1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

بحیرہ ایجیئن میں مہاجرین کی کشتی الٹ گئی، سات افراد ہلاک

ترک سرکاری نیوز ایجنسی انادولو کے مطابق بحئیرہ ایجیئن کے پانیوں میں مہاجرین کی ایک کشتی ڈوبنے کے نتيجے  ميں سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ دو افراد تاحال لاپتہ ہیں۔

جمعرات کے روز ترکی کے تفریحی شہر سیسم کے قریب کشتی الٹنے کے اس حادثے میں ہلاک ہونے والوں میں پانچ بچے اور دو خواتین شامل ہیں۔ انادولو نیوز ایجنسی کے مطابق نو تارکین وطن کو ڈوبنے سے بچا لیا گیا ہے اور اُن کا ايک مقامی ہسپتال میں علاج جاری ہے۔ ہلاک ہونے والے سات افراد کی قومیتوں کی شناخت ابھی تک نہیں ہو سکی ہے۔

بچائے جانے والے تارکین وطن کا تعلق عراق، شام اور صومالیہ سے ہے۔ ترک حکام ایک لاپتہ تارک وطن اور کشتی پر سوار انسانی اسمگلرکو تلاش کر رہے ہیں۔ تارکین وطن کو یونانی جزائر اسمگل کرنے والا یہ شخص ترک باشندہ ہے۔

گزشتہ برس مارچ میں یورپی یونین اور ترکی کے مابین مہاجرین کے حوالے سے طے پانے والے ایک معاہدے کے مطابق ترک ساحلوں سے غیر قانونی طور پر یونانی جزائر کا رخ کرنے والے تمام مہاجرین کو واپس ترکی بھیجا جانا ہے۔ ان غیر قانونی مہاجرین میں زیادہ تعداد شامی مہاجرین کی رہی ہے۔

DW.COM