1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

برلن حملہ: انیس عامری کا ویڈیو پیغام منظر عام پر آ گیا

برلن حملے کے مشتبہ ملزم انیس العامری کی اٹلی کے شہر میلان کے قریب پولیس کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں ہلاکت کے چند ہی گھنٹے بعد ایک ویڈیو منظر عام پر آئی ہے، جس میں اُس نے ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے ساتھ اپنی وابستگی ظاہر کی ہے۔

Italien Mutmaßlicher Berliner Attentäter in Mailand getötet (picture-alliance/dpa/Daniele Bennati/B&V)

اٹلی کی پولیس کے اہلکار اُس جگہ سے شہادتیں جمع کر رہے ہیں، جہاں انیس عامری گولی لگنے سے ہلاک ہو گیا تھا

یہ ویڈیو پیغام شدت پسند تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ سے قریبی وابستگی رکھنے والی نیوز ایجنسی اعماق نے جمعے کے روز جاری کیا ہے۔ اس پیغام میں مبینہ طور پر انیس عامری کو دکھایا گیا ہے، جو مغربی دنیا کے فضائی حملوں میں مرنے والے مسلمانوں کی ہلاکت کا بدلہ لینے کا عزم ظاہر کر رہا ہے۔

پیر اُنیس دسمبر کو ہونے والے حملے میں ایک ٹرک کے ذریعے برلن کی ایک کرسمس مارکیٹ کو روند ڈالا گیا تھا اور اس واقعے میں بارہ افراد ہلاک اور تریپن زخمی ہو گئے تھے۔

جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے کے مطابق اس ویڈیو میں عربی زبان بولنے والا ایک شخص ’اسلامک اسٹیٹ‘ کے قائد ابوبکر البغدادی کے ساتھ اپنی وفاداری کا اعلان کرتا ہے اور یورپ میں بسنے والے مسلمانوں پر زور دیتا ہے کہ وہ حملے کریں:’’صلیبیوں کے نام میرا پیغام ہے: خنزیرو! ہم تمہیں ذبح کرنے کے لیے آئے ہیں۔ خدا کی وحدانیت پر یقین رکھنے والے مسلمانوں کا خون رائیگاں نہیں جائے گا۔‘‘ اعماق نے ویڈیو میں دکھائے گئے شخص کو ابو بارا التونیسیا کا ’جہادی‘ نام دیا ہے یعنی تیونس سے تعلق رکھنے والا ایک شخص، جیسا کہ انیس العامری تھا۔

انیس عامری اس ویڈیو کی ریلیز سے چند ہی گھنٹے پہلے اٹلی کے شہر میلان کے نواح میں پولیس کے ساتھ فائرنگ کے ایک تبادلے میں مارا گیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ پولیس نے اُسے جمعرات اور جمعے کی درمیانی شب رات تین بجے اپنی معمول کی گشت کے دوران روکا تھا۔

Italien verletzter Polizist in Mailand (picture alliance /dpa/Polizia di Stato)

اطالوی پولیس کا سپاہی کرسٹیان موویو، جس کے شناختی کارڈ طلب کر نے پر آگے سے انیس عامری نے پستول نکال کر اُسے زخمی کر دیا تھا

اطالوی وزیر داخلہ مارکو مینیتی نے بتایا کہ جب ایک پولیس افسر نے اُس سے اُس کی شناختی دستاویزات طلب کیں تو جواب میں اُس نے اپنا پستول نکال کر اُس پولیس افسر پر فائرنگ کر دی۔ اسی دوران موقع پر موجود دوسرے پولیس افسر نے گولی چلا دی، جس کی زَد میں آ کر انیس عامری ہلاک ہو گیا۔

اب یہ جانچنے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ آیا انیس عامری نے اٹلی میں وہی پستول استعمال کیا، جس سے اُس نے برلن میں پولینڈ کے ٹرک ڈرائیور کو گولی مار کر ہلاک کیا تھا۔

ڈی پی اے نے ایک سکیورٹی اہلکار کے حوالے سے بتایا ہے کہ مراکش کی حکومت نے اُنیس ستمبر اور پھر گیارہ اکتوبر کو جرمن انٹیلیجنس حکام کو اطلاع دی تھی کہ عامری جرمنی میں کوئی دہشت گردانہ کارروائی کرنا چاہتا ہے۔