1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

برطانیہ کے ساتھ تعلقات پر متوازی بات چیت نہیں ہو سکتی، میرکل

جرمن چانسلر میرکل میں نے برطانوی وزیراعظم ٹیریزا مے کے اس مطالبے کو مسترد کر دیا ہے، جس میں کہا گیا تھا کہ وہ بریگزٹ مذاکرات کے ساتھ ساتھ متوازی طور پر یورپی یونین کے ساتھ مستقبل کے تعلقات پر بھی بات چیت چاہتی ہیں۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے کہا ہے کہ بریگزٹ مذاکرات کے ذریعے جب تک برطانیہ یورپی یونین سے مکمل طور پر اخراج کے حوالے سے اپنا راستہ واضح نہیں کرتا، تب تک اس کے ساتھ مستقبل کے تعلقات کے موضوع پر بات چیت نہیں ہو سکتی۔ برلن میں اپنے ایک بیان میں میرکل کا کہنا تھا، ’’مذاکرات کار پہلے واضح کریں کہ کس طرح یورپی یونین اور برطانیہ کے درمیان موجود باہمی ربط ختم ہو گا۔ جب اس سوال کا جواب مل جائے گا، تبھی امید ہے کہ ہم مستقبل کے تعلقات پر بات کر سکیں گے۔‘‘

جرمن چانسلر میرکل نے یہ بھی کہا کہ برطانیہ کے ساتھ بریگزٹ مذاکرات ’شفاف اور تعمیری‘ ہونے چاہیئں۔ ان کا کہنا تھا، ’’ہم، یورپی یونین اس سلسلے میں ہونے والے مذاکرات کو شفاف اور تعمیری انداز سے آگے بڑھائیں گے۔‘‘

Deutschland Bundeskanzlerin Angela Merkel (picture-alliance/dpa/R. Jensen)

میرکل اور مے کے درمیان ٹیلی فون پر بھی بات چیت ہوئی ہے

میرکل نے مزید کہا، ’’ہم امید کرتے ہیں کہ برطانوی حکومت بھی ان مذاکرات میں اسی عزم کے ساتھ آئے گی۔‘‘

میرکل نے بتایا کہ منگل کے روز ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو میں برطانوی وزیراعظم ٹیریزا مے نے انہیں یقین دہانی کرائی تھی کہ یہ مذاکرات تعمیری ہوں گے۔

میرکل کا کہنا تھا کہ ان مذاکرات میں برطانیہ میں مقیم یورپی یونین کی رکن ریاستوں کے شہریوں کا مستقبل زیربحث آئے گا، جسے محفوظ بنانے کی کوشش کی جائے گی: ’’کوشش ہو گی کہ عام افراد کے روزمرہ پر بریگزٹ کے اثر کو تمام ممکنہ حد تک کم کیا جا سکے۔‘‘

میرکل نے اپنے بیان میں اس امید کا بھی اظہار کیا کہ بریگزٹ کے بعد بھی برطانیہ اور یورپی یونین قریبی پارٹنرز رہیں گے۔ میرکل نے کہا۔ ’’یورپی یونین کامیابی کی ایک اچھوتی کہانی ہے اور بریگزٹ کے بعد بھی اسے اسی مرتبے پر رہنا چاہیے۔‘‘