1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

بحيرہ روم ميں ایک ڈرامائی دن، دو ہزار جانيں بچا لی گئيں

بحيرہ روم ميں پچھلے چوبيس گھنٹوں کے دوران کی گئی مختلف ريسکيو کارروائيوں کے دوران دو ہزار سے زائد مہاجرين کی جانيں بچا لی گئيں۔ يہ تارکين وطن بہتر زندگی کی خواہش لیے افريقی بر اعظم سے يورپ کی طرف سفر میں تھے۔

ايک اطالوی کوسٹ گارڈ نے بتايا کہ غير سرکاری تنظيموں اور کوسٹ گارڈز کے انيس مختلف آپريشنز ميں جمعہ چودہ اپريل کے روز مجموعی طور پر 2,074 مہاجرين کو بحيرہ روم ميں ڈوبنے سے بچا ليا گيا۔ ريسکيو کارروائيوں کے دوران سمندر کی طاقتور لہروں کے سبب مشکلات کی شکار ربڑ کی سولہ اور لکڑی کی تين مقابلتاً بڑی کشتيوں سے ان مہاجرين کو بچا کر محفوظ مقامات پر پہنچا ديا گيا۔ اس دوران ايک کشتی ایک شخص کی لاش بھی برآمد ہوئی۔

بین الاقوامی امدادی تنظيم ’ڈاکٹرز ودآؤٹ بارڈرز‘ (MSF) نے ٹوئٹر پر اپنے ايک پيغام ميں لکھا ہے کہ ايک کشتی سے ايک نوجوان لڑکے کی لاش ملی۔ متعلقہ کشتی سے ديگر تارکين وطن کو بچانے کا کام اسی ادارے کی ایک کشتی ’ایکواريئس‘ کے عملے نے کيا۔ MSF نے اپنی ايک اور ٹويٹ ميں لکھا ہے، ’’سمندر مسلسل قبرستان بنا ہوا ہے۔‘‘ اس تنظیم کے مطابق ان تازہ ريسکيو کارروائیوں ميں اس ادارے کی دو کشتيوں ’ایکواريئس‘ اور ’پرُوڈَينس‘ نے حصہ ليا اور لگ بھگ ايک ہزار مہاجرين کی جانيں بچائيں۔

’مائیگرنٹ آف شور ايڈ اسٹيشن‘ (MOAS) نامی ايک امدادی تنظيم کے مطابق اس کی کشتی ’فِينِکس‘ جب سمندر ميں مشکلات کی شکار ايک ربڑ کی کشتی تک پہنچی تو اس پر سوار مہاجرين اپنا توازن کھونے کے بعد پانی ميں گر چکے تھے۔ انہيں بچانے کے ليے ريسکيو عملے کے کئی ارکان نے سمندر ميں چھلانگيں لگا ديں۔ خبر رساں ادارے روئٹرز کے فوٹو جرنلسٹ ڈيرن زيمٹ لوپی بھی ’فِينِکس‘ پر سوار تھے۔ انہوں نے ريسکيو کی اس کارروائی کو ديکھنے کے بعد بتایا، ’’ميں پچھلے انيس سالوں سے مہاجرت اور ترک وطن سے متعلق کہانياں دنيا تک پہنچا رہا ہوں، ميں نے اس سے قبل کبھی ايسے مناظر نہيں ديکھے، جو ميں نے آج ديکھے ہيں۔‘‘

بين الاقوامی ادارہ برائے مہاجرت کے مطابق سال رواں کے دوران اب تک لگ بھگ بتيس ہزار مہاجرين سمندری راستوں سے يورپ پہنچ چکے ہيں جبکہ ايسی کوششوں کے دورن کم از کم ساڑھے چھ سو اپنی جانيں کھو چکے ہيں۔