1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

برازیل پہلی بار فٹ بال کا اولمپک چیمپئن بن گیا

کئی بار فٹ بال کا عالمی چیمپئن بننے والے برازیل نے پہلی بار اولمپکس میں بھی فٹ بال کے مقابلوں میں گولڈ میڈل جیت لیا ہے۔ ریو ڈی جنیرو میں جاری گرمائی اولمپکس میں مردوں کے فٹ بال کے فائنل میں برازیل نے جرمنی کو ہرا دیا۔

Olympia Rio 16 20 08 Fußball Deutschland Brasilien Finale Jubel

برازیل: 64 برس تک انتظار کے بعد فٹ بال میں پہلا اولمپک گولڈ میڈل

ریو ڈی جنیرو کے ماراکانا اسٹیڈیم میں ہفتہ بیس اگست کی رات امسالہ اولمپکس کے میزبان ملک برازیل کی ٹیم کا فائنل میں مقابلہ جرمنی سے تھا، جس دوران مقررہ وقت تک دونوں ٹیموں نے ایک ایک گول کیا تھا اور میچ برابر تھا۔

اس میچ کا فیصلہ پنلٹی شُوٹ آؤٹ کی بنیاد پر ہوا، جس میں برازیل نے موجودہ عالمی چیمپئن جرمنی کو چار کے مقابلے میں پانچ گول سے ہرا دیا۔ پنلٹی شُوٹ آؤٹ میں میچ کا فیصلہ کن گول برازیلین ٹیم کے کپتان اور اسٹار کھلاڑی نیمار نے کیا اور یوں اولمپکس کی تاریخ میں پہلی بار اپنے ملک کے لیے گولڈ میڈل کو یقینی بنا لیا۔

قبل ازیں اس میچ میں پہلا گول بھی برازیل کی طرف سے نیمار ہی نے اس وقت کیا تھا، جب انہوں نے 26 ویں منٹ میں اپنی ٹیم کو ورلڈ چیمپئن جرمنی پر ایک گول کی سبقت دلوا دی تھی۔ پہلے ہاف کے اختتام تک جرمنی کی زیادہ تر نوجوان کھلاڑیوں پر مشتمل لیکن بہت اچھے کھیل کا مظاہرہ کرنے والی ٹیم یہ سبقت ختم نہ کر سکی تھی۔

مقررہ وقت کے دوران میچ کے دوسرے نصف حصے میں جرمن کھلاڑی ماکس مائر نے جب اپنی ٹیم کی طرف سے پہلا گول کیا تو میچ پھر برابر ہو گیا تھا، جو آخر تک فیصلہ کن نہ ہو سکا اور نتیجہ پنلٹی شُوٹ آؤٹ کی بنیاد پر سامنے آیا۔

Olympia Rio 16 20 08 Fußball Deutschland Brasilien Finale

برازیلین کپتان اور ’ہیرو ڈی جنیرو‘ نائمار پنلٹی شُوٹ آؤٹ کے دوران فیصلہ کن کک لگاتے ہوئے

ریو ڈی جنیرو سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق برازیل نے اولمپکس میں فٹ بال کے مقابلوں میں پہلی بار شرکت 1952ء میں کی تھی اور اس کھیل میں دنیا کی مضبوط ترین ٹیموں میں شمار ہونے والے برازیل کو اپنا پہلا اولمپک فٹ بال گولڈ میڈل جیتنے کے لیے قریب 64 برس انتظار کرنا پڑا۔

جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے نے لکھا ہے کہ کل رات کھیلے گئے فائنل میں جرمنی کو ہرا کر برازیل کی ٹیم نے اپنی اس شرمناک شکست کا بدلہ بھی لے لیا ہے، جو اسے 2014ء کے فٹ بال کے ورلڈ کپ مقابلوں کے ایک سیمی فائنل میں جرمن ٹیم ہی کے ہاتھوں ایک کے مقابلے میں سات گول کے فرق سے برداشت کرنا پڑی تھی۔

برازیل کو ہفتے کے روز کا فائنل جتوانے میں اس کی ٹیم کے کپتان نیمار کا کردار فیصلہ کن تھا، جنہیں برازیلین میڈیا نے فوراﹰ ہی ریو ڈی جنیرو میں ہونے والے اس میچ کی مناسبت سے اور ملکی ٹیم کی تاریخی کامیابی کے باعث ’ہیرو ڈی جنیرو‘ کا خطاب بھی دے ڈالا۔

ہسپانوی کلب بارسلونا کے لیے کھیلنے والے 24 سالہ اسٹار فارورڈ کھلاڑی نیمار نے اس میچ کے بعد اعلان کیا کہ وہ اپنے ملک کی ٹیم کی کپتانی سے دستبردار ہو رہے ہیں۔

Olympia Rio 16 20 08 Fußball Deutschland Brasilien Finale Timo Horn

جرمن ٹیم کے گول کیپر ٹیمو ہورن فائنل ہارنے کے بعد

نیمار نے اس میچ کے بعد برازیلین نشریاتی ادارے سپورٹ ٹی وی کو بتایا، ’’آج ہم نے گولڈ میڈل کو یقینی بنانے والا جو میچ جیتا ہے، وہ میرا برازیل کے لیے بطور کپتان آخری میچ تھا۔ برازیلین ٹیم کی کپتانی میرے لیے بڑے فخر کی بات تھی۔ میں آئندہ بھی اپنے ملک کے لیے قومی سطح پر کھیلوں گا لیکن اب میں کپتانی نہیں کروں گا۔‘‘

مردوں کے فٹ بال کے اولمپک فائنل میں برازیل سے ہار جانے والے عالمی چیمپئن جرمنی کے لیے کسی حد تک تسلی کی بات یہ ہے کہ جرمنی ہی کی خواتین کی قومی فٹ بال ٹیم نے جمعہ انیس اگست کی رات ریو میں ہونے والے فائنل میچ میں سویڈن کو ہرا کر پہلی بار گولڈ میڈل جیت لیا تھا۔

DW.COM