1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بریگزٹ اور یورپی سمٹ: پریشانی کی بجائے سوچ بچار پر اتفاق

بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں منعقدہ یورپی یونین کی دو روزہ سربراہ کانفرنس اس اتفاق رائے کے ساتھ ختم ہو گئی ہے کہ بریگزٹ پر عجلت میں کچھ کرنے کی بجائے پہلے ستمبر کے مہینے تک حالات پر غور و فکر کیا جائے گا۔

EU Gipfel Merkel nach dem Abschluss

جرمن چانسلر انگیلا میرکل برسلز میں دو روزہ یورپی یونین سمٹ کے بعد روانہ ہو رہی ہیں

منگل کو یورپی یونین کی اس سربراہ کانفرنس کے پہلے روز برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون بھی اس میں شریک ہوئے۔ کیمرون نے ستائیس رکن ملکوں کو برطانیہ میں ہونے والے ریفرنڈم کی تفصیلات سے آگاہ کرنے کے ساتھ ساتھ بریگزٹ سے متعلق باقاعدہ کارروائی کے آغاز کے لیے کم از کم نو ستمبر تک کی مہلت بھی حاصل کر لی، جب اُن کے جانشین کی نامزدگی عمل میں آئے گی۔

اس کانفرنس کے دوران برطانیہ کو یقیناً اس امر کا احساس ہوا ہو گا کہ اب اُس کے لیے مستقبل میں حالات کیا صورت اختیار کرنے والے ہیں کیونکہ کل دوسرے روز ستائیس رکن ممالک کے رہنماؤں نے کیمرون کے بغیر ہی اپنا اجلاس منعقد کیا۔ گزشتہ چالیس برسوں میں کسی برطانوی نمائندے کے بغیر سمٹ کے انعقاد کا یہ پہلا موقع تھا۔ ساتھ ہی ان ستائیس ممالک نے لندن حکومت کو خبردار کیا کہ اب ’حقوق اور فرائض‘ کے معاملے میں برطانیہ کو ایک ’تیسرا ملک‘ سمجھا جائے گا اور یہ کہ اگر وہ یونین کے فری ٹریڈ زون تک رسائی کا خواہاں ہے، تو پھر اُسے یونین میں داخل ہونے والے مہاجرین کو بھی اپنے ہاں قبول کرنا ہو گا۔

ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یورپی یونین کے صدر ڈونلڈ ٹُسک نے کہا کہ اگر برطانیہ آئندہ بھی یونین کی پانچ سو ملین صارفین پر مشتمل سنگل مارکیٹ تک رسائی کا خواہاں ہے، تو پھر اُسے نقل و حمل کی آزادی کو بھی تسلیم کرنا ہو گا۔ ٹُسک کا یہ موقف برطانیہ کے یونین سے اخراج کے حامی برطانوی حلقوں کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے، جنہوں نے یہ وعدہ کیا تھا کہ یونین سے بڑی تعداد میں پناہ کے متلاشیوں کے برطانیہ میں داخلے کو تو محدود کر دیا جائے گا البتہ برطانوی کمپنیاں بدستور آسانی کے ساتھ براعظم یورپ میں اپنا ساز و سامان اور خدمات فروخت کر سکیں گی۔

EU Gipfel Abschluss PK Juncker und Tusk

سمٹ کے بعد یورپی کمیشن کے صدر ژاں کلود یُنکر (بائیں) اور یورپی یونین کے صدر ڈونلڈ ٹُسک (دائیں) ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے

جرمن چانسلر بھی کہہ چکی ہیں کہ یونین چھوڑنے کے بعد برطانیہ یہ توقع نہیں رکھ سکتا کہ اُسے خصوصی مراعات دی جائیں گی۔ یہ خدشات بھی ہیں کہ دیگر رکن ملکوں میں بھی یونین کی بڑھتی ہوئی مخالفت کی موجودگی میں برطانیہ کو خصوصی مراعات دینے سے مزید رکن ملکوں کے یونین سے اخراج کے رجحان میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

اسی دوران برطانیہ میں کیمرون کی جانشینی کی دوڑ میں لندن کے سابق میئر بورس جانسن کے ساتھ ساتھ اب خاتون وزیر داخلہ تھیریسا مے بھی شامل ہو گئی ہیں جبکہ اپوزیشن لیبر پارٹی کے سربراہ جیریمی کوربن پر اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کے لیے دباؤ بڑھ رہا ہے۔