1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

برلن حملے کے باوجود میرکل کی حمایت میں اضافہ

جرمنی میں ایک سروے کے مطابق گزشتہ برس دسمبر میں برلن کی کرسمس مارکیٹ میں ہونے والے دہشت گردانہ حملے کے باوجود چانسلر میرکل کے قدامت پسند بلاک کی حمایت میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

CDU Parteitag in Essen - Merkel (Reuters/K. Pfaffenbach)

 میرکل حکومت نے برلن ٹرک حملے کے تناظر میں نئے سیکیورٹی اقدامات تجویز کیے ہیں

جرمنی کے نشریاتی ادارے اے آر ڈی کی جانب سے کرائے جانے والے ایک حالیہ سروے کے نتائج یہ ظاہر کرتے ہیں کہ میرکل کی قدامت پسند جماعت سی ڈی یو اور اُن کی حلیف جماعت سی ایس یو کی حمایت میں دو پوائنٹس کا اضافہ ہوا ہے۔

یہ سروے 1،505 جرمن باشندوں کی آراء پر مبنی تھا، جو 2 جنوری سے چار جنوری تک جمع کی گئیں۔ گزشتہ ماہ کی انیس تاریخ کو برلن کی ایک کرسمس مارکیٹ میں تیونس سے تعلق رکھنے والے ایک ایسے مہاجر نے ٹرک کو وہاں موجود لوگوں پر چڑھا دیا تھا، جس کی پناہ کی درخواست مسترد کر دی گئی تھی۔ یہ حملہ آور جائے وقوعہ سے بھاگ نکلنے میں کامیاب ہو گیا تھا تاہم 4 روز بعد اٹلی کے شہر میلان میں پولیس کے ہاتھوں ہلاک ہو گیا۔

پول کے نتائج کے مطابق  بائیں بازو سے تعلق رکھنے والی  میرکل کی جونئیر اتحادی پارٹی  ایس پی ڈی کی حمایت میں مقابلتاﹰ دو پوائنٹ گراوٹ دیکھنے میں آئی ہے۔ دوسری جانب مہاجرت مخالف پارٹی اے ایف ڈی کی حمایت میں گزشتہ ماہ کے مقابلے میں دو پوائنٹس کا اضافہ ہوا ہے۔

Deutschland Mitglied der Partei AfD in Mainz (picture-alliance/dpa/F. von Erichsen)

مہاجرت مخالف پارٹی اے ایف ڈی کی حمایت میں گزشتہ ماہ کے مقابلے میں دو پوائنٹس کا اضافہ ہوا ہے

 میرکل حکومت نے برلن ٹرک حملے کے تناظر میں نئے سیکیورٹی اقدامات تجویز کیے ہیں۔ رواں برس ہونے والے انتخابات میں 62 سالہ چانسلر میرکل چوتھی مدت کے لیے الیکشن لڑنے کا اعلان کر چکی ہیں۔ جرمن نشریاتی ادارے اے آر ڈی کے حالیہ سروے کے مطابق 73 فیصد افراد برلن حملے کے باوجود خود کو ملک میں غیر محفوظ تصور نہیں کرتے۔ تاہم  تارکین وطن مخالف دائیں بازو کی عوامیت پسند جماعت اے ایف ڈی کے حمایتی اس سے مستثنیٰ ہیں۔ اُن میں سے دو تہائی کا کہنا تھا کہ وہ خود کو محفوظ نہیں سمجھتے۔

اس  سروے کے مطابق رواں برس ستمبر میں ہونے والے وفاقی انتخابات میں مہاجرت پر حکومتی پالیسی ووٹرز کے لیے سب سے اہم مسئلہ ہو گا۔ یاد رہے کہ میرکل کی سیاسی جماعت کرسچن ڈیمو کریٹک یونین کو گزشتہ برس جرمنی کی دو ریاستوں میں ہونے والے انتخابات میں ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا تھا جہاں ووٹرز نے میرکل کی مہاجرین کے لیے جرمنی میں آزادانہ داخلے کی پالیسی کو مسترد کرتے ہوئے مہاجر مخالف جماعت اے ایف ڈی کو ووٹ دیے تھے۔ میرکل کی کرسچن ڈیموکریٹک پارٹی کی ہم خیال جماعت کرسچن سوشل یونین کی جانب سے اِس شکست پر جرمن چانسلر کی مہاجرین کے لیے پالیسی کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

DW.COM