہ سو مظاہرین کو وہاں سے نکال دیا گیا جبکہ بعد میں مندر کے باغ سے چھ افراد کی لاشیںبرآمد ہوئیں۔

دوسری جانب سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ بنکاک میں آپریشن کے بعد حالات کا معمول کی جانب لوٹنا صرف ایک عارضی صورتحال ہے اور مستقبل قریب میں یہ حالات اسی طرح معمول پر نہیں رہیں گے بلکہ احتجاج مزید سخت اور مزید پرتشدد صورت میں سامنے آسکتا ہے۔

رپورٹ: عاطف توقیر / خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM