1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بنکاک اور نواحی علاقوں میں ایمرجنسی نافذ

گزشتہ روز پتایا کے مقام پر مظاہروں اور نتیجتاً آسیان اجلاس کے ملتوی ہونے کے بعد تھائی حکومت نے پتایا میں کچھ دیر کے لیے ایمرجنسی نافذ کردی تھی۔ اب دارلحکومت بنکاک اور اس کے نواحی علاقوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔

default

مظاہرین نے حکومت کو پریشان کیے رکھا ہے

اس سے قبل سابق وزیرِ اعظم تھاکشن شناواترا کے حامی مظاہرین نے وزارتِ داخلہ کی عمارت پر دھاوا بول دیا جہاں سے وزیرِ اعظم ابھیسیت ویجاجیوا کو بزریعہ گاڑی باہر نکالا گیا۔ تھائی افواج نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے ہوائی فائرنگ بھی کی۔ تھائی وزیرِ اعظم نے کہا ہے کہ مظاہرین سے نمٹنے کے لیے سخت ترین اقدامات کیے جاسکتے ہیں۔ ایمرجنسی کے بعد پانچ افراد سے زیادہ کے اجتماع پر پابندی اورمیڈیا پر قدغن کے علاوہ فوج کو طلب کرلیا گیا ہے۔

Thailand Proteste

حکومت مخالف مظاہریبن نے آسیان اجلاس کے التوا کو اپنی کامیابی قرار دیا ہے

تھائی پولیس نے مظاہرین کے رہنماؤں کی بڑے پیمانے پر گرفتاریاں کی ہیں اور وزیرِ اعظم ابھیسیت ویجا جیوا نے کہا کہ کہ قانون کو ہاتھ میں لینے والوں کے خلاف کارروائی کی جائی گی۔

گزشتہ روز آسیان اجلاس ملتوی ہونے کے بعد آسیان رہنماؤں کو ہیلی کاپٹر کے زریعے اجلاس کی جگہ سے باہر نکال لیا گیا۔ اس سے قبل تھائی وزیرِ اعظم ابھی سیت ویجاجیوا نے کہا تھا کہ حکومت کی اولّین تریجح آسیان اجلاس میں شرکت کے لیے آئے رہنماؤں کو بحفاظت ان کے ممالک واپس بھجوانا ہے۔

Asean Proteste Thailand

ہفتے کے روز ایک ہزار کے قریب مظاہرین آسیان اجلاس کی جگہ دھاوا بولنے میں کامیاب ہوگئے


سرخ قمیصوں میں ملبوس ہزاروں مظاہرین سابق تھائی وزیرِ اعظم تھاکشن شناواترا کے حامی تھے۔ اجلاس کے دوران یہ مظاہرین اجلاس کی جگہ داخل ہونے میں کامیاب ہوگئے جس کے بعد حکومت نے اجلاس کو ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا۔

اجلاس سے قبل کئی ماہ تک تھائی حکّام نے سیکیورٹی کے سخت ترین انتظامات کیے تھے تاہم مظاہرین نے ان کو درہم برہم کردیا۔ حکومتی ترجمان کے مطابق مظاہرے اس قدر ’پرتشدّد‘ تھے کہ اجلاس جاری رکھنا ناممکن تھا۔

Abhisit Vejjajiva

مظاہرین وزیرِ اعظم ابھسیت ویجاجیوا کو فوج کا کٹھ پتلی وزیرِاعظم قراردیتے ہیں اور ان کے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں


سابق تھائی وزیرِ اعظم تھاکشن شناواترا کے حامی موجودہ تھائی وزیرِ اعظم کو فوج کی جانب سے ایک کٹھ پتلی وزیرِ اعظم قرار دیتے ہیں۔

مذکورہ آسیان اجلاس عالمی اقتصادی بحران کے تناظر میں جنوب مشرقی ایشیائی ممالک کی اس تنظیم کا ایشیا کی سطح پر بحران سے مقابلے کے لےی حکمتِ عملی تیّار کرنے کے لیے منعقد کیا جا رہا تھا۔

Asean Gipfel in Thailand

آسیان اجلاس عالمی اقتصادی بحران کے تناظر میں جنوب مشرقی ایشیائی ممالک کی اس تنظیم کا ایشیا کی سطح پر بحران سے مقابلے کے لےی حکمتِ عملی تیّار کرنے کے لیے منعقد کیا جا رہا تھ

لندن میں دنیا کی مضبوط معیشتوں یعنی گروپ ٹونٹی کی سربراہی کانفرنس کے تقریبا ایک ہفتہ بعد تھائی لینڈ میں آسیان کی سربراہی کانفرنس میں موجودہ عالمی معاشی بحران کے خلاف اقدامات سے متعلق مشورے کئے جانے تھے۔ سربراہی اجلاس میں شریک ملکوں کے مابین اس کانفرنس سے قبل ہی 120 بلین ڈالر مالیت کے ایک امدادی پیکج پراتفاق رائے ہو گیا تھا جس کے ذریعے خطے میں اقتصادی بحران کے اثرات کا مقابلہ کیا جائے گا۔

ہفتے کے روز ہزاروں کی تعداد میں مظاہرین پولیس کی جانب کھڑی کی گئی رکاوٹیں عبور کرکے اس ہوٹل تک پہنچے میں کامیاب ہوگئے جہاں اس کانفرنس کا انعقاد کیا جارہا تھا۔ تھائی لینڈ کے سیکیورٹی حکام کا کہنا تھا کہ کانفرنس پروگرام کے مطابق جاری رہے گی اور وہ مظاہرین کو وہاں سے ہٹنے کے لئے کہا جارہا ہے لیکن اگر انہوں نے بات نہیں مانی تو مجبورا انتظامیہ کو کارروائی کرنا پڑے گی۔

سابق وزیر اعظم تھاکسن شنا واترا کے حامی مظاہرین کا کہنا تھا کہ وہ اس وقت تک واپس نہیں جائیں گے جب تک موجودہ وزیر اعظم اپنے عہدے سے استعفی نہیں دیتے۔ تاہم ملک میں جاری مظاہروں کے رد عمل میں تھائی لینڈ کے وزیراعظم ابی سیت ویجا جیوا نے کہا ہے کہ وہ استعفیٰ نہیں دیں گے اور حکومت پرتشدد احتجاج کو روکنے کے لئے بھرپور اقدامات کرے گی۔