1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

برلن:مہاجرين کے اندراج کا عمل درہم برہم، اہم شخصیت مستعفی

جرمن دارالحکومت برلن ميں پناہ گزينوں کے اندراج کے مرکزی دفتر کے سربراہ کو بدنظمی کے سبب اپنے عہدے سے استعفٰی دينے پر مجبور کر ديا گيا ہے۔ ريکارڈ تعداد ميں تارکين وطن کی آمد کے سبب اندراج کا عمل درہم برہم ہو کر رہ گيا ہے۔

لاگيسو نامی اس دفتر کے سربراہ فرانس آلرٹ نے بدھ کی شام اپنے عہدے سے استعفٰی دے ديا۔ اس سے کچھ ہی دير قبل دارالحکومت کے ميئر مشائل ملر نے نشرياتی ادارے RBB پر گفتگو کرتے ہوئے لاگيسو کی ليے نئی قيادت ڈھونڈنے کا ذکر کيا تھا۔ لاگيسو کے نام سے پکارا جانا والا يہ دفتر برلن آمد کے بعد پناہ گزينوں کی پہلی منزل ہوتا ہے، جہاں ان کا اندراج کيا جاتا ہے۔

رواں برس جون سے سينکڑوں عورتيں، بچے اور مرد اسی دفتر کے باغيچے ميں لمبی لمبی قطاريں لگا کر اپنا نمبر پکارے جانے اور پھر انٹرويو کا انتظار کرتے ہيں۔ کئی ایک کو تو ہفتوں تک انتظار کرنا پڑتا ہے۔ سکيورٹی گارڈز عام طور پر پناہ گزينوں کے گروپوں کو قابو ميں رکھتے ہيں تاہم ضرورت پڑنے پر پوليس کی مدد بھی طلب کی جا چکی ہے۔ آس پاس کے علاقے سے درجنوں شہری رضاکارانہ بنيادوں پر وہاں کھڑے پناہ گزينوں کی مدد کرتے رہتے ہيں۔ موسم سرما کی آمد کے ساتھ ہی يہ رضاکار مہاجرين کے ليے پانی کی بوتليں، گرم کپڑے اور کھانے پينے کی اشياء تقسيم کرتے دکھائی ديتے ہيں۔

جرمن دارالحکومت برلن ميں لاگيسو کا دفتر وہی مقام ہے، جہاں سے بوسنيا کا ايک چار سالہ بچہ لاپتہ ہو گيا تھا۔ اسے ہوس کے پجاری ايک شخص نے اغوا کر کے جنسی زيادتی کا نشانہ بنايا اور پھر اسے قتل کر ديا۔ غالباً ملزم نے دفتر کے آس پاس موجود افراتفری کا ہی فائدہ اٹھاتے ہوئے بچے کو اغوا کيا تھا۔

برلن ميں رواں سال جنوری سے اب تک ستر ہزار پناہ گزينوں کا اندراج ہو چکا ہے۔

لاگيسو نامی اس دفتر کے سربراہ فرانس آلرٹ

لاگيسو نامی اس دفتر کے سربراہ فرانس آلرٹ

دريں اثناء جمعرات کی صبح جنوب مغربی جرمن شہر ہرکسہائم ميں قائم پناہ گزينوں کے ايک ہوسٹل میں آگ لگ گئی۔ اسی شہر ميں چھ روز قبل بھی مہاجرين کی ايک عارضی رہائش گاہ کو نذر آتش کر ديا گيا تھا۔ اس واقعے نے اس علاقے کے شہریوں کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔

آگ لگنے کے تازہ واقعے ميں کوئی شخص زخمی نہيں ہوا۔ رضاکاروں اور سياسی پناہ کے متلاشی نو افراد نے آگ لگنے کے فوری بعد عمارت خالی کر دی تھی۔ مقامی پوليس کے مطابق تاحال يہ واضح نہيں ہو سکا ہے کہ آگ کس وجہ سے لگی تاہم اس سلسلے ميں مجرمانہ کارروائی کو خارج از امکان قرار نہيں ديا جا سکتا۔

جرمنی ميں ريکارڈ تعداد ميں مہاجرين کی آمد کے ساتھ ہی يہاں مہاجرين کی رہائش گاہوں پر حملوں اور انہيں نذر آتش کيے جانے کے واقعات ميں اضافہ ريکارڈ کيا گيا ہے۔

ملتے جلتے مندرجات