1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

برلن میں بین الااقوامی ادبی و ثقافتی میلہ

نو ستمبر کو یہ ادبی میلہ نامور بھارتی ادیبہ ارون دھتی رائے کی افتتاحی تقریر سے شروع ہوا تھا۔ اِس بار کے میلے کو ایک مرکزی عنوان ’عرب دُنیا‘ سے متعلق تھا۔

default

اس موقع میں شعوری طور پر یہ کوشش کی گئی کہ یہ میلہ ایک ادبی اور ثقافتی اجتماع سے ذرا آگے بڑھ کر سیاسی بحث مباحثے کے ایک فورم کی بھی شکل اختیار کر جائے۔ مجموعی طور پر تین سو اجتماعات کا اہتمام کیا گیا تھا، جن میں سے اڑتیس کا تعلق صرف اور صرف عربی زبان و ادب سے تھا۔ میلے میں موجود تقریباً چالیس عرب ادیبوں کی بڑی تعداد اپنے خطے میں تو جانی پہچانی ہے لیکن چونکہ اُن کی تحریروں کے جرمن تراجم دستیاب نہیں ہیں، اِس لئے جرمنی میں کم ہی لوگ اُن کے نام سے واقف ہیں۔

Arundhati Roy

نامور بھارتی مصنفہ اور سماجی کارکن ارون دھٹی رائے

مصر کی وادیء نیل سے آئی ہوئی نوجوان ادیبہ منصورہ عزالدین نے اپنی کتاب میں سے اقتباسات پڑھ کر سنایا۔ اُنہیں سننے کے لئے ہال میں اَسی کے قریب حاضرین موجود تھے۔ ساتھ ساتھ اُن کے متن کا عربی ترجمہ بھی پڑھ کر سنایا جا رہا تھا۔

ان عرب ادیبوں میں مصر کے اکیاون سالہ یوسف زِیدان بھی شامل تھے، جنہیں اِس سال مارچ میں عرب فکشن کے پچاس ہزار ڈالر مالیت کے بین الاقوامی انعام ’’عرب بکر پرائز‘‘سے نوازا گیا ہے۔ اپنے شاندار ناول ’’ازازیل‘‘ میں زِیدان نے پانچویں صدی میں مسیحی کلیسا کی عدم رواداری اور جبر و تشدد کو موضوع بنایا ہے۔

اِس میلے میں شرکت کرنے والے بین الاقوامی شہرت کے حامل شاعروں اور ادیبوں میں جنوبی افریقہ کی نوبل انعام یافتہ ادیبہ نادین گورڈائمر، آئر لینڈ کے بیسٹ سیلر ادیب کولم میککین اور برطانیہ کے حنیف قریشی بھی شامل تھے۔ منتظمین کے مطابق اِس بار اِس میلے کے مختلف اجتماعات میں شریک ہونے والوں کی تعداد اٹھائیس ہزار سے زیادہ رہی۔

میلے کے ڈائریکٹراُلرِش شرائبر بتاتے ہیں: ’’جو لوگ محض ٹیلی فون ڈائریکٹری تک محدود نہیں ہیں بلکہ واقعی مطالعہ کرتے ہیں، مَیں اُنہیں درحقیقت متجسس لوگ کہوں گا، جو دوسرے لوگوں کی کہانیوں میں دلچسپی لیتے ہیں۔ اِس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ وہ اُن ادیبوں سے واقف نہ ہوں۔ وہ اُن سے ملنا اور اُن کے لکھے کو جاننا چاہتے ہیں اور اِسی لئے یہاں آتے ہیں۔‘‘

جرمن شائقین کی جانب سے جس طرح سے غیر ملکی بالخصوص عرب ادیبوں کی پذیرائی کی گئی اور جس طرح دلچسپی کے ساتھ اُن کی تخلیقات کے اقتباسات سنے گئے، اُس کا ذکر کرتے ہوئے فلسطینی ادیب الا حلیہل (Alla Hlehel) نے کہا: ’’سچ بات تو یہ ہے کہ ہمارا یہاں شاندار استقبال ہوا ہے۔ میرے لئے اِس قدر دلچسپی باعثِ حیرت ہے۔ میرے خیال میں یہ ایک صحتمند رجحان ہے کہ میڈیا میں سیاست اور عربوں کے بارے میں جو کچھ بتایا جاتا ہے، جرمن شائقین اُس سے مختلف اور زیادہ جاننے کے خواہاں ہیں۔‘‘

اِس میلے کے اختتام پر بتایا گیا کہ برلن میں یہی انٹرنیٹنل لٹریچر فیسٹیول آئندہ برس بھی سجے گا اور تب اِس کا مرکزی موضوع ہوگا، مشرقی یورپ۔ اختتامی پریس کانفرنس میں یہ بھی بتایا گیا کہ برلن کا یہ ادبی میلہ اِس سال بے حد کامیاب رہا۔ ساتھ ہی اِس بات پر خوشی کا اظہار بھی کیا گیا کہ بین الاقوامی سطح پر اِس اجتماع کی اہمیت اور ساکھ میں مزید اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: انعام حسن

Audios and videos on the topic