1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

برطانيہ اور يورو زون کے اختلافات

يورو زون سے عليحدہ ملک برطانيہ ميں يورو زون کے ممالک کے قرضوں کے بحران سے يورو کرنسی سے اور زيادہ دوری پيدا ہوئی ہے۔ برطانوی وزير اعظم کا آج کا جرمنی کا دورہ برطانيہ اور بحران زدہ يورو زون کے روابط کو شايد بہتر بنا سکے۔

ڈيوڈ کيمرون

ڈيوڈ کيمرون

يورپی يونين کی پچھلی سربراہی کانفرنس ميں برطانوی وزير اعظم ڈيوڈ کيمرون نے يورو زون کی حکومتوں پرسخت تنقيد کی تھی کہ وہ بحران کو حل کرنے کے ليے صرف نيم دلی سے کوشش کر رہی ہيں۔ يہ تنقيد اتنی شديد تھی کہ فرانسيسی صدر نکولا سارکوزی نے طيش ميں آ کر کہا تھا: مسٹر کيمرون، آپ نے چپ رہنے کا ايک اچھا موقع گنوا ديا۔ يہ برسلز ميں بند دروازوں کے اندر کی بات تھی۔ بعد ميں کيمرون نے کيمروں کے سامنے اجتماعی ذمہ داری اور يکجہتی کی باتيں کی تھيں۔ ليکن انہوں نے يہ بھی کہا کہ وہ اس پر دلبرداشتہ نہيں کہ برطانيہ يورو زون کا بحران حل کرنے کی کوششوں ميں شريک نہيں ہے: ’’نہيں، ميں اس پر محرومی کا شکار نہيں ہوں کيونکہ ميں يورو زون ميں شامل ہی نہيں ہوں۔ ميں يہ چاہتا بھی نہيں ہوں کہ برطانيہ يورو زون ميں شامل ہو اور ميں اسے برطانوی معيشت کے ليے بہت اچھا سمجھتا ہوں۔‘‘

برطانيہ يورو زون کے ممالک پر زور دے رہا ہے کہ وہ اپنے قرضوں کے بحران کو حل کرنے کے ليے جامع اقدامات کريں۔ برطانيہ اپنے مزيد قومی اختيارات کو يورپی يونين کے حوالے کرنے پر تيار نہيں ہے، بلکہ ڈیوڈ کيمرون نے اسی ہفتے يہ کہا ہے کہ وہ بعض قومی اختيارات يورپی يونين سے واپس لينا چاہتے ہيں۔

دائيں سے، ڈيوڈ کيمرون، بارک اوباما، انگيلا ميرکل، نکولا سارکوزی

دائيں سے، ڈيوڈ کيمرون، بارک اوباما، انگيلا ميرکل، نکولا سارکوزی

لندن کو يہ انديشہ ہے کہ يورو زون کے قرضوں کے بحران کے اثرات برطانوی معيشت پر بھی پڑ سکتے ہيں۔ لندن مالياتی منڈيوں کے کاروبار پر ٹيکس لگانے کی جرمن تجويز کو برطانوی معيشت کے قلب، يعنی لندن کے طاقتور مالی مرکز پر حملہ سمجھتا ہے۔

يورپی پارليمنٹ ميں يورو کے برطانوی مخالفين کے ليڈر نائيجل فراگ موجودہ بحران ميں جرمن حکومت کے بہت آگے آگے رہنے کو اچھا نہيں سمجھتے: ’’ہم اب ايک ايسے يورپ ميں رہ رہے ہيں،جس پر جرمنی کا غلبہ ہے، حالانکہ يورپی اتحاد کے منصوبے کا مقصد اسی کو روکنا قرار ديا گيا تھا۔‘‘

اس طرح کے بيانات سے يہ ظاہر ہوتا ہے کہ بحران کے زمانے ميں يورپ کے مستقبل کے حوالے سے جرمنی اور برطانيہ کے نظريات ايک دوسرے سے کس قدر مختلف ہيں۔

رپورٹ: ليون اشٹيبے، برسلز / شہاب احمد صديقی

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM