1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایک بڑا جرمن وفد ایران کے دورے پر، اربوں کے معاہدے متوقع

جرمن وزیر اقتصادیات زیگمار گابریئل کی قیادت میں ایک بڑا وفد ایران کا دورہ کر رہا ہے، جہاں اربوں یورو کے معاہدے متوقع ہیں۔ اس دورے میں جرمنی کے ممتاز صنعتی اور کاروباری اداروں سے وابستہ شخصیات بھی شامل ہیں۔

Iran Sigmar Gabriel trifft Bidschan Namdar Sanganeh (picture-alliance/AP Photo/E. Noroozi)

ایران کے ساتھ ایٹمی ڈیل کے بعد زیگمار گابریئل کا پہلا دورہٴ تہران، بیس جولائی 2015ء کو وزیر تیل بیژن نامدار زنگنه کے ساتھ

یہ وفد اتوار کو روانہ ہو رہا ہے اور اس کا دورہ منگل تک جاری رہے گا۔ نیوز ایجنسی روئٹرز کے مطابق اس دورے سے جرمنی اور ایران کے مابین تجارتی تعلقات کو پھر سے مستحکم کرنے کی امید کی جا رہی ہے تاہم ساتھ ہی یہ خدشہ بھی موجود ہے کہ کچھ باقی ماندہ امریکی اقتصادی پابندیوں اور سیاسی خدشات کے باعث ان تعلقات کے راستے میں کئی رکاوٹیں بھی آ سکتی ہیں۔

پندرہ سال کے وقفے کے بعد پہلی مرتبہ ایک ایرانی جرمن تجارتی کمیشن کا اجلاس ہو گا اور اس میں ٹھوس کاروباری معاہدوں کا بھی اعلان کیا جائے گا تاہم جرمن وزیر اقتصادیات نے جمعے کے روز ایران کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اُسے اسرائیل کی بقا کے حق کو تسلیم کرنا ہو گا اور شام کی جنگ میں اپنے ’فیصلہ کن کردار‘ کو بھی ختم کرنا ہو گا۔

اُدھر تہران حکومت کا موقف یہ ہے کہ ایران اور جرمنی کے تعلقات پر کسی قسم کی پیشگی شرائط کے بغیر بات ہونی چاہیے اور یہ کہ ایران اپنے داخلی معاملات میں کسی تیسرے فریق کی مداخلت کو رَد کر کرتا ہے۔

ایران کے ایٹمی پروگرام کے حوالے سے ایران اور عالمی طاقتوں کے مابین ڈیل پر اتفاقِ رائے گزشتہ سال جولائی میں ہوا تھا، جس کے بعد سے گابریئل کا یہ دوسرا دورہٴ ایران ہے۔ اس ڈیل کے تحت ایران نے اپنی جوہری سرگرمیاں محدود کرنے پر رضامندی ظاہر کی تھی اور اس کے بدلے میں اُس کے خلاف عائد پابندیاں ختم کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔

Iran Besuch Steinmeier Hassan Rohani (Iranian Presidency Office via AP)

دَس اکتوبر 2015ء: جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شائن مائر اور ایرانی صدر حسن روحانی کی تہران میں ملاقات

ان پابندیوں کے خاتمے کے بعد جرمن کاروباری اداروں کے لیے جو بے پناہ مواقع دستیاب ہوں گے، اُن سے مستفید ہونےوالے اولین بڑے صنعتی جرمن اداروں میں سیمینز اور موٹر گاڑیاں بنانے والا ادارہ ڈائملر شامل ہیں۔

ہیمبرگ میں قائم جرمن ایرانی چیمبر آف کامرس کے سربراہ مشائیل ٹوکُس کے مطابق اس سال کی پہلی ششماہی میں ایران کو جانے والی جرمن برآمدات پندرہ فیصد کے اضافے کے ساتھ 1.13 ارب یورو تک پہنچ گئیں جبکہ اس پورے سال میں یہ حجم چار ارب یورو تک پہنچ سکتا ہے۔

گابریئل کی طرح سوشل ڈیموکریٹک پارٹی سے تعلق رکھنے والے جرمن وزیر خارجہ فرانک والٹر شٹائن مائر نے اس سال فروری میں ایرانی صدر حسن روحانی کو جرمنی کے دورے کی دعوت دی تھی تاہم مخلوط حکومت میں چانسلر انگیلا میرکل کی جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین کے ارکان ایک ہی وقت میں دو علاقائی حریفوں ایران اور سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کو متوازن رکھنے کے حوالے سے فکر مند ہیں اور موجودہ حالات میں روحانی کے دورے کی مخالفت کر رہے ہیں۔