1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

بارسلونا میں وین کے ذریعے دہشت گردانہ حملہ، 13 افراد ہلاک

ہسپانوی میڈیا کے مطابق بارسلونا کے مرکز میں ایک وین کو وہاں موجود لوگوں پر چڑھا دیا گیا ہے، جس کے نتیجے میں کم از کم تیرہ افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔ علاقائی پولیس نے اسے دہشت گردانہ کارروائی قرار دیا ہے۔

بارسلونا میں پولیس کا کہنا ہے کہ آج بروز جمعرات شہر کی مشہور لاس رمبلاس شاہراہ پر پیدل چلنے والوں پر ایک وین کے  ذریعے دہشت گردانہ حملہ کیا گیا ہے۔ اسپین کے ایک مقامی ریڈیو نے پولیس ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ حملے میں تیرہ افراد کی ہلاکتیں ہوئی ہیں۔ مبینہ ’دہشت گردانہ‘ حملے میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

 دوسری جانب اسپین کے وزیر اعظم ماریانو راخوئے نے کہا ہے کہ  وہ سٹی سینٹر میں ایک وین کے درجنوں افراد کو کچلنے کے واقعے کے بعد سے متعلقہ حکام سے مسلسل رابطے میں ہیں۔

Barcelona Las Ramblas (Reuters/A. Gea)

بارسلونا کے جس علاقے میں یہ حملہ کیا گیا ہے، وہ سیاحوں کا مرکز قرار دیا جاتا ہے

اسپین کی ایک مقامی ویب سائٹ نے کے مطابق بارسلونا کے مرکز میں ہی واقع ایک شراب خانے میں چھپے دو مشتبہ حملہ آوروں کو گھیر لیا گیا ہے۔ اس ویب سائٹ کے مطابق دونوں مشتبہ حملہ آور مسلح ہیں اور علاقے میں دو طرفہ فائرنگ کی آوازیں سنی گئی ہیں۔ بارسلونا کے جس علاقے میں یہ حملہ کیا گیا ہے، وہ سیاحوں کا مرکز قرار دیا جاتا ہے۔

ایسی بھی اطلاعات ہیں کہ حملہ آوروں نے شراب خانے میں متعدد افراد کو یرغمال بنا لیا ہے۔

جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے سے گفتگو کرتے ہوئے مقامی پولیس کی ایک اہلکار نے کہا ہے کہ حملے کی وجوہات ابھی تک نامعلوم ہیں لیکن دہشت گردی کے حوالے سے تحقیقات کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے۔ پولیس کے مطابق حملہ آوروں کی شناخت اور ان کے مقاصد کے بارے میں فی الحال کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ اس حوالے سے تحقیقات مکمل ہونے کے بعد ہی معلومات سامنے آئیں گی۔

ایک عینی شاہد کا مقامی ٹیلی وژن سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا، ’’سب کچھ اچانک ہوا، لوگ چیخیں مارتے ہوئے بھاگنا شروع ہو گئے تھے۔‘‘ اس عینی شاہد کا کہنا تھا کہ پناہ لینے کے لیے وہ اور کئی دوسرے لوگ بھاگ کر چرچ میں داخل ہو گئے تھے۔