1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

برطانیہ کا ’خطرناک‘ افغان ضلع چھوڑنے کا فیصلہ

برطانوی دَستوں نے آئندہ مہینوں کے دوران جنوبی افغانستان کے خاص طور پر خطرناک ضلع سنگین کا کنٹرول امریکی فوجیوں کے حوالے کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ منشیات کی تجارت کے مرکز سنگین میں بہت سے متحارب قبائل آباد ہیں۔

default

بدھ کو برطانوی وزیر دفاع لیئم فوکس نے لندن میں کہا کہ برطانوی فوجی سنگین چھوڑنے کے بعد اپنی توجہ صوبے ہلمند کے مرکزی علاقے کو طالبان کے قبضے سے آزاد کروانے پر مرکوز کریں گے۔ ایوانِ زیریں میں اپنے خطاب میں فوکس نے کہا کہ ہلمند صوبے کے شمال میں سنگین کے مقام پر تعینات تقریباً ایک ہزار برطانوی فوجی پروگرام کے مطابق اکتوبر میں اِس جگہ کا کنٹرول امریکی فوجیوں کے حوالے کر دیں گے۔

برطانوی کمان میں سرگرمِ عمل فوجیوں میں ڈنمارک اور ایستونیا کے فوجی بھی شامل ہیں اور سنگین سے انخلاء کے بعد یہ تمام فوجی ہلمند کے گنجان آباد مرکزی علاقے میں تعینات کئے جائیں گے۔ فوکس نے کہا کہ یہ پسپائی نہیں بلکہ دستوں کو نئے سرے سے منظم کرنے کا عمل ہے۔ فوکس نے یہ بھی بتایا کہ ہلمند وقت کے ساتھ ساتھ ’ایک محفوظ تر مقام‘ کی حیثیت اختیار کر گیا ہے۔

Großbritannien / Cameron / Wahl

برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون 2015ء تک افغانستان سے مکمل انخلاء چاہتے ہیں

برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون نے ایوانِ زیریں میں اِس بات پر زور دیا کہ وہ آنے والے برسوں میں افغانستان سے برطانوی دَستوں کے انخلاء پر غور کر رہے ہیں:’’کیا اگلے پانچ برسوں میں ہم وہاں جنگ میں کوئی کردار ادا کر رہے ہوں گے یا ہمارے فوجیوں کی ایک بڑی تعداد وہاں موجود ہونی چاہئے؟ میرے خیال میں اِس سوال کا جواب نفی میں ہے۔ ہمارے پاس جو منصوبہ ہے، اُس کا مقصد اِس بات کو یقینی بنانا ہے کہ سن 2015ء میں ہم افغانستان میں نہیں ہوں گے اور اِسی لئے اب وہاں باغیوں پر دباؤ زیادہ سے زیادہ بڑھانے کی ضرورت ہے۔‘‘

سن 2001ء میں افغانستان میں اپنی پیش قدمی کے بعد سے اب تک 312 برطانوی فوجی ہلاک ہو چکے ہیں، جن میں سے 99 فوجی سنگین اور اُس کے نواحی علاقوں میں مارے گئے۔ امریکہ کے بعد برطانیہ افغانستان کے لئے اپنے فوجی روانہ کرنے والا دوسرا بڑا ملک ہے اور برطانوی عوام میں یہ فوجی مشن خاصا متنازعہ ہے۔ افغانستان میں برطانیہ کے فوجیوں کی مجموعی تعداد ساڑھے نو ہزار ہے، جن میں سے اکٹھے آٹھ ہزار ہلمند صوبے میں تعینات ہیں۔

Flash-Galerie US Militär Afghanistan

افغان اور آئی سیف کے فوجی دستوں نے رواں سال ہی ہلمند میں بڑے پیمانے پر آپریشن کرکے کنٹرول سنبھالا ہے

طالبان نے سنگین سے دستے ہٹانے کے برطانوی اعلان کو اپنی ایک بڑی جزوی فتح قرار دیا ہے۔ طالبان کے ترجمان یوسف احمدی کے مطابق طالبان کے سربراہ ملا محمد عمر نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’یہ اعلان افغانستان میں برطانوی دستوں کی شکست کا نقطہء آغاز ہے‘۔ ترجمان نے مزید بتایا کہ سنگین میں امریکی فوج کا بھی وہی حال ہو گا، جو برطانوی فوج کا ہوا ہے۔

ایک سرکردہ برطانوی فوجی افسر نے، جس کا نام ظاہر نہیں کیا گیا، برطانوی اخبار ’دی گارڈین‘ کو بتایا ہے کہ سنگین سے انخلاء ’دفاعی حکمتِ عملی کے اعتبار سے ایک شکست‘ ہے۔ جنگ مخالف تنظیم ’سٹاپ دی وار‘ نے اِس اعلان کو ’شکست کا خاموش اعتراف‘ قرار دیا ہے۔

رپورٹ : امجد علی

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM