1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ایمن الظواہری کی باراک اوباما پر تنقید

ویب سائٹ پر جاری کیے گئے ایک صوتی پیغام کے مطابق القاعدہ کے رہنما ایمن الظواہری نے نو منتخب امریکی صدر باراک اوباما کے خلاف شدید نسل پرستانہ کلمات استعمال کیے ہیں۔

default

اسامہ بن لادن اورایمن الظواہری

القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کے نائب اور القاعدہ کے نظریاتی رہنما ایمان الظواہری نے نو منتخب امریکی صدر باراک اوباما کو ’ہاؤس نیگرو‘ قرار دیا ہے جو ان سیاہ فام افراد کو کہا جاتا ہے جو سفید فام افراد کے گھروں میں ملازمت کرتے تھے۔ الظواہری نے نو منتخب امریکی صدر کو دھمکی دی ہے کہ ان کا افغانستان میں مزید امریکی افواج بھیجنے کا فیصلہ ناکامی سے دوچار ہوگا۔ باراک اوباما یا ان کی ٹیم میں سے کسی نے القاعدہ کے رہنما کے اس بیان پر تبصرہ کرنے سے گریز کیا ہے۔

Barack Obama in traditioneller Tracht

الظواہری کے مطابق اوباما اسلام کے دشمنوں کےساتنھ کھڑے ہیں


مزکورہ صوتی پیغام میں القاعدہ کے رہنما نے باراک اوباما کو ایک ایسے مسلمان باپ کا بیٹا قرار دیا جو اسلام کے خلاف اسلام دشمنوں کی صف میں کھڑا ہے۔ الظواہری نے مشہور سیاہ فام امریکی رہنما میلکم ایکس کا زکر کرتے ہوئے کہا کہ اوباما میلکم ایکس کے مقابلے میں سفید فام افراد کی غلامی کو ترجیح دیتے ہیں۔ القاعدہ کے رہنما نے امریکہ کے خلاف ’جد و جہد‘ جاری رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

واشنگٹن میں ہمارے نمائندے انور اقبال کا کہنا ہے کہ القاعدہ کی جانب سے یہ پیغام القاعدہ کی اس پریشانی کی جانب اشارہ کرتا ہے جو اس کو باراک اوباما سے لاحق ہے۔ انور اقبال کے مطابق القاعدہ کو اوباما کی مسلمانوں میں زبردست مقبولیت سے خطرہ ہے۔ انور اقبال کہتے ہیں کہ امریکہ میں جس طرح پاکستانیوں، عراقیوں اور حتیٰ کہ افغانیوں نے باراک اوباما کو ووٹ ڈالے اور جس طرح پوری دنیا کے مسلمان ان کو پسند کرتے ہیں، القاعدہ ایک مخمصے کا شکار دکھائی دیتی ہے۔

US-Wahlen 2008 Barack und seine Familie auf der Wahlparty in Chicago

اوباما نے افغانستان میں مزید افواج تعینات کرنے کا اعلان کیا ہے


انور اقبال نے یہ بھی کہا کہ القاعدہ کے لیے امریکی صدر جارج ڈبلیو یش جیسا صدر اس لیے موزوں ہے کہ بش جیسے افراد پتھر کا جواب اینٹ سے دیتے ہیں، اور اس طرح کا اندازِ سیاست القاعدہ جیسی عسکری تنظیموں کے لیے فائدہ مند ہے۔ دوسری جانب باراک اوباما ایک لبرل زہنیت کے حامل ہیں اور وہ مسلمانوں کے ساتھ مکالمت پر یقین رکھتے ہیں۔ انور اقبال کے مطابق اس طرح کے پیغامات امریکہ اور مغربی دنیا میں مسلمانوں کے لیے ہزیمت کا باعث بن رہے ہیں۔

واضح رہے کہ امریکی صدر منتخب ہونے کے بعد باراک اوباما نے ایک بار یہ کہا ہے کہ القاعدہ امریکہ کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے اور وہ اس کا مکمل خاتمہ کرنا اولین ترجیح سمجھتے ہیں۔

Audios and videos on the topic