1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بشار الاسد اپنے لوگوں کا قتل عام بند کریں، بان کی مون

شام میں شہریوں کے خلاف سکیورٹی کریک ڈاؤن پر عالمی دباؤ میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ اب اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے شام کے صدر بشار الاسد پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے لوگوں کا قتل عام بند کر دیں۔

default

شام کے صدر بشارالاسد

بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ میں منگل کو صحافیوں سے باتیں کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے کہا کہ بشار الاسد کو عرب لیگ کے ساتھ طے پانے والے معاہدے کو نافذ کرنا چاہیے، تاکہ آٹھ ماہ سے جاری شورش کا پرامن حل نکالا جا سکے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق بان کی مون کا یہ بیان ایسے وقت سامنے آیا ہے کہ جب صرف منگل کو ہی شام میں سکیورٹی فورسز کے بدترین کریک ڈاؤن میں 70 سے زائد افراد ہلاک ہوئے۔

بان کی مون نے کہا: ’’میں عرب لیگ کے رہنماؤں کے ساتھ اس معاملے پر مسلسل بات کرتا رہا ہوں۔‘‘

ترکی نے بھی شام پر زور دیا ہے کہ اپنے شہریوں کے خلاف کارروائیاں بند کرے۔ ترک وزیر اعظم رجب طیب ایردوان کے مطابق انہیں اس بات کی اُمید نہیں رہی کہ شام کے رہنما (بشار الاسد) اپنا اقتدار بچانے کے لیے خونریز کارروائیاں بند کریں گے۔

اُدھر گلف کوآپریشن کونسل (جی سی سی) نے شام کی جانب سے ہنگامی اجلاس بلانے کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

UNO General Sekretär Ban Ki-moon

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون

جی سی سی کے سیکرٹری جنرل عبدالطیف الزینی کا کہنا ہے کہ اس وقت عرب اجلاس کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ عرب لیگ شام کے بحران پر مسلسل نظر رکھے ہوئے ہے۔

دمشق حکومت نے بھی منگل کو رات گئے یہ اعلان کیا کہ وہ عرب۔ترک فورم میں شریک نہیں ہو گی نہ ہی بدھ کو مراکش کے دارالحکومت رباط میں شروع ہونے والے عرب لیگ کے وزارتی اجلاس میں حصہ لے گی۔

شام کے سرکاری خبر رساں ادارے صنا نے دمشق حکومت کے ایک اہلکار کے حوالے سے بتایا کہ عرب لیگ کی جانب سے شام کی رکنیت معطل کیے جانے کے فیصلے کے تناظر میں ان دونوں میٹنگز میں شریک نہ ہونے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ منگل کو شام میں ایک ہزار سے زائد قیدیوں کو رہا بھی کیا گیا ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل / خبر رساں ادارے

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس