1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

’بالی وُڈ فلم لشکر طیبہ کی مخالفت کی وجہ سے نہ بنائی‘

ممبئی دہشت گردی کے ملزم ڈیوڈ ہیڈلی اور اُس کے ایک ساتھی تہور رانا نے امریکی شہر شکاگو کی ایک عدالت کو بتایا ہے کہ وہ بالی وُڈ میں ایک فلم بھی بنانا چاہتے تھے لیکن پھر لشکر طیبہ کی مخالفت کی وجہ سے یہ ارادہ ترک کر دیا۔

default

بھارتی خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا (PTI) نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ ہیڈلی اور رانا نے اپنے مقدمے کی سماعت کے چوتھے روز عدالت کو بتایا کہ اس فلم کا مقصد بھارت کے معروف فلمساز اور ہدایتکار مہیش بھٹ کے اداکاری کے شوقین بیٹے راہول بھٹ کو متعارف کروانا تھا۔

ہیڈلی نے عدالت کو بتایا کہ راہول فلموں میں آنا چاہتا تھا لیکن اُس کا والد اُس کی مدد نہیں کر رہا تھا:’’تب مَیں نے اُس سے دوستی کر لی تاکہ اُسے کسی بڑی فلم میں موقع دلواؤں۔‘‘ ہیڈلی کے مطابق اُس نے راہول کو یہ بتایا تھا کہ وہ ایک آرمی رینجر ہے اور یہ کہ تب سے راہول اُسے پسند کرنے لگا تھا۔

Zeichnung Gericht David Coleman Headley vor Richter Harry Leineweber

ڈیوڈ ہیڈلی کا اجمالی خاکہ

پاکستانی نژاد کینیڈین شہری رانا کے یہ بالی وُڈ فلم بنانے کے منصوبے پروان نہ چڑھ سکے کیونکہ ایسا کوئی بھی اقدام لشکر طیبہ کے نظریات کے خلاف تھا۔

اس سے پہلے ہیڈلی نے بتایا تھا کہ ایک بار راہول کو ’سیرو سیاحت‘ کے لیے پاکستان کے قبائلی علاقوں میں لے جانے کی بھی بات ہوئی تھی۔ تاہم PTI کے مطابق ہیڈلی نے اعتراف کیا کہ راہول سے دوستی کرنا نگرانی اور جاسوسی کی اُس بنیادی تربیت کے خلاف تھا، جو اُس نے لشکر طیبہ اور آئی ایس آئی سے حاصل کی تھی۔

ہیڈلی کے مطابق اُس نے راہول کو 26 نومبر کو جنوبی ممُبئی میں جانے سے منع کیا تھا۔ یہ وہی دن تھا، جب دَس دہشت گردوں نے اس بھارتی شہر میں اُس ہولناک کارروائی کا آغاز کیا تھا، جس میں اگلے تین روز کے اندر اندر 160 سے زیادہ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

رپورٹ: پی ٹی آئی / امجد علی

ادارت: عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس