1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

برطانوی وزیرِ خارجہ کا غیر متوقع دورہ افغانستان

ایک طرف امریکہ افغانستان میں بیس ہزار سے زائد افواج روانہ کرنے کا ارادہ کر رہا ہے تو دوسری جانب افغان صدر حامد کرزئی نے کہا ہے کہ مغربی ممالک افغانستان میں جنگ بندی کے لیے ایک میعاد طے کرلیں۔

default

برطانوی وزیرِ خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ

Barack Obama in Afganistan

نو منتخب امریکی صدر باراک اوباما افغانستان میں افواج میں اضافہ چاہتے ہیں


نو منتخب امریکی صدر باراک اوباما دہشت گردی کے خلاف جنگ کا محور افغانستان کو سمجھتے ہیں اور بیس جنوری دو ہزار نو کو حلف اٹھانے کے بعد وہ اس جانب توجّہ مرکوز کریں گے۔ وہ افغانستان میں مزید افواج روانہ کرنے کی بات بارہا کرچکے ہیں اور امکاناً اقتدار سنبھالنے کے بعد افغانستان میں مزید بیس ہزار امریکی افواج روانہ کی جاسکتی ہیں۔ دوسری جانب عراق سے امریکی افواج کے مرحلہ وار انخلاء کا فیصلہ تقریباً ہو چکا ہے مگر اس میں مزید ڈیڑھ یا دو برس لگ سکتے ہیں۔

Afghanistan Präsident Hamid Karzai während einer Pressekonferenz im Präsidentenpalast in Kabul

افغان صدر حامد کرزئی نے کہا ہے کہ مغربی ممالک افغانستان میں جنگ بندی کے لیے ایک میعاد طے کریں


افغانستان دہشت گردی کے خلاف جنگ کا محور بننے جا رہا ہے اور غالباً اسی واسطے افغان صدر حامد کرزئی نے منگل کے روز بین الاقوامی برادری کو ایک مرتبہ پر دھمکی دی ہے کہ وہ افغانستان میں جنگ ختم کرنے سے متعلق ایک وقت طے کرلیں ورنہ ان کی حکومت طالبان سے سیاسی زریعے سے نمٹنے کی کوشش کرے گی۔ اس سے قبل وہ طالبان رہنما ملا عمر کو مکمل تحفظ فراہم کرنے کی بات کرچکے ہیں جس کو طالبان نے یہ کہہ کر رد کردیا تھا کہ کرزئی اس پوزیشن میں نہیں ہیں کہ کوئی فیصلہ کرسکیں۔

Afghanistan ISAF Soldat Deutschland und afghanische Polizisten

افغانستان میں تعینات جرمنی فوجی عسکریت پسندوں کے تازہ حملوں کا نشانہ ہیں


اسی دوران برطانیہ کے وزیرِ خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ افغانستان کے ایک غیر اعلانیہ دورے پر پہنچ گئے ہیں جہاں وہ افغان صدر سے ملاقات کر رہے ہیں۔اس کے بعد وہ مستقبل میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے ایک اور محور پاکستان بھی جائیں گے۔ ابھی پیر کے روز ہی ایک برطانوی فوجی جنوبی افغانستان کے صوبے ہلمند میں بم دھماکے کے نتیجے میں ہلاک ہوگیا تھا۔ دوسری جانب نیٹو افواج میں شامل جرمن سپاہی بھی حالیہ عرصے میں متعدد بار بم دھماکوں کی زد میں آچکے ہیں اور ان میں اکثر شدید زخمی بھی ہوئے ہیں۔

Pakistanischer Armeechef Ashfaq Kayani

بعض مبصرین کے مطابق پاکستانی سولین اور فوجی اسٹیبلشمنٹ چاہتی ہے کہ پاکستان کے زریعے طالبان سے بات چیت کی جائے

تو کیا مزید مغربی افواج کی افغانستان میں تعیناتی سے وہاں جاری عسکریت پسندی کا خاتمہ ہوسکے گا؟ پاکستانی فوجی اسٹیبلشمنٹ اور سولین حکومت اکثر یہ کہتی دکھائی دیتی ہے کہ فوجی طاقت کے زریعے طالبان کو کنٹرول کرنا منفی ثابت ہوگا اور اس سے دہشت گردی میں صرف اضافہ ہوگا۔ بعض مبصرین کے مطابق اس سے مراد پاکستانی سولین اور فوجی اسٹیبلشمنٹ کی یہ ہوتی ہے کہ پاکستان کے زریعے طالبان سے بات چیت کی جائے کیوں کہ پاکستان ہی طالبان کو قابو میں رکھ سکتا ہے۔ اسی واسطے پاکستانی اسٹیبلشمنٹ امریکی جاسوس طیّاروں کی پاکستان سرحد کے اندر عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں پر مبینہ بمباری کے خلاف ہے۔

مگر جہاں باراک اوباما کی انتظامیہ افواج میں اضافے کا ارادہ کر رہی ہے وہاں غالباً پاکستان کو نظر انداز کرکے سعودی عرب کے زریعے طالبان سے مذاکرات کا آغاز ہو بھی چکا ہے۔ بعض مبصرین کے مطابق یہ بات پاکستان کے لیے تکلیف کا باعث ہے۔