1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بشار الاسد کا حال قذافی جیسا ہو گا، مقتدیٰ الصدر کا انتباہ

عراق کے شیعہ مذہبی رہنما مقتدیٰ الصدر نے شامی صدر بشار الاسد کو متنبہ کیا ہے کہ اگر انہوں نے اقتدار نہ چھوڑا تو ان کا انجام بھی لیبیا کے سابق سربراہ معمر قذافی جیسا ہو گا۔

عراقی مذہبی رہنما مقتدیٰ الصدر نے گزشتہ ہفتے شامی حکومت کی جانب سے عام شہریوں کے خلاف مشتبہ طور پر خوفناک کیمیائی حملے کی سخت مذمت کی تھی۔ اس طرح وہ پہلے ایسے شیعہ مذہبی رہنما ہیں جو شامی صدر کی قانونی حیثیت کو چیلنج کرتے ہیں۔ مقتدیٰ الصدر کی طرف سے نیا بیان آج منگل 11 اپریل کو جاری کیا گیا ہے۔

اس بیان کے مطابق، ’’میں نے ان (بشار الاسد) پر زور دیا ہے کہ وہ مناما کی عزت کی خاطر اپنا اقتدار چھوڑ دیں اور قذافی جیسے انجام سے بچ جائیں۔‘‘ اس بیان میں مقتدیٰ الصدر نے اُس مغرب مخالف اتحاد کا حوالہ دیا ہے جس میں لبنان کی حزب اللہ، ایران اور شام شریک ہیں۔

لیبیا کے سابق رہنما معمر القذافی کو 42 سالہ اقتدار کے بعد سرت کی طرف فرار ہوتے ہوئے نیٹو کے حمایت یافتہ باغیوں نے 2011ء میں گرفتار کر کے تشدد کر کے ہلاک کر دیا گیا تھا۔ سرت قذافی کا آبائی شہر تھا۔

شامی باغیوں کے قبضے والے شہر خان شیخون میں چار اپریل کو ہونے والے کیمیائی حملے کی ذمہ داری شامی فورسز پر عائد کی جاتی ہے جس کے نتیجے میں 87 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ تاہم شامی حکومت اس حملے سے انکار کرتی ہے۔ کیمیائی ہتھیاروں کے حملے کے بعد امریکی حکومت نے شام کی شریعت ایئربیس پر 59 کروز میزائل داغے تھے جس کا مقصد دمشق حکومت کو سزا دینا تھا۔

Syrien Luftwaffenstützpunkt Shairat nach US-Angriff (picture-alliance/Sputnik/M. Voskresenskiy )

امریکی حکومت نے شام کی شریعت ایئربیس پر 59 کروز میزائل داغے تھے

مقتدیٰ الصدر  اُس ملیشیا کے سربراہ ہیں جو عراق میں امریکی قبضے کے خلاف برسرپیکار رہی۔ انہوں نے امریکی میزائل حملوں کی بھی مذمت کی ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ شام کے تنازعے میں ملوث تمام غیر ملکی طاقتیں شام سے نکل جائیں۔

مقتدیٰ الصدر کی طرف سے ایسا ہی انتباہ یمن کے صدر عبد الربہ منصور ہادی اور بحرین کے شاہ حماد کے لیے بھی جاری کیا گیا ہے۔ اپنے بیان میں ان کا کہنا تھا، ’’میں نے صرف بشارالاسد کے ہی استعفے کا مطالبہ نہیں کیا بلکہ میں پہلے ہی عبدالربہ اور بحرین کے حکمران سے بھی ایسے ہی مطالبے کر چکا ہوں جو اپنے لوگوں کو دبانے میں مصروف ہیں۔‘‘